نہیں معلوم کہ ہم کس کٹرے میں کھڑے ہیں ؟

(Babar Alyas, Chichawatni)

نبوت ختم ہے تجھ پر، رسالت ختم ہے تجھ پر
ترا دیں ارفع و اعلی، شریعت ختم ہے تجھ پر
ہے تری مرتبہ دانی میں پوشیدہ خدادانی
تو مظہر ہے خدا کا، نور وحدت ختم ہے تجھ پر
ترے ہی دم سے بزم ِ انبیاء کی رونق و زینت
تو صدرِ انجمن، شانِ صدارت ختم ہے تجھ پر
تری خاطر ہوئے تخلیق یہ ارض و سماء سارے
یہی وجہ ضرورت تھی ضرورت ختم ہےتجھ پر
خدا خود نعت لکھتا ہے تری قران کی صورت
عجب ہے شانِ محبوبی، وجاہت ختم ہے تجھ پر
مزمل بھی، مدثر بھی ہے تو، یاسین و طٰہٰ بھی
انوکھے نام ہیں تیرے، یہ ندرت ختم ہے تجھ پر
شریعت کے محل کا آخری پتھر ہے تو پیارے
ادھورے کو کیا پورا یہ سنت ختم ہے تجھ پر
ترے ہی ہاتھ سے تکمیلِ دیں اللہ نے فرمائی
ہوا اتمام نعمت کا یہ نعمت ختم ہے تجھ پر
یٰٓاَیُّہَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْٓا اِنْ جَائَکُمْ فَاسِقٌ بِنَبَاٍٴ فَتَبَیَّنُوْآ اَنْ تُصِیْبُوْا قَوْمًا بِجَہَالَةٍ فَتُصْبِحُوْا عَلٰی مَا فَعَلْتُمْ نٰدِمِیْنَ(۷)
ترجمہ: اے وہ لوگوں جو ایمان لائے ہو اگر کوئی فاسق آدمی تمہارے پاس کوئی خبر لاے تو تم اس کی اچھی طرح تحقیق کرلیا کرو، کہیں ایسا نہ ہو کہ تم کوئی نقصان پہنچا بیٹھو کسی قوم کوبے علمی (ونادانی)کی بناء پر تو پھر اس کے نتیجے میں تمہیں خود اپنے کیے پر شرمندگی اٹھانی پڑے۔
دین اسلام ہمیں یہ حکم دیتا ہے کہ ہر بات کو تحقیق کے بعد قبول کیا جائے۔ چنانچہ ارشاد باری تعالیٰ ہے۔
يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِنْ جَاءَكُمْ فَاسِقٌ بِنَبَإٍ فَتَبَيَّنُوا
جب کوئی تمہارے پر خبر لائے تو اس کو قبول کرنے سے پہلے خو ب چھان بین کر لو
اس سے معلوم ہو تا ہے کہ ایک معمولی خبر کیلئے بھی اسلام میں تحقیق کا زور دیا گیا ہے ۔ جتنی خبر اہم اور اعلیٰ شخصیت کی ہو گی اتنی ہی اس میں ’’تحقیق ‘‘ کا حکم بھی شدید ہے۔
تحقیق باب تفعیل کا مصدر ہے۔جس کے معنی چھان بین اورتفتیش کے ہیں۔(۱) اوراس کا مادہ ح ق ق ہے۔مشہور لغت کے امام خلیل ابن احمد(م۱۷۰ھ )لکھتے ہیں:
الحقُّ نقیض الباطل(۲)
”الحق باطل کی ضد ہے “۔
اسی طرح ایک اور مشہور لغت کے ماہر ابن منظور افریقی (م۷۱۱ھ)لکھتے ہیں:
الحَقُّ: نَقِیضُ الْبَاطِلِ، وَجَمْعُہُ حُقوقٌ وحِقاقٌ․․․․․ وحَقَّ الأَمرُ یَحِقُّ ویَحُقُّ حَقّاً وحُقوقاً: صَارَ حَقّاً وثَبت(۳)
”حق باطل کی ضدہے۔اور اس کی جمع حقوق اور حقاق آتی ہے۔اور حَقَّ الامرُ کا معنی صحیح ہونا اور ثابت ہونا ہے۔“
چونکہ حق اور باطل دونوں ایک دوسرے کی ضد ہیں۔یہی وجہ ہے کہ قران کریم میں حق اور باطل کے درمیان فرق کرنے کاحکم دیا گیاہے۔ارشاد ربانی ہے:
وَلَا تَلْبِسُوا الْحَقَّ بِالْبَاطِلِ وَتَکْتُمُوا الْحَقَّ وَاَنْتُمْ تَعْلَمُوْنَ(۴)
”اور سچ میں جھوٹ نہ ملاؤ اور جان بوجھ کر حق کو نہ چھپاؤ۔“
اسی طرح سچائی کو ثابت اور باطل کا جھوٹ واضح کرنے کے لیے فرمایا:
لِیُحِقَّ الْحَقَّ وَیُبْطِلَ الْبَاطِلَ وَلَوْ کَرِہَ الْمُجْرِمُوْنَ(الانفال:۸)
”تاکہ سچا کرے سچ کو اور جھوٹا کردے جھوٹ کو اور اگرچہ ناراض ہوں گناہ گار“۔
ایک اور مقام پر فرمایا:ارشاد ربانی ہے :
لِّیُنْذِرَ مَنْ کَانَ حَیًّا وَّیَحِقَّ الْقَوْلُ عَلَی الْکٰفِرِیْنَ(۵)
”تاکہ جو زندہ ہے اسے ڈرائے اور کافروں پر الزام ثابت ہو جائے“۔
ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﭘﺮ ﺗﻨﻘﯿﺪ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺑﻐﻮﺭ ﭘﮍﮪ ﻟﯿﮟ، ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮧ ﮨﻮ ﮐﮧ ﺭﻭﺯ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻇﺎﻟﻢ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺳﮯ ﮐﭩﮩﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮ ﮐﺮ
ﺣﺴﺎﺏ ﺩﯾﻨﺎ ﭘﮍﮮ۔
ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ أف پاکستان ﻧﮯ ﺟﺲ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﻣﻠﺰﻡ
ﺁﺳﯿﮧ ﮐﻮ ﺑﺮﯼ ﮐﯿﺎ:
1۔ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﭼﻮﺩﮦ ﺟﻮﻥ 2009 ﮐﻮ ﭘﯿﺶ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﯾﻒ ﺁﺋﯽ ﺁﺭ 19 ﺟﻮﻥ 2009 ﮐﻮ ﮐﺎﭨﯽ ﮔﺌﯽ۔ ﻣﺪﻋﯽ ﮐﺎ ﻧﺎﻡﻗﺎﺭﯼ ﻣﺤﻤﺪ ﺳﻼﻡ ﺗﮭﺎ، ﺟﺴﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺟﻦ ﺩﻭ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﻗﺮﺁﻥ ﭘﮍﮬﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻗﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺁﺳﯿﮧ ﻧﺎﻣﯽ ﺍﯾﮏ ﻋﯿﺴﺎﺋﯽ ﺧﺎﺗﻮﻥ ﻧﮯ ﻧﺒﯽ ﷺ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺁﻣﯿﺰ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺌﮯ۔
2۔ ﻭﺍﻗﻌﮯ ﮐﯽ ﺗﻔﺼﯿﻞ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ 14 ﺟﻮﻥ 2009 ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻓﯿﮧ، ﺁﺳﻤﺎ ﺍﻭﺭ ﯾﺎﺳﻤﯿﻦ ﻧﺎﻣﯽ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﺳﻤﯿﺖ ﻓﺎﻟﺴﮯ ﮐﮯ ﮐﮭﯿﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻭﮨﺎﮞ ﺁﺳﯿﮧ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﯽ۔ ﭘﺎﻧﯽ ﭘﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﭘﺮ ﻣﻌﺎﻓﯿﮧ ﺍﻭﺭ ﺁﺳﻤﺎ ﻧﮯ ﺁﺳﯿﮧ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﮐﺎ ﭘﺎﻧﯽ
ﻧﮩﯿﮟ ﭘﯽ ﺳﮑﺘﯿﮟ ﺟﺲ ﭘﺮ ﺁﺳﯿﮧ ﻧﮯ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺁﻣﯿﺰ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺌﮯ۔
3۔ ﻣﻌﺎﻓﯿﮧ ﺍﻭﺭ ﺁﺳﻤﺎ ﻧﮯ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﻌﻠﻤﮧ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﺋﯽ، ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﻗﺎﺭﯼ ﺳﻼﻡ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﯾﮏﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﺑﻼ ﮐﺮ ﺁﺳﯿﮧ ﺳﮯ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﮐﺎ
ﺍﻗﺮﺍﺭ ﮐﺮﻭﺍ ﻟﯿﺎ۔
4۔ ﻭﺍﻗﻌﮯ ﮐﮯ ﭘﺎﻧﭻ ﺩﻥ ﺑﻌﺪ ﺍﯾﻒ ﺁﺋﯽ ﺁﺭ ﮐﭩﻮﺍﺋﯽ ﮔﺌﯽ، ﭘﻮﻟﯿﺲ ﻧﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺗﻔﺘﯿﺶ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ 295 ﺳﯽ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﭘﺮﭼﮧ ﮐﺎﭨﺎ، ﺟﻮﻧﺌﯿﺮ ﻋﺪﺍﻟﺖ ﺳﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﺳﻨﺎ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﭘﺮ ﮨﺎﺋﯽ ﮐﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ
ﺍﭘﯿﻞ ﺩﺍﺋﺮ ﮨﻮﺋﯽ ﺟﻮ ﮐﮧ ﻣﺴﺘﺮﺩ ﮨﻮﮔﺌﯽ۔
5۔ ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺍﭘﯿﻞ ﺩﺍﺋﺮ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﺗﻤﺎﻡ ﮔﻮﺍﮨﺎﻥ ﮐﮯ ﺑﯿﺎﻧﺎﺕ ﻃﻠﺐ ﮐﺌﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﺍﺳﺘﻐﺎﺛﮧ ﮐﯽ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﮔﻮﮦ ﯾﺎﺳﻤﯿﻦ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﺳﮯ ﻣﻨﺤﺮﻑ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ
ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺳﯿﮧ ﻧﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ۔
6۔ ﮐﮭﯿﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ 30 ﺳﮯ 35 ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﯿﮟ، ﺳﺐ ﺍﺱ ﺟﮭﮕﮍﮮ ﮐﯽ ﮔﻮﺍﮦ ﺗﮭﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ
ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺁﺳﯿﮧ ﮐﻮ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﮐﺮﺗﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻨﺎ۔
6۔ ﮔﻮﺍﮨﺎﻥ ﮐﮯ ﺑﯿﺎﻧﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻀﺎﺩ ﮐﺎ ﻋﺎﻟﻢ ﯾﮧ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﮨﺮ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻏﻠﻂ ﺑﺘﺎﯾﺎ۔ ﻣﻌﺎﻓﯿﮧ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﮨﻮﺋﯽ
ﺟﺒﮑﮧ ﺁﺳﻤﺎ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﮍﻭﺳﯽ ﺭﺍﻧﺎ ﺭﺯﺍﻕ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﺭﺍﻧﺎ ﺭﺯﺍﻕ ﻣﻌﺎﻓﯿﮧ ﮐﺎ ﻭﺍﻟﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﮏ ﭼﻮﺗﮭﮯ ﮔﻮﺍﮦ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ
ﻣﺨﺘﺎﺭ ﻧﺎﻣﯽ ﺷﺨﺺ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺰﮮ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺪﻋﯽ ﻗﺎﺭﯼ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﺎﺭ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﯿﺎ۔ ﯾﻌﻨﯽ ﺟﺲ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﮐﯽﺑﻨﯿﺎﺩ ﭘﺮ ﯾﮧ ﻣﻘﺪﻣﮧ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺍﺱ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﺁﺳﯿﮧ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﺮﻡ ﮐﺎ ﺍﻗﺮﺍﺭ ﮐﯿﺎ، ﺍﺱ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﮔﻮﺍﮦ ﻧﮯ ﻏﻠﻂ ﺑﺘﺎﯾﺎ۔
7۔ ﮔﻮﺍﮨﺎﻥ ﮐﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﯾﮧ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﭘﺎﻧﭻ ﻣﺮﻟﮯ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ، ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺳﻮ ﻟﻮﮒ ﺷﺮﯾﮏ ﺗﮭﮯ، ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺩﻭ ﺳﻮ ﺳﮯ ﺗﯿﻦ ﺳﻮ ﻟﻮﮒ۔ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﮔﻮﺍﮨﺎﻥ ﻧﮯ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺑﯿﺎﻥ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﮐﺮﻭﺍ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﮯ ﺯﺍﺋﺪ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺟﺲ ﺳﮯ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﮐﮯ ﻣﻨﻌﻘﺪ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﺎﺭﺍ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﮨﯽ ﻣﺸﮑﻮﮎ ﮨﻮﮔﯿﺎ۔ ﭘﺎﻧﭻ ﻣﺮﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮨﺰﺍﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﮐﺎ ﺗﺼﻮﺭ ﮨﯽ ﻣﺤﺎﻝ ﮨﮯ۔ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﮐﻮ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﺎﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﻧﮧ ﺑﺘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺳﮑﯿﮟ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﮔﺮ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﮐﻢ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﻮ ﭘﻮﭼﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﮔﻮﺍﮦ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺑﻼﺋﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﭼﺎﺭ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﮔﻮﺍﮦ ﺍﺳﺘﻐﺎﺛﮯ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ
ﻧﮧ ﮨﻮﺍ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺍﺱ ﭘﻨﭽﺎﯾﺖ ﮐﺎ ﭼﺸﻢ ﺩﯾﺪ ﮔﻮﺍﮦ ﮨﻮﺗﺎ۔
8۔ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ 295 ﺳﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺪﻣﮯ ﮐﯽ ﺗﻔﺘﯿﺶ ﺍﯾﺲ ﭘﯽ ﺭﯾﻨﮏ ﮐﺎ ﺍﻓﺴﺮ ﮐﺮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺁﺳﯿﮧ ﺑﯽ ﺑﯽ ﮐﮯ ﻣﻘﺪﻣﮯ ﮐﯽ ﺗﻔﺘﯿﺶ ﺍﯾﮏ ﺳﺐ ﺍﻧﺴﭙﮑﭩﺮ ﻧﮯ ﮐﯽ، ﺟﻮ ﮐﮧ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﯽ ﺧﻼﻑ ﻭﺭﺯﯼﺗﮭﯽ۔
9۔ ﺳﯿﺸﻦ ﮐﻮﺭﭦ ﮐﮯ ﺟﺞ ﻧﮯ ﻣﻮﺕ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺁﺳﯿﮧ ﺑﯽ ﺑﯽ ﮐﺎ ﻣﻘﺪﻣﮧ ﻟﮍﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻭﮐﯿﻞ ﺗﯿﺎﺭ ﻧﮧﺗﮭﺎ، ﮨﺎﺋﯽ ﮐﻮﺭﭦ ﻧﮯ ﺳﺰﺍ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺑﺮﻗﺮﺍﺭ
ﺭﮐﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﻤﺘﺎﺯ ﻗﺎﺩﺭﯼ ﺟﯿﺴﮯ ﻭﺍﻗﻌﮯ ﺳﮯ ﺳﺐ ﮈﺭﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﮨﺮ ﮐﺴﯽﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﺎﻥ ﮐﯽ ﻓﮑﺮ ﺗﮭﯽ، ﺍﻧﺼﺎﻑ ﮐﯽ ﮐﺴﮯ ﭘﺮﻭﺍﮦ ﺗﮭﯽ؟
10۔ ﺍﯾﮏ ﮔﻮﺍﮦ ﻣﻨﺤﺮﻑ ﮨﻮﮔﯿﺎ، ﺗﯿﻦ ﮔﻮﺍﮨﺎﻥﮐﮯ ﺑﯿﺎﻧﺎﺕ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﮯ، ﻣﺪﻋﯽ ﻗﺎﺭﯼ ﺳﻼﻡ ﮐﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﺎﻧﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﻀﺎﺩ ﮨﮯ، ﮐﺒﮭﯽ ﻭﮦ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺐ ﻭﺍﻗﻌﮧ
ﭘﯿﺶ ﺁﯾﺎ ﻭﮦ ﮔﺎﻭٔﮞ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺗﮭﺎ، ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮔﺎﻭٔﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺗﮭﺎ۔ ۔ ۔ ۔ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺟﺎﻥ ﮐﺎ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﮨﮯ، ﻭﮦ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺟﺎﻥ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺣﺮﻣﺖ ﮐﮯ ﺫﻣﮯ ﺩﺍﺭﯼ ﻗﺮﺁﻥ ﺍﻭﺭ ﻧﺒﯽ ﷺ ﻧﮯ ﮨﻢ ﭘﺮ ﻋﺎﺋﺪ ﮐﺮﺩﯼ۔ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﺁﺳﯿﮧ ﻧﮯ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﷺ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﻮ ﺁﭖ ﺗﺴﻠﯽ ﺭﮐﮭﯿﮟ، ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﺒﯽ ﷺ ﮐﯽ ﻋﺰﺕ ﮐﺎ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻢ ﺳﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﮯ، ﻭﮦ ﺍﻥ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺣﺴﺎﺏ ﻟﮯ ﮔﺎ ﺟﻮ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﻮﺙ ﮨﻮﺋﮯ، ﺍﮔﺮ ﺟﺠﻮﮞ ﻧﮯ ﻏﻠﻂ ﻓﯿﺼﻠﮧ
ﺩﯾﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻧﻤﭧ ﻟﮯ ﮔﺎ ۔ ۔ ۔ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﺁﺳﯿﮧ ﻧﮯ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ، ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺗﺼﺪﯾﻖ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﭼﮑﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﺎﺋﺒﻞ ﭘﺮ ﺣﻠﻒ
ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﮐﯽ ﺗﺮﺩﯾﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺁﻓﺮ ﮐﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮧ ﻣﺎﻧﺎ ۔ ۔ ۔ ۔ ﺍﮔﺮ ﺁﺳﯿﮧ ﺑﮯ ﻗﺼﻮﺭ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﺍﺳﮯ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ
ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺟﺎﻥ ﺁﭖ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﻥ ﭘﺮ ﮨﻮﮔﯽﺟﺲ ﮐﺎ ﺣﺴﺎﺏ ﻗﯿﺎﻣﺖ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻥ ﺩﯾﻨﺎ ﮨﻮﮔﺎ۔ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﷺ ﮐﮯ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﺎ ﺗﺤﻔﻆ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺳﯽ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﮯ
ﺗﺤﺖ ﻋﺪﺍﻟﺖ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻋﺰﺕ ﺩﯾﮟ، ﺍﮔﺮ ﺁﭖ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﻮ ﺩﻓﻌﮧ 295 ﺳﯽ ﻏﯿﺮ ﻣﻮٔﺛﺮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ۔ ۔ ۔
ﺁﺝ ﺁﭖ ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮﮞ ﺗﺎﮐﮧ ﮐﻞ ﮐﻼﮞ ﮐﻮ ﺍﮔﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺪﺑﺨﺖ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺗﻮﮨﯿﻦ ﺭﺳﺎﻟﺖ ﷺ ﮐﺎ ﻣﺮﺗﮑﺐ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺗﻤﺎﻡ ﺛﺒﻮﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﭘﺮﺍﭘﺮ ﮐﺎﺭﻭﺍﺋﯽﮨﻮﺳﮑﮯ ۔ ۔ ۔295 ﺳﯽ ﺍﮔﺮ ﺑﭽﺎﻧﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻋﺪﺍﻟﺘﯽ ﻓﯿﺼﻠﮧﻣﺎﻧﻨﺎ ﮨﻮﮔﺎ، ﻭﺭﻧﮧ ﺍﺱ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﮐﻮ ﻏﯿﺮ ﻣﻮٔﺛﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺁﭖ ﺧﻮﺩ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ!!
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Babar Alyas

Read More Articles by Babar Alyas : 298 Articles with 99941 views »
استاد ہونے کے ناطے میرا مشن ہے کہ دائرہ اسلام کی حدود میں رہتے ہوۓ لکھو اور مقصد اپنی اصلاح ہو,
ایم اے مطالعہ پاکستان کرنے بعد کے درس نظامی کا کورس
.. View More
01 Nov, 2018 Views: 328

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