امام حسین ؑ کا وصیت نامہ

(Shahid Raza, )
امام حسین ؑ نے مدینے سے مکہ روانگی کے وقت یہ وصیت نامہ تحریر فرمایا اور اپنی مہر لگانے کے بعد اسے محمد حنفیہ کے سپرد کر دیا :

’’بسم اﷲ الرحمن الرحیم۔یہ حسین ؑ ابن علی کی وصیت ہے اپنے بھائی محمد بن حنفیہ کے نام۔حسین ؑ گواہی دیتا ہے کے اﷲ کے سوا کوئی معبود نہیں اور نہ ہی اس کا کوئی شریک ہے اور محمد ؐ اﷲ کے بندے اور اس کے رسول ؐ ہیں جو اﷲ کی طرف سے دین حق لے کر آئے ہیں اور حسین ؑ یہ بھی گواہی دیتا ہے کہ جنت و دوزخ حق ہیں اور روز ِ جزا کے آنے میں کوئی شک نہیں ہے اور اس روز اﷲ یقیناً تمام اہل قبور کو زندہ کرے گا‘‘

اپنے اس وصیت نامہ میں امام ؑ نے توحید،نبوت اور قیامت کے بارے میں اپنا عقیدہ بیان کرنے کے بعد اپنے اس سفر کے مقاصد ان الفاظ میں بیان کئے:
’’مدینے سے میرا نکلنا نہ خود پسندی اور تفریح کی غرض سے ہے اور نہ فساد اور ظلم و ستم میرا مقصد ہے ، میں تو صرف اس لئے نکلا ہوں کہ اپنے نانا کی امت کی اصلاح کروں۔میں چاہتا ہوں امر بالمعروف و نہی عن المنکر کو انجام دوں اور یوں اس انجام دہی میں اپنے نانا اور اپنے والد گرامی کی پیروی کروں ۔اب اگر کوئی میری دعوت کو حق سمجھ کر قبول کرے تو اس نے اﷲ کا راستہ اختیار کیا اور اگر کوئی میری دعوت کو مسترد کر دے تو میں صبر کروں گا یہاں تک کے اﷲ میرے اور ان کے درمیان فیصلہ کرے اور اﷲ ہی بہترین فیصلہ کرنے والا ہے اے برادر یہی آپ کے لئے میری وصیت ہے اور میری توفیقات تو صرف اﷲ کی جانب سے ہیں اسی پر میرا بھروسہ ہے اور اسی کی جانب مجھ کو پلٹنا ہے۔

یہ امام حسین ؑ کی وصیت ہے جس میں امام ؑ نے بار بار کہا میں جنگ کے لئے نہیں جا رہا میں اصلاح کے لئے جا رہا ہوں اپنے نانا کا دین بچانے جا رہا ہوں میرا مقصد جنگ ہوتا تو اپنے ساتھ ماں بہنوں کو نہ لے جاتا،۶ ماہ کے اصغر کو نہ لے جاتا،۱۸ سال کے اکبر ؑ کو نہ لے جاتا ،اپنی پیاری بیٹی سکینہ ؑ کو نہ لے جاتا،اپنی بہن زینب کو نہ لے جاتا،اپنے چاہنے والے اصحاب کو قربان نہ کرتا،یزید حلال کو حرام کر رہا تھا ،حرام کو حلال کر رہا تھا میں ہادی ہوں رسول ؐ کا وارث ہوں مجھ پر واجب ہے کے میں دین میں حلال کو حلال بتاؤں حرام کو حرام بتاؤں ۔اے اﷲ کربلاء والوں کی قربانی قبول فرما۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shahid Raza

Read More Articles by Shahid Raza: 162 Articles with 151966 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
24 Sep, 2016 Views: 1180

Comments

آپ کی رائے
muhtarm shahid raza scholar sahab,

aap maire arz shahid samajh nahi sakay ya phir mai samjha nahi saka. sayyaduna hussain radhiAllaahu anhu aik sahabi-e-rasool hain. is ka matlab hai un ka ya hawaalah later on hadeeth ki kutub mai hona zuroori hai. hadeeth ki kutub maslan bukhari, muslim, abi dawud, tirmidhi, ibn maja, sunan nasaai, sunan darimi, musannaf ibn abi shaybah waghera hain.

goya itna aham unwaan ye'ni 'imaam hussain ka waseat naama' hai. aur ye ho he nahi sakta k ye batein un ahadeeth ki kitaabon mai reh gai hon. is liye aap in ahadeeth ki kitaabon se is ka hawaala aur sanad pesh karein.

jab k is kay muqabile mai aap ne jo kutub k naam pesh kiya hain maslan maqtal khuarzami agar is k mussanif muhammad ibn mosa al-khuarzami hain tu un ka intaqaal 850 mai howa. goya aap buhut ba'd k mussanafeen k hawaalay de rahay hain.

hamara issue sirf itna hai k haq khul kar aur waze ho kar ajae.

jazakAllahu khyran.
By: manhaj-as-salaf, Peshawar on Oct, 02 2016
Reply Reply
1 Like
SubhanAllah Nawasaye rasool....Qaiyamat tk anay wali naslo k liye ek esa azeem e haq paigham k us ki misal dhondny se bhi nhi milti...esi jurrat e jawan mardi k jo haq k liye ghardan ka nazrana pesh krny mai namaz ko tarjeeh dei or sajday mai sir kta dei...SubhanAllah hum un ki tarah dhool barabar bhi nhi kr saktay....but hum un k naqsh e qadam pe chal kr un ki batai hoi baato pe amal kr k un jesa tu nhi pr un k Qafaly mai tu shamil ho saktay hei Qiyamat k din un shifaat tu hasil kr saktay he...Ameen
By: muhammad shakir, Karachi on Sep, 29 2016
Reply Reply
0 Like
Book Reference of this article:
Muqtal Khuwazami jild 1 page 188
Maqtal awalum Page 54
Hussain abn Ali (Mohammad Sadiq Najmi)Page 55
By: Shahid Raza, Karachi on Sep, 26 2016
Reply Reply
0 Like
shahid raza sahab, is waseeat naamay ka hawaala bhi paish karain.

yaad rakhne ki baat ye hai k koi amal, baat, qoal hawaalay k bagher aur phir sanad k bagher nahi hota. aur sanad par ye daikha jaata hai woh sanad k hisaab se saheeh, dhaeef, hasan, mangharat waghera kis darja ka hai.

bahar haal, aap ki zimma is qoal ka hawaala tu kam az kam hai he.
By: manhaj-as-salaf, Peshawar on Sep, 25 2016
Reply Reply
1 Like
Salam un alikum app kay mashware ka shukreya.main jitnay bhi artcles Islami likhta hoon tamam ko bohat ahteyat kay sath likhta hoon ilme Rejal ki nazer say bhi dekhta hoon zaeef rawayat nahi likhta.
awr is waseat namay ko in kitabon say lia gaya hai:
1)Maqtal Khuarzami Jild 1,Page no:188
2)Maqtal Awalam Page 54
3)Hussain ibn e Ali (Madina ta Karbala)Page 55 Writer(Mohammad Sadiq Najami)
By: Shahid Raza (Islamic scholar), Karachi on Sep, 26 2016
0 Like

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