سوشل میڈیا کے فوائد یا نقصانات

(Maryam Arif, Karachi)
تحریر: نور بخاری
یہ سوشل میڈیا کا دور ہے۔ جس وجہ سے یہ دنیا گلوبل ویلج بن چکی۔میڈیا نے جوانوں اور بچوں کو جہاں بہت مصروف کر دیا ہے۔وہاں بہت سی منفی سرگرمیاں بھی زور وشور سے جاری ہو چکی ہیں۔ جسمانی ورزش والے کھیل تقریبا ختم ہوتے جارہے ہیں۔ ہر بچہ اور بڑا موبائل ، لیپ ٹاپ یا کمپیوٹر پر مصروف نظر آتا ہے۔ یا تو نئے نئے لوگوں سے دوستی کی جارہی ہوتی اور کچھ نہیں تو گیمز کھیل کر وقت کا ضیاع کیا جا رہا ہوتا۔ واٹس ایپ، فیس بک، ٹویٹر، یاہو اور جی میل وغیرہ سوشل میڈیا میں اپنی خاص اہمیت رکھتے۔ ان کے ذریعے روز نئے سے نئے دوست بنائے جاتے۔ بسااوقات تو ایک دوسرے کو متاثر کرنے کے لیے جھوٹ کثرت سے بولا جاتا۔

اگر ایک اور منفی سرگرمی کا تذکرہ کروں تو غلط نہ ہو گا۔ وہ یہ کہ نوجوان لڑکے اور لڑکیاں آپس میں دوستی کرتے تو ان میں زیادہ تر فراڈ ہی ہوتا۔ تقریبا ہر مسینجر پر فیک آئی ڈیز کی بھر مار ہے۔ اگر سوشل میڈیا طلبہ و طالبات کو پڑھائی میں بہت مدد دے رہا تو دوسری طرف نوآموز ذہنوں کو پراگندہ کرنے میں بھی کم نہیں معصوم ذہنوں کو گمراہی کے رستے پر لے کر جانے کے لیے طرح طرح کے جال بچھائے انسانیت کے دشمن ہر ہتھکنڈہ لیے بیٹھیں ہیں۔ میں سوشل میڈیا کے خلاف نہیں بلکہ انسانی روپ اوڑھے بھیڑیوں سے خائف ہوں۔ سوشل میڈیا کے اس طرح دن دگنی اور رات چگنی ترقی کے باعث والدین پر دوہری ذمہ داری عائد ہوتی کہ وہ بھی بچوں کی تربیت میں نمایاں کارکردگی دیکھائیں۔

اپنے بچوں کو گناہوں کی دلدل میں مت پھنسنے دیں۔ ایک بات کہ اپنے بچوں کے روز کے معمول پر دیکھیں اور سوشل میڈیا سے متعلق غیر ضروری روک ٹوک کے بجائے انہیں بہتر اور اچھے انداز میں استعمال کا طریقہ بتائیں۔ ان کے ساتھ دوستانہ رویہ رکھیں تاکہ وہ اپنے تمام معمولات سے آپ کو آگاہ رکھیں۔ یاد رکھیں بلاوجہ کی روک ٹوک اور غیر ضروری سختی آپ کے بچوں کی باغیانہ سوچ کو پروان چڑھاتی ہے۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Maryam Arif

Read More Articles by Maryam Arif: 1226 Articles with 497996 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
16 Nov, 2016 Views: 499

Comments

آپ کی رائے