کوے..... ہمارا معاشرتی اور عدالتی نظام....؟

(RIAZ HUSSAIN, Chichawatni)
جب عدالت کسی کوے کو سزائے موت سناتی ہے تو سیکورٹی پر مامور کوے اس مجرم پر حملہ آور ہوتے ہیں اور چونج مار مار کر اس کو قتل کر دیتے ہیں اس کے بعد ایک کوا اس کو اپنے چونج سے اٹھالیتا ہے

اللہ کریم نے انسانی معاشرہ قایم کرنے اور رکھنے کے لیے بہت سی نشانیاں بھی دے رکھی ہیں تاکہ انسان ان پر غور کرے اور بہتر انداز میں منظم اور ہمدردی کا پیکر بن کر انسانیت کا نمونہ بن جاے ایسی ایک تحقیقی مثال زیر تحریر ہے... سمجھنے اور سمجھانے کا انداز ہے باقی حقیقت رب کریم کی ذات بہتر جانتی ہے...
کووں کی عدالت:
حیوانات پر جدید تحقیق کے مطابق کووں کے ہاں باقاعدہ عدالتی نظام ہے اور یہ عدالت کسی کو فرد یا جماعت پر ظلم کرنے نہیں دیتی۔ کووں کے نظام عدالت میں ہر جرم کی مخصوص سزا ہے جیسے:
٭کووے کے بچے(چوزے) سے کھانا چھیننے کی سزا یہ ہے کہ کووں کا ایک گروپ اکھٹا ہو کر کھانا چھیننے والے کے پَر نوچتے ہیں یہاں تک کہ وہ بھی بچے کی طرح اڑ نہیں پاتا گویا ناک کے بدلے ناک اور کان کے بدلے کان کا اسلامی قانون نافذ ہے!!
٭اسی طرح گھونسلا خراب کرنے اس کو گرانے یا اس پر قبضہ کرنے کی سزا یہ ہے کہ کووں کی ایک جماعت مجرم کو وہ گھونسلا دوبارہ بنانے پر مجبور کرتی ہے یعنی بالکل اسلامی قانون ہے!!
٭کسی دوسرے کوے کی جوڑی(بیوی)کووے کے ساتھ غلط کاری یا ریپ کی سزا یہ ہے کہ کووں کی ایک جماعت مجرم کو چونج مار مار کر قتل کردیتی ہے!!
ماہرین کے مطابق کووں کی عدالت لہلہاتے کھیتوں اور کھلے میدانوں میں لگتی ہے یعنی کسی بند کمرے میں نہیں، مقررہ وقت پر کووے اکھٹے ہو جاتے ہیں اور جج بیٹھ جاتے ہیں ملزم کووے کو لایا جاتا ہے عدالتی کاروائی شروع ہوتی ہے تو ملزم کوا سر جھکائے پر پھیلائے انتہائی سیکورٹی میں عدالت کے سامنے پیش ہوتا ہے اور اپنے جرم کے اعتراف میں کائیں کائیں بند کر دیتا ہے یعنی خاموش رہتا ہے۔
جب عدالت کسی کوے کو سزائے موت سناتی ہے تو سیکورٹی پر مامور کوے اس مجرم پر حملہ آور ہوتے ہیں اور چونج مار مار کر اس کو قتل کر دیتے ہیں اس کے بعد ایک کوا اس کو اپنے چونج سے اٹھالیتا ہے اور اس کو دفنانے کے لیے لے جاتے ہیں پھر اس کے جسم کے برا بر قبر کھود کر اس کو دفناتے ہیں اورمکمل احترام سے اس پر مٹی ڈال کر دفناتے ہیں۔
یوں کووں کو اللہ کا عدل معلوم ہے اور انہوں نے اس کو نافذ کیا ہوا ہے مگر افسوس انسان پر جو اللہ کے قانون کی بجائے خودساختہ قوانین کے ذریعے حکومت کرتا ہے، اسی لیے اللہ نے فرمایا کہ "زمانے کی قسم انسان نقصان میں ہے"۔
کیا پاکستان جس کو کلمہ کے نام پر بنا یا گیا تھا کے با اثر لوگ کوے کے برابر عقل بھی نہیں رکھتے؟!حالانکہ کوا گندگی کھا کر بھی اتنا عقلمند ہے !! یہ لوگ آخر کیا کھاتے ہیں؟
اللہ کریم ہمیں اس تحقیق یا فرضی کہانی سے اپنا معاشی، معاشرتی اور عدالتی نظام بہتر کرنے کی توفیق عطا فرمائے ۔ آمین اور مجھے بھی اس پر عمل کرنے کی ہدایت نصیب فرمائے آمین ثم آمین
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 71 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: RIAZ HUSSAIN

Read More Articles by RIAZ HUSSAIN: 71 Articles with 31865 views »
Controller: Joint Forces Public School- Chichawatni. .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: