لوگ اکثر پُوچھتے ہیں مُجھ سے میں شاعر کیسے بنا

(Mohammed Masood, Nottingham)
جو نظموں میں جھلکتا ہے اُسی مسعود سے تم مِل لو تم

محمد مسعود میڈوز نوٹنگھم یو کے

کبھی کبھی لوگ اکثر پُوچھتے ہیں مُجھ سے میں شاعر کیسے بنا ہو تو پڑ جاتا ہوں گہری سوچ میں سمجھا نہیں سکتا زندگی اور جنون کے تنگ رستوں پر اُنہیں لے جا نہیں سکتا جزیرے کی فصیلیں ڈھا نہیں سکتا وہ اندر جا نہیں سکتے اور میں باہر آنہیں سکتا مگر جی چاہتا ہے پُوچھنے والوں سے یہ پُوچھوں کبھی تنہائی کا کربِ مسلسل تم نے جَھیلا ہے کیا بنا کر سوچ کو نِشتر کبھی یادوں سے کھیلا ہے کیا سجایا شب کی خِلوت میں کبھی زخموں کا میلہ ہے کیا کبھی گَنے کی طرح پیلنے میں خود کو پَیلا ہے کیا اکیلے میں کبھی خود سے مسلسل گُفتگو کی ہے آپ نے نَمی اشکوں کی چائے میں کبھی گھولی کبھی پی ہے آپ نے کبھی چَرکا لگا جس ہاتھ سے، اُس کو دُعا دی ہے آپ نے بشاشت کی سجیلی اوڑھنی پھاڑی کبھی سِی ہے آپ نے خزاں رُت کی اُداسی ،دل کے آنگن میں اُتاری ہے کبھی کبھی جیتی ھوئی بازی لبِ خنداں سے ہاری ہے کبھی چاہت سے کی سوزِ نہاں کی آبیاری ہے تنہائی عُمر کی اپنے گلے لگ کر گُزاری ہے کبھی کبھی غم پر درد کے چہرے بنائے ہیں آپ نے کبھی تیرہ شبوں میں شعر لکھ کر گُنگنائے ہیں آپ نے کبھی لہجوں نے لفظوں نے تمہیں چرکے لگائے ہیں آپ نے کبھی کترا کے گُزرے تم سے اپنے اور پرائے ہیں کبھی یادوں کی بکھری کرچیاں رو کر چُنیں تم نے کبھی جنگل میں زخمی کُونج کی چیخیں سُنیں تم نے کبھی جاڑے کی شب میں آس کی شالیں بُنیں تم نے کبھی جی جی کہا پیہم سُنی گر چہ نہیں تم نے کبھی گھنٹوں تلک کھڑکی سے باہر بے سبب دیکھا ہے آپ نے کبھی نرمی ہواوں کی کبھی غیظ و غضب دیکھا ہے آپ نے کبھی سینے میں اِک زخمی پرندہ جاں بلب دیکھا ہے کبھی آپ نے کبھی دل کو تھپکتا والہانہ دستِ ربّ دیکھا ہے آپ نے اگر تُم پر نہیں گُزرے یہ موسم دل فگاری کے کبھی نہیں برسے تمہارے گھر میں ساون اشک باری کے کبھی مواقع تم کو حاصل ہیں جہاں میں شہر یاری کے تو تم کیسے سمجھ پاؤ گے دُکھ بے اختیاری کے سو مت پُوچھا کرو کہ شاعر کیوں کر بنا ہوں میں جو چاہوں بھی تو لفظوں میں تمہیں سمجھا نہیں سکتا کبھی بھی جو دل سہتا ہے روز و شب اسے دہرا نہیں سکتا میں ہُمکتے درد کا چہرہ تمہیں دکھلا نہیں سکتا میں جو نظموں میں جھلکتا ہے اُسی مسعود سے تم مِل لو
جو اس کے پار ہے اُس سے تمہیں ملوا نہیں سکتا میں کبھی نہیں ملوا سکتا

آپکی دُعاؤں کا طلبگار محمد مسعود میڈوز نوٹنگھم یو کے
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mohammed Masood

Read More Articles by Mohammed Masood: 58 Articles with 97346 views »
محمد مسعود اپنی دکھ سوکھ کی کہانی سنا رہا ہے

.. View More
26 Oct, 2016 Views: 473

Comments

آپ کی رائے