کسی کو پیچھے مت چھوڑو

(Warisha Masood, )

"معذور افراد" یہ اصطلاح اکثر ایسے افراد کیلئے استعمال ہوتی ہے جو اپنے احساسات کی گہرائیوں اور بے حد احساسات اور خواہشات کے ساتھ رابطے میں ہوں یہ ایک مکمل طور پر کام کرنے والے انفرادی شخصیت کے مالک ہوتے ہیں جو مسلسل خود مختار ہونے کی کوشش کر تے ہیں جس میں جسمانی معذوری، حسی معذوری، عرفی معذوری، ناتوانی، ذہنی بیماری، اور مختلف اقسام کی دائمی بیماری بھی شامل ہے.
1992 ء میں اقوام متحدہ کے جنرل اسمبلی کی قرارداد 47/3 کی رو سے معذور افراد کے بین الاقوامی دن کا سالانہ دن ابتدائی طور پر منایا گیا تھا. اس کا مقصد ہے کہ معاشرے اور ترقی کے تمام شعبوں میں معذور افراد کے حقوق اور ان کے نفاذ کو فروغ دیا جائے اور سیاسی، سماجی، اقتصادی اور ثقافتی الغرض زندگی کے ہر پہلو میں معذور افراد کی صورت حال کے بارے میں بیداری بڑھانا ہے۔ اس سال کا مرکزی موضوع معذور افراد کو بااختیار بنانے کے لئے 2030 ایجنڈا پائیدار ترقی کے حصہ کے طور پر ایک جامع، منصفانہ اور پائیدار ترقی کے لئے بااختیار بنانے پر توجہ مرکوز کرنا ہے. 2030 ایجنڈا وعدہ کرتا ہے کہ "کسی کو پیچھے مت چھوڑو". معذور افراد، دونوں مفادات اور تبدیلی کے ایجنٹوں کے طور پر، عمل میں شامل اور پائیدار ترقی کی طرف سے عمل کو تیز کر سکتے ہیں اور محاصرہ کے خطرے میں کمی، انسانی عمل کے تناظر میں، اور شہری ترقی کے تناظر میں، سب کے لئے محرک معاشرہ کو فروغ دینے میں مدد کرسکتے ہیں. حکومتوں، معذور افراد اور ان کے نمائندہ تنظیموں، تعلیمی اداروں اور نجی شعبے کو مستقل ترقیاتی اہداف (ایسڈی جی) کو حاصل کرنے کے لئے "ٹیم" کے طور پر کام کرنے کی ضرورت ہے.

اس سال، اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل اس دن ایک فلیگ شپ رپورٹ شروع کرے گا، جس کا عنوان “UN Flagship Report on Disability and Development | 2018 – Realizing the SDGs by, for and with persons with disabilities” کے عنوان سے ہے. اقوام متحدہ کے ہیڈکوارٹر میں معذور افراد کے بین الاقوامی دن کے UNHQ کے پروگراموں میں شامل ہونے کے لۓ اراکین ریاستوں، اقوام متحدہ، میئرز، قومی اور مقامی پالیسی سازوں، سول سوسائٹی تنظیموں، تعلیمی اداروں اور معذور افراد کی تنظیمیں شامل ہوں گی تاکہ جامع، منصفانہ اور پائیدار ترقی کے لئے آگے بڑھنے کے بارے میں بات چیت ہو سکے۔

عالمی اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ دنیا کے 20 فیصد غریب افراد معذور ہیں۔ دنیا بھر میں کم از کم 10٪ آبادی، یا 650 ملین افراد، معذوری کے ساتھ رہتے ہیں. اسکول نہ جانے والے معذور بچوں کی شرح بہت متغیر ہے اور کچھ افریقی ممالک میں 65-85٪ کے درمیان ہے. معذور بچوں کے لئے موت کی شرح ایسے ممالک میں 80 فیصد ہوسکتی ہے جہاں پانچ سال سے کم عمر کی موت کی شرح میں کم از کم 20 فیصد کمی واقع ہوئی ہے. بہت سے کم آمدنی اور وسط کے نتائج والے ممالک میں صرف 5-15٪ ہے۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Warisha Masood

Read More Articles by Warisha Masood: 3 Articles with 1262 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
10 Dec, 2018 Views: 446

Comments

آپ کی رائے