کراچی بورڈ کے امتحانات میں نقل عروج پر

(Ahsan ul haq, Karachi)
کراچی سمیت سندھ بھر میں میٹرک کے امتحانات شروع ہونے کی خبریں ہر نیوز چینل کی زینت بنی رہی ہیں ، میٹرک اور انٹر کے امتحانات طلبہ اور اساتذہ کیلئے بہت اہمیت کے حامل ہوتے ہیں بلکہ یہ ان کی ذہانت و لیاقت جانچنے کا بھی ایک معیار ہے ۔مگر افسوس صد افسوس سندھ میں ہونے والے ان امتحانات کے حوالے سے نقل با الفاظ دیگر چھپائی کا مسئلہ جس پیمانے پر اُٹھ کر سامنے آیا ہے اس نے ایک نہیں کئی سوالات کو جنم دیا ہے۔

کراچی بورڈ کے امتحانات میں نقل عروج پر

زندگی کے ہر شعبہ میں شارٹ کٹ کا بڑھتا ہوا رجحان تعلیم کے تقدس کو بھی پامال کر رہا ہے۔

کراچی سمیت سندھ بھر میں میٹرک کے امتحانات شروع ہونے کی خبریں ہر نیوز چینل کی زینت بنی رہی ہیں ، میٹرک اور انٹر کے امتحانات طلبہ اور اساتذہ کیلئے بہت اہمیت کے حامل ہوتے ہیں بلکہ یہ ان کی ذہانت و لیاقت جانچنے کا بھی ایک معیار ہے ۔مگر افسوس صد افسوس سندھ میں ہونے والے ان امتحانات کے حوالے سے نقل با الفاظ دیگر چھپائی کا مسئلہ جس پیمانے پر اُٹھ کر سامنے آیا ہے اس نے ایک نہیں کئی سوالات کو جنم دیا ہے۔

کراچی میں تھانے بکنے کی اصطلاح تو آپ نے ضرور سنی یا پڑھی ہو گی۔اب امتحانی مراکز بھی خریدے اور بیچے جاتے ہیں۔بدنام زمانہ امتحانی مراکز کی بلیک لسٹ بھی مشہور ہے۔جہاں امتحان دینے والے طلبہ دھڑلے سے نقل کرتے ہیں۔امتحان میں کامیابی کیلئے ناجائز ذرائع استعمال کرتے ہیں۔رشوت کے طور پر ہزاروں اور لاکھوں روپے دیئے اور لئے جاتے ہیں،کہیں امتحانات سے قبل ہی رشوت دیکر پرچے خریدے جاتے ہیں،تو کہیں رقم دے کر دوران امتحان مطلوبہ مواد حاصل کیا جاتا ہے۔یہ سلسلہ طلبہ کو ایڈمٹ کارڈ دینے کے وقت سے شروع ہو جاتا ہے،جب میٹر ک یا انٹر کے طالب علم سے فی کارڈ کی مد میں سوسے ہزار روپے تک وصول کیئے ہیں-

امتحان میں دھوکہ دہی لعنت ہے. طالب علموں کو عام طور پر محنت نہیں کرتے اور ان کی تعلیم مکمل نہیں کرتے. وہ صرف لطف اندوز کے لئے کالج میں شامل ہوتے ہیں. جب وقت آتا ہے تو وہ دھوکہ دہی سے ڈگری حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں. دھوکہ دہی میں، طالب علم، اساتذہ، والدین سب میں ملوث ہیں. اساتذہ رشوت قبول کرتے ہیں اور امتحانات کرتے ہوئے انہیں امیدواروں کو دھوکہ دیتے ہیں. والدین اساتذہ کو رشوت دینے کے لئے اپنے بچوں کو بہت پیسے دیتے ہیں. اصل میں، یہ طالب علم محنتی اور ذہین طلباء کے حق کو چھین رہے ہیں.اساتذہ جو اس عادت کو ختم کرنے کے لئے کام کرنا چاہئے اس عادت میں ملوث ہیں. ، اگر ہم محنت کرتے ہیں. آپ حاصل کر سکتے ہیں. آپ دھوکہ دہی کے ذریعے نشان حاصل کرسکتے ہیں لیکن آپ کی ہوشیاری آپ کو کبھی معاف نہیں کرے گی. مسلمانوں کے طور پر، ہمارے مذہب کو ہمیں چوری اور دھوکہ دینے کی اجازت نہیں دیتا ہے جو غلا اور چوری سے کم نہیں ہے. کوششوں اور سخت محنت کی تزئین اور آزمائش کو فروغ دیتا ہے. محنت سے اپنے ڈگری کو ہمیشہ حاصل کریں. اگر آپ کی کوشش میں ناکام ہو تو اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا. آپ کو دوبارہ کوشش کرنا چاہئے. یہ کامیابی کی کلید ہے-

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 417 Print Article Print
About the Author: Ahsan ul haq

Read More Articles by Ahsan ul haq: 9 Articles with 1571 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

CONCERNED IDAARON KO SINDH KI TALEEM KA MUYAAR BEHTR BANANA CHAHYE !
By: INAM, KARACHI on Apr, 10 2019
Reply Reply
0 Like
Language: