’بہتر یادداشت‘: ورزش دماغ کو سکڑنے سے کیسے روکتی ہے؟

اگر اعضا کی صلاحیت میں کمی کا مطلب دماغ کے حجم میں کمی واقع ہونا ہے تو کیا ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ جسمانی توانائی کا ورزش کے ذریعے بہتر استعمال ہمارے دماغ میں ٹشوز کے نقصان کی رفتار کو کم کر سکتا ہے۔
ورزش
Getty Images
.

’صحت مند جسم میں صحت مند روح۔‘ ہم اکثر اس قول کا استعمال کرتے ہوئے یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ جسمانی ورزش کے باعث انسان کی ذہنی صلاحیتوں پر کیا مثبت اثرات مرتب ہو سکتے ہیں۔

یہ قول دراصل ایک رومن مزاح نگار جووینال نے دوسری صدی عیسوی میں کہا تھا کہ یہی دعا کرنی چاہیے کہ صحت مند جسم میں ایک صحت مند روح بھی ہو۔

تاہم کیا یہ درست ہے کہ جسم کو صحت مند، متوازن رکھنے اور ورزش کرتے رہنے سے ہمارے دماغ کی ذہنی صلاحیتیں بھی برقرار رکھنے میں مدد مل سکتی ہے؟

یہ بات درست بھی ہے اور اس حوالے سے سائنسی شواہد بھی موجود ہیں جو اس بات کو ثابت کرتے ہیں اور عمر میں اضافے پر بھی اس کا نمایاں اثر پڑتا ہے۔

’عمر میں اضافے کے ساتھ دماغ سکڑ جاتا ہے‘

جیسے جیسے ہماری عمر بڑھتی ہے ہمارے جسم میں ٹشوز اور اعضا کی صلاحیت کم ہونا شروع ہو جاتی ہے۔ خلیوں کے کام کرنے کی صلاحیت کم ہو جاتی ہے اور اس کے ساتھ ساتھ ٹشوز بھی کم ہونے لگتے ہیں۔

ہمارے دماغ کی صلاحیت بھی کم ہو جاتی ہے، کیونکہ وقت کے ساتھ ہمارے اعصاب بھی کمزور ہوتے ہیں اور نیورونز کا نقصان ہوتا ہے۔

چاہے وہ الزائمرز کی بیماری ہو یا حرکت کی صلاحیت میں کمی ہو، عمر کے ساتھ ساتھ ذہنی صلاحیت میں کمی واقع ہونے لگتی ہے اور دماغ میں تبدیلیاں واقع ہوتی ہیں جو دیگر جسمانی صلاحیتوں پر بھی اثر انداز ہوتی ہیں۔

ان تبدیلیوں میں دماغ کے کورٹیکل ایریا کا سکڑنا، سرمئی نیورونل باڈیز اور اعصابی ترسیل سے متعلق ٹشوز کا نقصان، وینٹریکلز کے حجم میں اضافہ اور نیورونز کی کمی شامل ہے۔

ورزش
Getty Images

کئی برسوں تک ہونے والی ایک تحقیق، جس میں رضاکارانہ طور پر سینکڑوں افراد نے شرکت کی، میں علم ہوا کہ عمر کے ساتھ اعضا کی صلاحیت میں کمی کی ایک وجہ سیریبرل وینٹریکل کے حجم میں اضافہ ہے۔

اسے دماغ کا ’خالی‘ حصہ بھی کہا جاتا ہے۔ اس کے باعث دماغ کی نیوروڈیجینریشن اور کمزوری بھی بڑھ جاتی ہے۔

’زیادہ ورزش، بہتر یادداشت‘

اگر اعضا کی صلاحیت میں کمی کا مطلب دماغ کے حجم میں کمی واقع ہونا ہے تو کیا ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ جسمانی توانائی کا ورزش کے ذریعے بہتر استعمال ہمارے دماغ میں ٹشوز کے نقصان کی رفتار کو کم کر سکتا ہے۔

اس کا جواب دینا آسان نہیں ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ دماغ کی صلاحیت بہتر کرنے کے لیے استعمال ہونے والے کسی بھی طریقے کو پرکھنا اس لیے مشکل ہوتا ہے کیونکہ اس کے نتائج کا فوری اندازہ لگانا تقریباً ناممکن ہو جاتا ہے۔

انسانی دماغ خون یا پھٹوں جیسا نہیں ہوتا کہ اس میں کسی بھی قسم کی تبدیلی فوری طور پر واضح ہو جائے یا اس کو ناپنے کا کوئی واضح طریقہ موجود ہو۔

تاہم اچھی خبر یہ ہے کہ موجودہ دور میں امیجنگ کے بہترین طریقوں کے باعث اب دماغ کے کچھ حصوں میں تبدیلی واضح طور پر دیکھی جا سکتی ہے۔

ہمارے پاس اس بارے میں پہلے سے شواہد موجود ہیں کہ ایک لمبے عرصے تک جسمانی ورزش کرنے سے ذہنی صلاحیت بہتر ہوتی ہے اور اس سے دماغ کے کچھ حصوں کا حجم بھی بڑھ جاتا ہے۔

مثال کے طور پر سنہ 2011 میں امریکہ کی نیشنل اکیڈمی آف سائنسز کے پیپر (پی این اے ایس) میں شائع ہونے والی ایک تحقیق میں یہ بتایا گیا ہے کہ ورزش کے باعث دماغ کے اس حصے کا حجم بڑھتا ہے جو یادداشت کے لیے مخصوص ہوتا ہے۔

