اے جذ بہ محبت۔۔۔۔۔۔۔(پارٹ اول)

(Naila Rani, Lahore)

محبت ایک ایسا جذبہ۔۔۔۔جسمیں فقط جل کر گلزار بننا ہوتا ہے۔۔۔۔ایک ایسا بھٹا ہے جسمیں جذبات۔۔۔۔سلگ کر گلاب کی مانند کھل اٹھتے ہیں لوگ کہتے ہیں کہ محبت امر ہو جاتی ہے۔نہیں نہیں ۔۔۔۔یہ ہر گز امر نہیں ہوتی۔۔۔۔بلکہ یہ تو منزل تک پہنچنے کاایک راستہ ہے۔۔۔۔ایک ایسی تڑپ ہے۔۔۔۔جسمیں گھائل ہو ہو کر ۔۔۔۔انسا ن نا یاب ہوتا ہے۔۔۔۔سنا ہے کہ محبت فقط ایک جذبہ ہے۔۔۔۔تو سن لو لوگو۔۔۔۔محبت تو وجود و تخیل کا حسین امتزاج ہے۔۔۔۔جو کہ لفظوں کو بھی جذبہ حسن اور ایک ایسی تڑپ عطا کر دیتا ہے۔۔۔۔جسکے بعد محب کامیابی کے زینے چڑھتے چڑھتےآسمان کو چھونے لگتا ہے۔۔۔۔۔۔اور اسی دوران اسکا یقین بھی اتنا مضبوط اور بلند ہو جاتا ہے۔۔۔۔کہ وہ خدا تک رسا ئ حاصل کر لیتا ہے۔۔۔۔۔

محبت ایک ایسے ادب کا نام ہے۔۔۔۔جسمیں انسان محبت کے پنچھی کو دل کی آغوش میں قید کر کے۔۔۔۔۔غم کے نوالے کھلانے کو اعزاز سمجھتا ہے۔۔۔۔۔سنو۔۔۔۔۔۔محبت الٹ ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ہار جیت اور جیت ہار ہوتی ہے۔۔۔محبت میں شہید ہونے والے کو غازی کہا جاتا ہے۔۔۔۔۔اور غازی کو سونے کے نوالے ملتے ہیں ۔۔۔۔اہل وفا تو جانتے ہیں کیوں؟؟؟یہ ایک خاموش تماشا ہوتا ہے۔۔۔۔دو دلوں کے درمیان اک بے چینی کا شور ہوتا ہے۔۔۔۔بس محبت ایک ایسا جذبہ ۔۔۔۔ جومٹ کر بھی مٹ نہیں سکتا۔۔۔۔جو جھک کر بھی جھک نہیں سکتا۔۔۔۔۔محبت ایک تمنا ہے۔۔۔محبت ایک ارمان بھی ہوتا ہے۔۔۔۔۔محبت راحت بھی ہے۔۔۔۔۔اور محبت سے امن بھی قائم ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔غم کی انتہا بھی محبت۔۔۔۔۔اور خوشی کی نوید بھی محبت۔۔۔۔

محبت ایک وجہ ہےایک ایسی وجہ ہے جسکی تلاش میں نکل کر انسان منزل تک جا پہنچتا ہے۔۔۔۔محبت ایک مقصد ہے۔۔۔۔محبت وحشت بھی ہوتی ہے اور۔۔۔۔۔محبت کو اماوس بھی کہتے ہیں۔۔۔۔۔آجکل کچھ لوگوں کی نظر میں کوئ اوقات نہیں ہوتی۔۔۔۔مگر۔۔۔۔پھر بھی یہ باوقعت ہوتی ہے۔۔۔۔محبت جب دل کی دہلیز پر قدم رکھتی ہے۔۔۔۔جذبے پھول برساتے ہیں۔۔۔۔۔آہیں جھک جھک ملتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔آنسو چھلک چھلک جاتے ہیں۔۔۔۔محبت خاموش بھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔محبت احساس بھی ہوتا ہے۔۔۔۔جو بہت ہی نایاب ہوتا ہے۔۔۔۔محبت انمول ہوتی ہے۔۔۔۔۔محبت دل میں بستی ہے۔۔۔۔۔جسکے اثر سے عقل پر تالے لگتے ہیں ۔۔۔۔اور ذہن بس کھل سے جاتے ہیں۔۔۔۔۔

محبت ایک گل و گلزار کا حسین و جمیل باغ ہے ۔۔۔۔۔جس میں محبوب و محبوبہ تخت پر سر پہ تاج سجائے بیٹھے ہیں۔۔۔۔۔محبت ذات بی ہوتی ہے۔۔۔۔اسی لئے بندہ محبت میں سب ذاتیں بھول کر۔۔۔۔۔بس ذات محبت کو اپنا لیتا ہے۔۔۔۔۔پھر وہ بس ایک ہی دھن میں رہتا ہے۔۔۔۔۔اور کہتا جاتا ہے ۔۔۔۔۔کہ۔۔۔۔محبت تو خدا کی آغوش کے جیسی ہے۔۔۔۔۔۔محبت ماں کی ممتا میں بھی ہوتی ہے۔۔۔ اور باپ کی شفقت کو بھی محبت کہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔محبت سے دل میں رعنا ئیاں اور جذبوں میں شہنا ئیاں سی کیوں بجتی رہتی ہیں۔۔۔۔محبت راگنی کیطرح ۔۔۔۔۔۔محبت بانسری کی طرح۔۔۔۔۔۔ جاری ہے
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 104 Articles with 110914 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
31 Oct, 2019 Views: 452

Comments

آپ کی رائے