کیا ہم انسانیت بھول بیٹھے

(Maryam Arif, Karachi)

مراسلہ: معصومہ ارشادسولنگی، میہڑ
وہ بڑے ہی جوش و خروش سے پورے محلے میں ہر ایک کو اپنے بھائی کے حفظ قران کا بتا کر خوشی سے پھولے نہیں سمارہی تھی۔ عبداﷲ کی آج تکمیل حفظ پر دستار بندی ہونی تھی۔ اس نے اس دن کے لیے بڑے پیار سے بھائی کے لیے ایک تحفہ بھی تیار کرکے رکھا ہوا تھا۔ ابھی وہ اس کی واپسی کے لیے نین بچھائے بیٹھی تھی کہ خبر پہنچی ’’مدرسے پر بمباری ہوگئی اور اس میں 101حافظ قرآن بچے اﷲ کو پیارے ہوگئے‘‘۔ چند ہی سانحوں میں ماں باپ اور بہن بھائیوں پر قیامت ڈھا دی گئی تھی۔خبر سننے کے بعد اسے پتا نہیں کہ وہ کہاں تھی۔ عائشہ کا بھائی اس دنیا سے چلا گیا تھا مگر اپنے پیچھے کئی سوال چھوڑ گیا تھا۔ آخر کب تک؟ کب تک مسلمانوں کا لہو یوں ہی بہتا رہے گا؟ آئے دن یہ پڑھنے کو ملتا ہے بھارتی فوجیون کے ہاتھوں 20 قتل کبھی نہتے فلسطینی مظاہرین پر اسرائیلی فائرنگ سے 15 شہید 1400 مسلمان زخمی، تو کبھی قندوز میں مسجد پر امریکی بمباری سے 150 شہید تو 500 سے زیادہ زخمی!!!آخری مسلمانوں کا یہ خون اتنا سستا کیوں ہوگیا ہے ان انسان دشمن درندوں کے لیے۔؟جہاں تک میرا خیال ہے یہ سب اس لیے ہے کہ ہم سب انسانیت کو بھول بیٹھے بھول بیٹھے ہیں وہ اسلامی بھائی چارہ جو آج سے 14 سو سال پہلے ہماری پیارے نبیﷺ نے قائم کیا تھا۔جو انسانیت کا درس دیتا ہے دوسرے مسلمان بھائی تکلیف پر دکھی کر دے اس کی مدد کے لیے اپنی جان و مال کی بھی پرواہ نہ کرے۔ مگر آج کے مسلمان نے خود کو بس اپنے تک ہی محدود کردیا ہے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Maryam Arif

Read More Articles by Maryam Arif: 1232 Articles with 503556 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
12 Apr, 2018 Views: 353

Comments

آپ کی رائے