ورزش
Getty Images

ضعیف افراد میں ہونے والی تحقیق سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ جسمانی ورزش کے باعث دماغ کے اس حصے کا حجم کم ہونے سے بھی روکا جا سکتا ہے۔

اس کے علاوہ، ایک ایسی ہی تحقیق میں ضعیف العمر افراد کے دماغ پر جسمانی ورزش کے اثرات جاننے کی کوشش کی گئی ہے۔

اس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ جسمانی ورزش کرنے والے افراد عام طور پر عمر بڑھنے کے ساتھ جس ڈیجینریشن یا انحطاط کا شکار ہوتے ہیں اس سے محفوظ رہتے ہیں۔

ہم جب اپنے جسم کے بارے میں سوچتے ہیں تو ہمیں لگتا ہے کہ جیسے اس کے مختلف حصے ہیں، اور ہر عضو خود ہی کام کر رہا ہے۔ اگر ہمارے جگر میں کوئی مسئلہ ہے تو ہم اس ہی پر توجہ دیتے ہیں، اور اگر ہمارے گردے میں کوئی مسئلہ ہو تو ہم اس پر توجہ دیتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

جہاں فضائی آلودگی وہاں جرائم زیادہ

’انسانی دماغ میں خلیوں کی تعداد کہکشاں کے تاروں سے بھی زیادہ‘

نیند کی کمی سے دماغ کیسے متاثر ہوتا ہے؟

کیا ہم اپنا دماغ بدل سکتے ہیں؟

تاہم ہمارا جسم ایسے کام نہیں کرتا، بلکہ اس میں موجود تمام اعضا آپس میں جڑے ہیں اور ایک دوسرے پر منحصر ہیں۔

یہی وجہ ہے کہ جب ہمارے گردے میں مسئلہ ہوتا ہے تو اس سے دل کا عارضہ شدت اختیار کر جاتا ہے، یا جگر کے عارضے کے باعث دماغی عارضہ سیریبرل اسکیمیا ہو سکتا ہے۔ عمر بڑھنے کے ساتھ ساتھ جسم کے پیچیدہ نظام کی صورتحال خاصی نازک ہوتی ہے۔

جب ہم ورزش کرتے ہیں تو ہم اپنے جسم کو درمیانے درجے کے دباؤ میں ڈالتے ہیں تاکہ ہم ان خلیوں کو زیادہ توانائی پیدا کرنے پر مجبور کر سکیں۔

اس کا مطلب ہے کہ غذائی اجزا کو سٹور سے پھٹوں تک پہنچانا۔ اس دباؤ سے نبرد آزما ہونے کے لیے جو جسمانی تبدیلیاں ضروری ہوتی ہیں انھیں ہورمیسز کہا جاتا ہے۔

ورزش
Getty Images

ہورمیسز کے مراحل میں پٹھے ایسا مادہ خارج کرتے ہیں جو دوسرے اعضا کو یہ اطلاع دینے کا طریقہ ہے کہ توانائی کی مانگ میں اضافہ ہو رہا ہے۔

اس مادے کو مائیوکینز کہا جاتا ہے اور یہ ہمارے خون میں خارج ہوتے ہیں جہاں سے اسے دیگر اعضا تک پہنچایا جاتا ہے۔

ان میں سے کچھ مائیوکینز دماغ تک پہنچ جاتے ہیں جہاں یہ نیورونز کی صلاحیت میں اضافہ کرتے ہیں کہ وہ نئے رابطے قائم کر سکیں یا پہلے سے قائم رابطوں کو مزید مضبوط کر سکیں۔

ان میں سے ایک مائیوکینز بی ڈی این ایف کہلاتا ہے جو نیورونز کے لیے رابطہ قائم کرنے کے لیے انتہائی ضروری ہوتا ہے اور انھیں چست رکھتا ہے۔ یہ ایک بہت سادہ سی مثال ہے جس کے ذریعے ہم یہ بتا سکتے ہیں کہ جسمانی ورزش کے ذریعے دماغ کا حجم کیسے برقرار رکھا جا سکتا ہے۔

دوسری جانب، جسمانی ورزش کے ذریعے خون کا بہاؤ بھی بہتر ہوتا ہے اور جسم کو ملنے والی آکسیجن میں بھی اضافہ ہوتا ہے۔ اس سے دماغی صلاحیت پر مثبت اثر پڑتا ہے۔

اسی طرح تحقیق سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ متوازن ورزش کے باعث سوزش کش اثرات ہوتے ہیں جن کے دماغ پر اثرات ہو سکتے ہیں مثال کے طور پر الزائمرز یا ڈمینشیا سست ہو جاتی ہے۔

براہ راست اور بالواسطہ سائنسی شواہد یہ بات واضح کرتے ہیں کہ عمر بڑھنے کے ساتھ ورزش کرنے کے باعث دماغی صلاحیت میں کمی کی رفتار سست ہو جاتی ہے۔

اسی لیے سستی سے غیر فعال طرزِ زندگی سے اجتناب کرنا چاہیے تاکہ ہم صرف زندگی میں مزید سال ہی نہیں بلکہ ان سالوں میں مزید زندگی بھی شامل کر سکیں۔


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
تازہ ترین خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.