پشاور میں دو روزہ ثقافتی نمائش

(Waqar Ahmad, )

پشاور چونکہ ماضی کا پشاو رنہ رہ سکا اس لئے اب یہاں تہذیب وثقافت کی باتیں خشک معلوم ہوتی ہیں ،جہاں پشاور ماضی میں شاندار روایات کا امین کہلاتا تھا وہاں اسے پھولوں کا شہر کے لقب سے پکارا جاتا رہا،مگر وقت کی دھول پشاو رتو پشاور ساتھ اس کے باشندوں میں پائے جانے والے خلوص ومحبت،امن وبھائی چارے کو بھی دھندلا سا کرچکی ہے۔اب خال خال ہی یا پھر کہیں کہیں وہ محفلیں،مجلسیں ،بیٹھکیں سجی نظرآئیں گے ،پشاور کا باسی شایدہر گز نہیں چاہتا کہ اسے پشاور ی کے نام سے پکاراجائے ،بہرحال دیگر مسائل کے حل کی طرح ایک عرصہ سے پشاور کے لوگ کسی تفریح کے منتظر تھے جسے صوبائی حکومت نے محکمہ ثقافت کے ساتھ مل کر گزشتہ رو ز صوبائی دارالحکومت میں ایک شاندار دورروزہ نمائش منعقد کرواکے یہاں کے باشندوں کوتفریح مہیاکرنے کی کوشش کی۔نمائش آٹے میں نمک برابر ہی سہی کئی حوالوں سے بہتر تھی اورنہیں بھی۔یہاں نمائش کے انعقاد کو قابل تحسین اقدام اس لئے کہا جاسکتاہے کہ نمائش سے پشاورکے مخصوص لوگوں کو سستی تفریح کے ساتھ ساتھ صوبہ بھر کی ثقافت سے روشناس کرانے میں خاطر خواہ حد تک مدد مل سکی۔اس کے علاوہ ایک ہی چھت تلے صوبہ بھر میں ہاتھ سے بننے والی چیزیں کہ جن گھریلو دستکاری،زیور ات،لذیذ کھانے،دوائیاں ،جوتے وغیرہ شامل تھیں،دیکھنے اور خریدنے کا موقع ملا۔یوں مقامی خواتین کو دیگر شہروں کی خواتین کے وسائل مسائل سے بھی آگاہی مل گئی،یہاں یہ امر قابل ذکرہے کہ پہاڑی یا دوردراز علاقوں کی خواتین کا ملکی معیشت میں کتنا کردار شامل ہے،جو اپنے گھروں میں بیٹھ کر انتہائی کم میں پڑے کروڑوں کے ہیرے کی مانند ہیں جنہیں جوہری پرکھ اور تراش کر جب دنیا کے سامنے لاتاہے تب اس ہیرے کی مانگ میں اضافہ دیکھنے کوملتاہے۔ہرچند کہ کہیں کہیں بے چاریاں مناسب مواقع نہ ملنے پر ہنر کے ہوتے ہوئے بھی گمنامی کی زندگی بسر کرنے پر مجبور ہوتی ہیں۔اس پرمزید سراسراناانصافی جب ان کی بنائی ہوئی چیزوں کو ایسی نمائشوں کی نذر کر دیاجاتاہے کہ جہاں چڑیا بھی دیکھ سمجھ کر پَر مارنے کی کوشش کرتی ہے۔کیونکہ حالیہ منعقد کی جانے والی دوروزہ نمائش پشاور کی ایسی جگہ پر منعقد کی گئی جہاں مقامی اور عام خواتین شاید سالوں میں بھی نہ جاتی ہوں۔اس کے برعکس اگر نمائش کا جناح پارک میں انتظام کیاجاتا تو شاید نمائش ،نمائش لگتی۔پشاورکی مقامی خواتین زیادہ سے زیادہ شریک ہوتیں،فوڈز سٹالز لگائے جاتے ،بچوں کے لئے تفریحی مواقع میسر آتے،دنیا کو امن کا پیغام دیا جاتا۔زیادہ سے زیادہ فیملیز شریک ہوتیں،نمائش کے دورس نتائج برآمد ہوتے مگر ایسا کچھ بھی نہیں کیا گیا۔پشاورکے مقامی شادی ہال میں نمائش کے انعقاد سے اس کی اہمیت کا خاتمہ کردیاگیا۔ماناکہ موجودہ صورتحال کو مدنظر رکھ کر کسی بڑے سانحے سے بچنے کے لئے ایسا اقدام نہیں اٹھایا لیکن ان تمام باتوں کو مدنظر رکھنا ضروری ہوگا جس سے نمائش کے مثبت اثرات دیکھنے کوملتے۔جیسے پشاور کے وسط میں واقع تاریخی جگہ تحصیل گورگھٹڑی کسی بھی قسم کی نمائش کے لئے انتہائی موضوع جگہ ہے ،جہاں کھلے میدان،سرسبز وشاداب باغیچوں کے علاوہ تہذیبی وثقافتی رنگ نمایاں نظرآتے ہیں۔ایسی جگہوں میں نمائش کے انعقاد سے محکمہ ثقافت ایک تیرسے دوشکار کرلیتا۔اوریوں ثقافتی نمائش کے ساتھ ساتھ تحصیل گورگھٹڑی کی تاریخی وثقافتی اہمیت سے آنے والوں کو اچھی خاصی جانکاری بھی حاصل ہوجاتی۔