ام المؤمنین حضرت خدیجۃ الکبریٰ رضی اﷲ تعالیٰ عنہا

(Tariq Noman, )

تاریخ کا رخ بدلنے میں جن خواتین نے اہم کردارسرانجام دیا ہے ان میں سرفہرست اور سنہری حروف سے لکھا گیا مقدس اسم گرامی ام المؤمنین سیدہ خدیجۃ الکبریٰ رضی اﷲ عنھا کابھی ہے۔ ام المومنین سیدہ خدیجۃ الکبری عرب کی معزز ترین اور دولت مند خاتون ہونے کے ساتھ ساتھ علم و فضل اور ایمان و ایقان میں بھی نمایاں مقام رکھتی ہیں
شجرہ نسب
سیدہ خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا بنتِ خویلد بن اسدبن عبدالعزی بن قصی بن کلاب بن مرہ بن کعب بن لوی۔
آپؓ کا نسب نبی پاک ﷺ کے نسب سے قصی میں مل جاتا ہے۔ آپ ؓ کی کنیت ام ہند ہے۔ آپ کی والدہ فاطمہ بنت زائدہ بن العصم قبیلہ بنی عامر بن لوی سے تھیں ۔
(مدارج النبوت،قسم پنجم،باب دوم ،درذکرازواج مطہرات )
رب کا سلام
صحیحین میں حضرت ابوہریرہ رضی اﷲ تعالی عنہ سے مروی ہے کہ بارگاہِ رسالتﷺ میں حضرت جبرائیل علیہ السلام نے حاضرہوکرعرض کیا: اے اﷲ کے رسول!ﷺ آپ کے پاس حضرت خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا دستر خوان لارہی ہیں جس میں کھانا پانی ہے جب وہ لائیں ان سے ان کے رب کا سلام فرمانا۔
(صحیح مسلم،کتاب فضائل الصحابہ ،باب فضائل خدیجہ ام المومنین رضی اﷲ تعالی عنھا)
افضل ترین جنتی عورتوں میں شمار
مسند امام احمد میں سیدنا ابن عباس رضی اﷲ تعالی عنہماسے مروی ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: جنتی عورتوں میں سب سے افضل سیدہ خدیجہ بنت خویلد رضی اﷲ تعالی عنہا ،سیدہ فاطمہ بنت محمدرضی اﷲ تعالی عنہا،،حضرت مریم بنت عمران رضی اﷲ تعالی عنہا اور آسیہ بنت مزاحم رضی اﷲ تعالی عنہا امرائۃ فرعون ہیں ۔(مسندامام احمدبن حنبل،مسند عبداﷲ بن عباس ،ج۱،ص۴۷۸)
سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا کی تجارت میں دوگنانفع
نبی پاک ﷺکے اخلاقِ حسنہ کا ہر جگہ چرچا تھا حتی کہ مشرکین مکہ بھی انہیں الامین والصادق سے یاد کرتے، آپ رضی اﷲ تعالی عنہا نے اپنے کاروبار کے لئے یکتائے روزگار کو منتخب فرمایا اور سرکاردوعالمﷺ کی بارگاہ میں پیغام پہنچایا کہ آپ سیدہ خدیجۃ الکبریؓ کا مال ِ تجارت لے کر شام جائیں اور منافع میں جو مناسب خیال فرمائیں لے لیں ۔
حضور اقدس ﷺ نے اس پیشکش کو بمشورہ ابوطالب قبول فرمالیا۔ سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا نے اپنے غلام میسرہ کو بغرض خدمت حضور اقدسﷺ کے ساتھ کردیا۔
حضورﷺ نے اپنا مال بصرہ میں فروخت کرکے دوگنا نفع حاصل کیا نیز قافلے والوں کو آپ ﷺکی صحبت بابرکت سے بہت نفع ہوا جب قافلہ واپس ہوا تو سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا نے دیکھا کہ دو فرشتے رحمت عالم ﷺپر سایہ کنا ں ہیں نیزدوران سفر کے خوارق نے سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا کو آپ کاگرویدہ کردیا۔
(مدارج النبوۃ،قسم دوم،باب دوم درکفالت عبدالمطلب ...الخ،ج۲،ص۲۷)
سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا کا نکاح
ام المؤمنین سیدہ خدیجۃ الکبری ؓ مالدار ہونے کے علاوہ فراخ دل اور قریش کی عورتوں میں اشرف وانسب تھیں ۔ بکثرت قریشی آپ رضی اﷲ تعالی عنہاسے نکاح کے خواہشمندتھے لیکن آپ رضی اﷲ تعالی عنہانے کسی کے پیغام کو قبول نہ فرمایا بلکہ سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہانے سرکار دوعالم ﷺ کی بارگاہ میں نکاح کا پیغام بھیجا اور اپنے چچا عمرو بن اسد کو بلایا۔ سردار دوعالم ﷺ بھی اپنے چچا ابوطالب، حضرت حمزہ رضی اﷲ تعالی عنہما حضرت ابوبکر صدیق رضی اﷲ تعالی عنہ اور دیگر روؤسا کے ساتھ سیدہ خدیجۃ الکبری رضی اﷲ تعالی عنہا کے مکان پر تشریف لائے۔ ابو طالب نے نکاح کا خطبہ پڑھا۔ ایک روایت کے مطابق سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا کا مہر ساڑھے بارہ اوقیہ سونا تھا۔
(مدارج النبوت،قسم دوم،باب دوم درکفالت عبدالمطلب ...الخ،ج۲،ص۲۷)
بوقتِ نکاح سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا کی عمر چالیس برس اور آقائے دو جہاںﷺکی عمر شریف پچیس برس کی تھی۔(الطبقات الکبری لابن سعد،تسمیۃ النساء...الخ،ذکرخدیجۃ بنت خویلد،ج۸،ص ۱۳)
جب تک آپ رضی اﷲ تعالی عنہاحیات رہیں آپ کی موجودگی میں پیارے آقا ﷺنے کسی عورت سے نکاح نہ فرمایا۔(صحیح مسلم،کتاب فضائل الصحابہ،باب فضائل خدیجۃ ام المومنین رضی اﷲ تعالی عنھا،ص۱۳۲۴)
غم گسار بیوی
غارِ حرا میں حضرت جبرائیل علیہ السلام بارگاہِ رحمت ﷺمیں وحی لے کر حاضر ہوئے اور عرض کیا پڑھئے حضور ﷺنے فرمایا: کہ ما انا بقاریمیں نہیں پڑھتااس کے بعد جبرائیل علیہ السلام نے اپنی آغوش میں لے کر بھینچاپھرچھوڑ کر دوبارہ کہا: پڑھئے، میں نے کہا: میں نہیں پڑھتا،جبرائیل علیہ السلام نے آغوش میں لے کربھینچاپھرچھوڑکر کہا۔
اِقرا بِاسمِ ربِ الذِی خلق (۱)خلق الاِنسان مِن علق(۲)اِقرا و رب الاکرم(۳)الذِی علم بِالقلمِ(۴)علم الاِنسان ما لم یعلم(۵)(پ۳۰،سورۃالعلق)
اس واقعہ سے آپ ﷺ کی طبیعت بے حد متاثِر ہوئی گھر واپسی پر سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا سے فرمایا: زملونی زملونی مجھے کمبل اڑھاؤ مجھے کمبل اڑھاؤ۔
سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا نے آپﷺکے جسم انور پر کمبل ڈالا اور چہرہ انور پر سرد پانی کے چھینٹے دیئے تاکہ خشیت کی کیفیت دور ہو۔ پھر آپ ﷺنے سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا سے سارا حال بیان فرمایا۔ سیدہ خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا نے آپﷺکو تسلی دیتے ہوئے فرمایا کہ اﷲ تعالی آپ ﷺکے ساتھ اچھا ہی فرمائے گاکیونکہ آپﷺصلہ رحمی فرماتے، عیال کا بوجھ اٹھاتے، ریاضت و مجاہدہ کرتے، مہمان نوازی فرماتے، بیکسوں اور مجبوروں کی دستگیری کرتے، محتاجوں اور غریبوں کے ساتھ بھلائی کرتے لوگوں کے ساتھ حسن اخلاق سے پیش آتے، لوگوں کی سچائی میں انکی مدد اور ان کی برائی سے حذر فرماتے ہیں، یتیموں کو پناہ دیتے ہیں سچ بولتے ہیں اور امانتیں ادا فرماتے ہیں۔ سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہانے ان باتوں سے حضورﷺکو تسلی و اطمینان دلایا کفار قریش کی تکذیب سے رحمت عالم ﷺجو غم اٹھاتے تھے وہ سب سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا کو دیکھتے ہی جاتا رہتا تھا او رآپ ﷺخوش ہوجاتے تھے اور جب سرکار دوعالمﷺتشریف لاتے تو وہ آپ ﷺکی خاطر مدارات فرماتیں جس سے ہر مشکل آسان ہوجاتی۔(مدارج النبوت،قسم دوم،باب سوم دربدؤالوحی وثبوت نبوت ،باب دوم درذکرازواج مطہرات )
سابق الایمان
مذہب جمہور پر سب سے پہلے علی الاعلان ایمان لانے والی حضرت سیدہ خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا ہیں ۔ کیونکہ جب سرور دو عالم ﷺغارحرا سے تشریف لائے اور ان کو نزول وحی کی خبر دی تو وہ ایمان لائیں ۔ بعض کہتے ہیں ان کے بعد سب سے پہلے سیدنا ابوبکر صدیق رضی اﷲ تعالی عنہ ایمان لائے بعض کہتے ہیں سب سے پہلے سیدنا حضرت علی رضی اﷲ تعالی عنہ ایمان لائے اس وقت آپ رضی اﷲ تعالی عنہ کی عمر شریف دس سال کی تھی۔ شیخ ابن الصلاح فرماتے ہیں ۔ کہ سب سے زیادہ محتاط اور موزوں تر یہ ہے کہ آزاد مردوں میں حضرت ابوبکر صدیق رضی اﷲ تعالی عنہ بچوں اور نو عمروں میں حضرت علی رضی اﷲ تعالی عنہ عورتوں میں سیدتنا خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا اور موالی میں زید بن حارثہ رضی اﷲ تعالی عنہ اور غلاموں میں سے حضرت بلال حبشی رضی اﷲ تعالی عنہ ایمان لائے۔
(مدارج النبوت،قسم دوم،باب سوم دربدؤالوحی وثبوت نبوت )
سیدہ رضی اﷲ تعالی عنہا کی فراخدلی
حضورﷺ نے حضرت عائشہ رضی اﷲ تعالی عنہا سے فرمایا: اﷲ کی قسم!خدیجہ سے بہتر مجھے کوئی بیوی نہیں ملی جب سب لوگوں نے میرے ساتھ کفر کیا اس وقت وہ مجھ پر ایمان لائیں اور جب سب لوگ مجھے جھٹلا رہے تھے اس وقت انہوں نے میری تصدیق کی اور جس وقت کوئی شخص مجھے کوئی چیز دینے کے لئے تیار نہ تھا اس وقت خدیجہ نے مجھے اپنا سارا سامان دے دیا اور انہیں کے شکم سے اﷲ تعالی نے مجھے اولادعطافرمائی۔(شرح العلامہ الزرقانی علی المواہب اللدنیہ،حضرت خدیجۃ ام المومنین رضی اﷲ عنہا)
اولادِ نبی ﷺ
حضورﷺکی تمام اولاد سیدہ خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا کے بطن سے ہوئی۔ بجز حضرت ابراہیم رضی اﷲ تعالی عنہ کے جو سیدہ ماریہ قبطیہ رضی اﷲ تعالی عنہا سے پیدا ہوئے۔ فرزندوں میں حضرت قاسم رضی اﷲ تعالی عنہ اور حضرت عبداﷲ رضی اﷲ تعالی عنہ کے اسمائے گرامی مروی ہیں جب کہ دختران میں سیدہ زینب، سیدہ رقیہ ، سیدہ ام کلثوم اور سیدہ فاطمہ زہرا رضی اﷲ تعالی عنہن ہیں ۔
(السیرالنبوی لابن ہشام)
آپ ؓ کے وصال کے بعدذکر خیر
ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اﷲ تعالی عنہا فرماتی ہیں کہ حضورﷺ حضرت خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا کا اکثر ذکر فرماتے رہتے تھے۔ بعض اوقات حضور ﷺبکری ذبح فرماتے اور پھر اس کے گوشت کے ٹکڑے کرکے حضرت خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا کی سہیلیوں کے گھر بھیجتے صرف اس لئے کہ یہ حضرت خدیجہ رضی اﷲ تعالی عنہا کی سہیلیاں تھیں ۔
(صحیح مسلم،کتاب فضائل الصحابہ باب فضائل خدیجہ ام المومنین رضی اﷲ تعالی عنہا)
ام المؤمنین کا وصال
آپ رضی اﷲ تعالی عنہا تقریبا پچیس سال حضور ﷺکی شریک حیات رہیں ۔ آپ رضی اﷲ تعالی عنہاکا وصال بعثت کے دسویں سال ماہ ِ رمضان میں ہوا۔ اور مقبرہ حجون میں مدفون ہیں ۔ حضور ﷺآپ رضی اﷲ تعالی عنہاکی قبر میں داخل ہوئے اور دعائے خیر فرمائی ۔ نماز جنازہ اس وقت تک مشروع نہ ہوئی تھی۔ اس سانحہ پر رحمت عالم ﷺ بہت زیادہ ملول و محزون ہوئے۔
(مدارج النبوت)
ام المؤمنین ؓ کوحفیظ جالندھری ؒ نے اپنے اشعار میں اس طرح خراجِ تحسین پیش کیا ہے
وہ ام المسلمیں جو مادرِ گیتی کی عزت ہے
وہ ام المسلمیں قدموں کے نیچے جس کے جنت ہے
خدیجہ طاہِرہ یعنی نبی کی باوفا بی بی
شریکِ راحت و اندوہ پابند رضا بی بی
دیارِ جاودانی کی طرف راہی ہوئیں وہ بھی
گئیں دنیا سے آخر سوئے فردوسِ بریں وہ بھی
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Tariq Noman

Read More Articles by Tariq Noman: 69 Articles with 47426 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
26 May, 2018 Views: 363

Comments

آپ کی رائے