انٹرنیٹ آداب: ان قوانین پر عمل کریں ورنہ آپ کو جیل بھی جانا پڑ سکتا ہے

 
سستے اسمارٹ فونز اور قابل اعتماد وائی فائی نے پوری دنیا میں انٹرنیٹ کے استعمال کو وسیع کردیا ہے، لیکن صارفین کی پرائیوسی اور نفرت انگیز تقریروں اور غلط معلومات کے پھیلنے کے حوالے سے بھی کئی سوالات کو جنم دیا ہے۔ تاہم ان جرائم پر قابو پانے کے لیے مختلف ممالک کی جانب سے سائبر قوانین بھی متعارف کروائے گئے ہیں- انٹرنیٹ صارفین کو انٹرنیٹ کے استعمال کے دوران چند قوانین پر ضرور عمل کرنا چاہیے جو انہیں کسی بڑی مشکل سے بچا سکتے ہیں-
 
تصدیق ضروری ہے
انٹرنیٹ کی دنیا میں سب سے عام چیز جھوٹی خبریں ہیں- اب یہاں ہمارا رویہ یہ ہونا چاہیے کہ جب ہم کوئی بھی خبر کسی بھی انداز میں دیکھیں تو اس بات پر بھی ضرور نظر رکھیں کہ اس خبر کو شائع کرنے ذرائع کتنے مستند ہیں- غلط خبر کو بغیر تصدیق آگے شئیر کرنا بھی آپ کو مشکل میں ڈال سکتا ہے- یاد رکھیں انٹرنیٹ کی دنیا میں مختلف ویب سائٹس اور کمپنیاں اپنے مفاد کے لیے بھی جھوٹی خبریں پھیلاتی ہیں-
 
تاریخ پر نظر رکھیں
بعض اوقات سوشل میڈیا پر اچانک پرانی خبریں یا دیگر قسم کی پوسٹ بھی وائرل ہوجاتی ہیں جنہیں دیکھ کر ہم اس واقعے کو تازہ واقع سجمھنے لگتے ہیں اور اپنی معلومات میں غلط اضافہ کر بیٹھتے ہیں- اس لیے ضروری ہے کہ کسی بھی پوسٹ یا خبر کی تاریخ کو بھی ضرور مدنظر رکھا جائے-
 
پیغام کا انداز
جب آپ کسی سے آمنے سامنے سے بات کرتے ہیں تو سامنے والا شخص آپ جسمانی انداز سے بھی آپ کی بات یا آپ کا رویہ محسوس کر لیتا ہے- لیکن جب کسی کو ای میل یا ٹیکسٹ میسج کرتے ہیں تو اس میں یہ خاصیت موجود نہیں ہوتی- اس لیے انٹرنیٹ کے ذریعے کسی کو ٹیکسٹ پیغام ارسال کرتے ہوئے اس بات کو یقینی بنالیں کہ آپ کے پیغام سے کسی قسم کا طنز یا ناراضگی تو محسوس نہیں ہوتے- ورنہ آپ کسی بڑی مشکل میں گرفتار ہوسکتے ہیں-
 
نفرت انگیز مواد
سوشل میڈیا پر کسی بھی ایسی پوسٹ کو شئیر کرنے سے گریز کریں جن نفرت انگیز ہو یا پھر اس میں سے تعصب کی بو آتی ہو- آپ کی اس قسم کی پوسٹ فسادات کو ہوا دے سکتی ہے اس لیے یہ عمل سائبر کرائم کے زمرے میں آتا ہے- اور یقیناً یہ جرم آپ کو سلاخوں کے پیچھے بھی لے جاسکتا ہے-
 
بغیر اجازت تصاویر شئیر کرنا
کسی بھی فرد کی اس کی اجازت کے بغیر اس کی تصویر انٹرنیٹ کی دنیا میں شئیر کرنا اخلاقی اور قانونی طور پر جرم ہے- بالخصوص کسی کی ذاتی نوعیت کی تصاویر شئیر کرنا آپ کے لیے مصیبت بن سکتا ہے- انٹرنیٹ کی دنیا میں ایک ایک قدم پھونک کر رکھنے کی ضرورت ہوتی ہے- اس لیے بہتر یہی ہے کہ اپنی تصاویر بھی دیکھ بھال کر ہی شئیر کی جائیں-
 
کوئز پروگرام جعلی بھی ہوسکتا ہے
انٹرنیٹ پر اکثر ایسے کوئز پروگرام نظر آتے ہیں جو آسان اور دلچسپ سوالات پر مبنی ہوتے ہیں- جیسے آپ کیا بننا چاہتے ہیں یا پھر آپ کا کتا کس رنگ کا ہے وغیرہ- لیکن یاد رکھیں بعض اوقات ایسے پروگرام کا مقصد وہ نہیں ہوتا جو آپ سمجھ رہے ہیں- یہ ڈیٹا اکھٹا کرنے کا ایک طریقہ بھی ہوسکتا ہے جو مختلف کمپنیاں اپنے کاروباری مفاد کے لیے جمع کرتی ہیں-
Most Viewed (Last 30 Days | All Time)
10 Mar, 2021 Views: 1455

Comments

آپ کی رائے