اور سب سے بڑھ کر کسی بھی بڑے سانحے سے بچنے میں مدد مل جاتی،کیونکہ یہ سب کے علم میں ہے کہ پشاور کے مشہور بازارجہاں خواتین کا ہروقت رش رہتاہے ان میں مینا بازار،شاہین بازاراور اسی کے ساتھ کوچی بازار شامل ہیں بھی تحصیل گورگھٹڑی کے بالکل نزدیک پڑتے ہیں۔اس پر سونے پہ سہاگہ کہ مقامی تاجر دیگر شہروں سے آئی ہوئی مہمان خواتین کی مصنوعات میں اچھی خاصی دلچسپی لیتے اور یوں مہمان خواتین کی محنت سفل ہوجاتی۔گورگھٹڑی میں خواتین کے رش اورمصنوعات میں دلچسپی کو مدنظر رکھتے ہوئے مقامی تاجر زیادہ سے گھریلو دستکاریوں کو ترجیح دینے لگ جاتے،ملکی مصنوعات کی مانگ بڑھ جاتیں،ملکی پیسہ ملک ہی میں خرچ ہوتا،دیرپا اورپائیدار زچیزوں کی خرید وفروخت میں ماضی کی طرح ایک بارپھر اضافہ دیکھنے کوملتا۔اوریوں معیشت کے پہیہ کو رواں دواں رہنے میں کسی بھی قسم کی دشواری کا سامنا نہ رہتا لیکن ایسا صرف سوچاجاسکتاہے۔صوبائی حکومت واقعی میں ثقافت کے انعقادمیں دلچسپی رکھتی تو باقاعدہ پلان شدہ منصوبے کے تحت ان جگہوں کا تعین کرتی جہاں سے عام خواتین تو ساتھ دنیا کو پاکستان کے علاقائی رنگ دکھائے جاسکتے ۔ایک طرف تاریخی ،تہذیبی اور ثقافتی قدروں کو پھر سے اجاگر کرنے کے راگ الاپے جارہے ہیں تود وسری جانب پی ایس فائنل کے جیسے شہر کے انتہائی پوش علاقے میں سیکیورٹی کے درمیان نمائش کروائی گئی کہ جس کے بارے میں عام خواتین کو کوئی جانکاری نہیں۔یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ حالیہ نمائش میں غیر ملکی بھی شریک ہوئے لیکن کیا تحصیل گورگھٹڑی میں کروانے سے وہاں غیر ملکیوں کو تاریخی عمارت کے ساتھ نمائش کے مزے بھی لوٹنے دیے جاسکتے تھے۔اس کے علاوہ غیر ملکی شہر کے اندر واقعی دیگر تاریخی عمارتوں کی سیر حاصل سیرکرلیتے ،مگر جناب ایسا کچھ بھی نہیں کیا گیا۔پشاور کے مقامی شادی ہال میں برگر فیملیز شریک ہوئیں ،جن کی تعداد آٹے میں نمک کے برابر تھی،حالانکہ باہر کسی دوسری جگہ نمائش کے انعقادسے اچھا خاصا ریونیو بھی حاصل کیا جاسکتاتھا،جیسے یہاں انٹری فیس سو روپے فی آدی رکھی گئی،اگر یہی فیس دس روپے ہوتی اور کسی مقامی جگہ کا تعین کیا جاتا تو ہزاروں خواتین کے شریک ہونے سے ریونیو لاکھوں میں ہوتا تو ساتھ دیگر شہروں سے آئی ہوئی خواتین کی مصنوعات کی فروخت میں اضافہ دیکھنے کوملتا۔اور تو اور مستقبل میں بھی اس جیسی نمائشیں منعقد کروانے کی عوامی ڈیمانڈکی جاتی۔بہرحال اب چڑیا کھیت چگ چکی ہیں،اب اس پر جتنی بھی بحث کی جائے کارگر ثابت نہیں ہوگی۔البتہ اس بارے آئندہ سوچا ضرور جاسکتاہے۔اس لئے ضرورت اس امرکی ہے کہ صوبائی حکومت بالعموم اور محکمہ ثقافت بلخصوص آئندہ کے لئے ایسی جگہ کا تعین کریں کہ جس سے پشاورکی عام خواتین زیادہ سے زیادہ مستفید ہوسکیں۔اگر تو صوبائی حکومت اور محکمہ واقعی میں اپنی ثقافت کی ترقی وترویج چاہتے ہیں،اپنی تاریخ وثقافت بارے دنیاکو پیغام دینا چاہتے ہیں،اور دنیا کو یہ بآور کرانا چاہتے ہیں کہ پشاور امن کا گہوارہ بن چکاہے ،بصورت دیگرایسی نمائشیں محدود سطح پر منعقد ہوتی رہیں گی اور جس کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔اور جس سے شدید متاثر دیگر شہروں سے آئی ہوئی ہنر مند خواتین ہونگی کہ جن کی مصنوعات بین الاقوامی سطح کی ہوتے ہوئے بھی مقامی ہی رہیں گی،اور یوں مقامی ہنرمند خواتین کا ہنر ماضی کی طرح زنگ آلود ہونے میں ذرا دیر نہیں کرے گا۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Waqar Ahmad

Read More Articles by Waqar Ahmad: 65 Articles with 25613 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
18 Mar, 2017 Views: 152

Comments

آپ کی رائے