کیا بانجھ صرف عورت ہی ہوتی ہےٍ

(Azra faiz, Wah)

(پڑھئے گا صْرور کیونکہ یہ کہانی معاشرے کے معصْور زہن کی عکاسی کرتی ہے)

کس چیز کی کمی ہے۔۔۔۔۔۔۔کیوں نحوست پھیلائی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔کیا چاہتی ہو آخر۔۔۔۔۔۔جب بچے ہونے ہونگے ہوجائیں گے اور پھر اماں تمہارا علاج حمیدہ خالہ سے کروا تو رہی ہیں اللہ نے چاہا تو ہمارا بچہ ہوجاۓ گا۔۔۔ احمد نے غصے سے چیخ کر کہا ۔ صْرور کوئی مورننگ شو دیکھا ہوگا یا میگزین میں کوئی ایڈ آیا ہوگا ۔ اس نے جھلاتے ہوۓ اپنی پیاری سی بیوی کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔پھر پیار سے گویا ہوا ۔۔۔۔دیکھو جان۔۔۔۔ عمر پڑی ہے ابھی ۔۔۔۔مجھے اچھا نہیں لگتا کوئی دیکھ لے تو کیا کہے گا ۔۔۔میں۔۔۔میں۔۔۔نہیں چاہتا لوگ باتیں کریں۔۔۔۔ ابھی تو سب یہی جانتے ہیں کے اللہ کی مرصْی ہے ۔ ہونا ہوگا تو ہوجاۓ گا لیکن اگر ہم بانجھ پن کے ہسپتال چلے گۓ تو خوامخواہ بدنام ہوجائیں گے ۔۔۔۔لوگ ہمیں بانجھ سمجھیں گے۔۔۔۔طرح طرح کی باتیں بنیں گی۔۔۔۔۔۔تمہیں تو فرق نہیں پڑے گا مگر میں اپنی مردانگی پر کوئی لفظ برداشت نہیں کرسکتا۔۔۔۔۔کیا سمجھی ۔۔۔۔بہتر ہوگا کہ آئندہ یہ ذکر گھر میں نہ ہو۔۔۔۔ورنہ۔۔۔۔۔۔تم سمجھدار ہو۔۔۔۔۔۔اماں کی خواہش پوری کرنے میں دیر نہیں ہوگی۔۔۔۔۔۔اس نے اپنا حتمی فیصلہ سنایا۔۔۔۔

اماں جی غصے میں تھیں اور ہوتی بھی کیوں نہ ان کے مطابق اب ہر بیماری کے علاج کے لیۓ الگ الگ ہسپتال ہیں جہاں نہ صرف سپیشلسٹ ڈاکٹر موجود ہوتے ہیں بلکہ پورا عملہ ہی ٹرینڈ ہوتا ہے یہی نہیں مشینری، لیب بھی اسی بیماری کے مطابق ہوتی ہے پھر بھلا کیا صْرورت ہے خوامخواہ پرانے جنرل ہسپتال میں عام ڈاکٹروں کے ہاتھوں خوار ہونے کی۔۔۔۔۔کیونکہ اماں ٹھیک کہہ رہیں تھیں اس لیۓ احمد سمیت سب گھر والے ابا جان کو سمجھا رہے تھے کے کڈنی سنٹر سے علاج کروانے شہر چلیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بڑی بی بی دائی حمیدہ آئی ہے۔۔۔۔ خالہ رحمتاں نے جھاڑو ہاتھ میں پکڑے اعلان کیا۔۔۔۔۔۔۔اری اندر لے آ اسے۔۔۔۔۔۔۔اور احمد کی بیوی کو بھی ادھر بلا کے لے آ ۔۔۔۔۔۔۔غصے میں ہے بیگم صاحبہ کسی ڈاکٹر سجاد کو مورننگ شو میں دیکھا ہے ۔۔۔۔۔۔سنا ہے ہزاروں بے اولاد جوڑوں کا کامیاب علاج کیا ہے ۔۔۔۔۔۔ صرف خاص بے اولاد۔۔۔ارے یہی بانجھ جوڑوں کے لیۓ موۓ نے ہر شہر میں ہسپتال کھول ڈالے ہیں۔۔۔۔۔ بھلا بتاؤ خدا کے کام میں مداخلت کر رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ ارے یہ ڈاکٹر نہیں قصائی ہوتے ہیں ، اچھا خاصا پیسہ اینٹھ لیتے ہیں ۔۔۔احمد سے کہنا کبھی بیگم کو لے کر نہ جاۓ وہاں ۔۔۔دائی حمیدہ نے اماں کو سمجھاتے ہوۓ کہا۔۔۔۔۔ارے یہی تو سمجھاتی رہتی ہوں لیکن یہ ڈاکٹر سجاد کیا کم تھا کہ اس کی بیوی نے غریب بے اولاد جوڑوں کی مالی امداد کے لیۓ NGO کھول رکھا ہے۔۔۔۔۔۔اماں کو اس ڈاکٹر پر شدید غصہ تھا۔۔۔۔۔۔ پھر اماں کو جیسے کچھ یاد آگیا ۔۔۔۔۔ارے ہاں وہ جو تم سکینہ کی بہو کا علاج کر رہی تھی کیا بنا اس کا ۔۔۔۔کچھ ہوا۔۔۔۔۔ ارے نہیں۔۔۔۔بد نصیب بانجھ نکلی ۔۔۔۔۔۔ لیکن سکینہ بہت خوش ہے اور کیوں نہ ہو اس کے شادی شدہ بیٹے کی کم عمر امیر لڑکی سے شادی کروادی میں نے ۔۔۔۔۔دائی حمیدہ اپنے کارنامے پر خوش تھیں۔۔۔۔۔ اچھا جلدی سے بہو کو بلاؤ مجھے دیر ہورہی ہے۔۔۔۔۔

اماں کا موڈ خلاف معمول اچھا تھا ۔۔۔۔۔۔عالیہ بیٹا میں تمہارا دکھ سمجھ سکتی ہوں ۔۔۔۔ایسا کرو کچھ دن ماں کے گھر گزار آؤ۔۔۔۔ کافی عرصے سے نہیں گئی ۔۔۔۔۔ تھوڑی طبیعت بھی بہتر ہو جاۓ گی۔۔۔۔۔اماٖں نے اس کا ماتھا چوم کر کہا۔۔۔۔ دس پندرہ دن میں واپس آجانا ۔۔۔تجھے پتا ہے میرا دل نہیں لگتا تیرے بغیر۔۔۔اسی لیۓتو پہلے نہیں جانے دیتی تھی۔۔۔۔ عالیہ کی خوشی سے مسکراتی آنکھوں نے شکریہ کا آنسو گرایا۔۔۔

پورے دس دن بعدوہ خوشی خوشی گھر میں داخل ہوئی اس کے ہاتھ میں رپورٹ تھی جس کے مطابق اس میں کوئی مسئلہ نہیں تھا اور وہ ماں بننے کی صلاحیت رکھتی تھی۔۔۔۔۔۔لیکن گھر کے اندر منظر اور تھا۔۔۔۔ ایک کم عمر لڑکی دلہن کے روپ میں تھی ۔۔۔۔۔۔احمد نے نظریں چرائیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تم کمرے سے اپنا سامان لے سکتی ہو۔۔۔۔

اپنے کمرے سے پرانی یادوں کو سمیٹتے ہوۓ عالیہ کی نظر ردی کی ٹوکری پہ پڑی اس کی پرانی تصویر کے ساتھ ایک مسلا ہوا لفافہ تھا۔۔۔۔عالیہ نے اپنی کوئی پرانی یاد سمجھ کر کھولا۔۔۔۔کچھ دیرتک وہ بے یقینی کے عالم میں ہونقوں کی طرح لفافے کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔احمد کی رپورٹ تھی جس کے مطابق وہ بانجھ تھا۔۔۔۔۔۔۔۔

Reviews & Comments

before understanding the treatment we must make the patient ready to understand what to do that's why I wrote this story. Our society and mostly we are the hurdles for ourselves ,we have to change our mind set.
By: azra faiz, wah on Apr, 14 2019
Reply Reply
0 Like
Yes, I do believe but who would change the society. We must become a first drop of a rain , at least change can take a path within us and inshaAllah the voice would spread around.
By: azra faiz, wah on Apr, 11 2019
Reply Reply
0 Like
you should write a better detail information about (Banjpan) and give information about that not story...........
By: khurshid ahmad, Fateh Jang on Apr, 10 2019
Reply Reply
1 Like
This is an unfortunate that our society is still "man dominated society" due to lack of education. there is no concern to the medical reports whether of man or of his wife. Man is always superior.
I have a personal experience that one of our colleagues was unable to produce children but he did 3 marriages asking that his wives contain medical defect to produce child. Ultimately he is still single having no child from all three wives.
By: Syed Zahid Hussain, Gujrat Pakistan on Apr, 10 2019
Reply Reply
0 Like
Language: