بچوں سے جنسی زیادتی ایک عام رجحان بن گیا

(Raana Kanwal, )

 بچوں کے ساتھ بدسلوکی کے واقعات ایک سال کی بنیاد پر بڑھ رہے ہیں. ہر ایک، ایک غیر معمولی تعلیم یافتہ شخص سے لے کر ہر گندے ذھن کا شخص اس کاروبار میں حصے دار ہے. یہ مسئلہ نہ صرف تیسری دنیا ترقی پذیر ممالک میں بلکہ ترقی یافتہ ممالک میں بھی موجود ہے ۔یہ لوگ سماج سے اچھی طرح سے پوشیدہ ہیں اور قانون اور انوائمنٹ کے ریڈار کے تحت ان گندے کاموں کو چلاتے ہیں. دنیا بھر میں بہت سے معاملات میں، یہ دیکھا گیا ہے کہ زیادہ تر بچے اپنے پڑوسیوں سے محفوظ نہیں ہیں، یہاں تک کہ بیٹیاں بھی اپنے والد سے محفوظ نہیں ہے. تعلیمی پیشہ ور بھی ایک اہم کردار ادا کرتے ہیں کیونکہ وہ آسانی سے اچھے گریڈوں تک ترقی کے لیے بچوں کو اپنے ذاتی فائدہ اٹھانے کے لیے استعمال کرتے ھیں اور اگر بچہ ایسا کرنے سے انکار کردے تو وہ اپنے ممکنہ انداز میں بچے کی کیریئر کو تباہ کرنے کی کوشش کرتا ہے. یہ کام ایک ابھرتی ہوئی کاروباری یونٹ میں بدل گیا ہے جہاں کسی دوسرے شخص کو مقررہ قیمت پر فروخت کرنے کے لئے اغوا کیا جارہا ہے یا گندی ویڈیو بنائی جا رہی ہیں جو خاص طور پر ویب سائٹس کے مختلف وینڈرز پر فروخت کی جاتی ہیں۔

دنیا بھر میں بچوں کی جنسی زیادتی کا ایک عام رجحان بن گیا ہے اور افسوسناک طور پر، جنگل میں آگ کی طرح بڑھتی ہوئی ہے۔ ایک غیر سرکاری تنظیم کی طرف سے حال ہی میں شائع شدہ رپورٹ، سائل نے اس مسئلے کی ترقی پسند نوعیت کو ظاہر کرنے کے کچھ حقائق ظاہر کیے ھیں. رپورٹ کے مطابق 2018 میں مجموعی طور پر 3،832 بچوں کے بدعنوانی کے واقعات کی نشاندہی کی گئی ہے جس میں 2017 میں 3،445 ویں کی نشاندہی کی گئی ہے. اس رپورٹ میں واضح طور پر بتایا گیا ہے کہ مجموعی واقعات میں سے ایک، 55٪ صفر سے 5 سال اور 16 سے 18 سال کی عمر اور چھ سال کی عمر کے درمیان لڑکا 45 فیصد کم عمر کے بچے کی جنسی زیادتی سے انتہائی خطرناک ہے. اس مسئلے کی حد کا اندازہ کرنے کے لئے یہ کہنا بہت افسوس ہے کہ نہ صرف اجنبی ہیں بلکہ قریبی رشتہ دار اور اساتذہ اس گندی کارروائی کا بھی حصہ ہیں. یہ افراد صرف بچوں کو ان کی ذاتی خوشی کے لۓ نہ ہی استعمال کرتے ہیں بلکہ وہ آگے بڑھ جاتے ہیں۔ 2018 میں 92 مقدمات درج کیے گئے تھے جہاں متاثرہ افراد کے ساتھ جنسی زیادتی کے بعد متاثرین کو قتل کیا گیا تھا.

بچے کی ایذا رسانی کا معاملہ نہ صرف پاکستان بلکہ ترقی یافتہ ممالک بھی یکساں طور پر اس کاروبار میں تعاون کر رہے. ایک سالانہ بنیاد پر رپورٹ شدہ کیسوں کے ساتھ ساتھ مغربی ممالک میں ایک خطرناک شرح بڑھ رہی ہیں.

ایسے بچے جو اس بدسلوکی کی کارروائیوں سے گزرے ہیں ان کو اعلی درجے کے ڈپریشن، جرم کے مسائل بہت کچھ سہنا پڑتا ہے. اور جو بچے بد قسمتی سے بچ بھی جاتے ہیں تو انکی سوچ پر رہ جانے والے منفی اثرات کو ختم کرتا بہت ہ مشکل عمل ہے۔.

زندہ بچنے والے اکثر خود کو الزام لگاتے ہیں اور اپنے وجود سے نفرت کرتے ہیں، خود کے بارے میں منفی جذبات اور غلط پیغامات پھیلاتے ہیں تاکہ وہ اپنے آپ کو سوسائٹی سے کامیابی سے الگ کر سکیں۔

کشیدگی اور تشویش بھی بچپن جنسی بدسلوکی کے بڑے ضمنی اثرات میں سے ایک ہے بچپن کے جنسی زیادتی سے بچنے والوں کو اپنی باقی زندگیوں کے لئے تکلیف دہ حالت کا سامنا کرنا پڑتا ہے، دائمی تشویش، کشیدگی، تشویشی حملوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے-

جنسی تشدد والے بچوں کی صلاحیتوں کو فروغ دینا مشکل ہوتا ہے. اس گندے کام کے اثرات کسی طرح سےان کے ذہن میں آتے ہیں ان کے لئے میموری سے ان کو دور کرنا مشکل ہوتا ہے. اس کی وجہ سے ان کی سوچ اور سنجیدگی کی صلاحیتوں کو ایک عام شخص کی طرح تیار کرنے میں ناکامی ہوتی ہے. زندہ بچنے والے خود کو معاشرے کے چہرے پر داغ تصور کرتے ہیں وہ ذہنی طور پر اس قدر مفلوج ہو چکے ہوتے ہیں کے خود کو نقصان پھنچانے کی ہر ممکن کوشش کرتے ہیں.

اگر ہم ایسی مجرمانہ سرگرمیوں کو روکنے میں حکومتی کردار کو دیکھتے ہیں، تو ہمیں کوئی ثبوت نہیں ملتے ہیں جہاں حکومت سوسائٹی سے اس جرم کو ختم کرنے کے لیے کوئی خاطر خوا اقدام نہیں کر رہی۔ اعلی حکام اس مسئلے کی سنگینی کا اندازہ نہیں کر سکے اور اس کاروبار کے خلاف سخت قوانین اور مضبوط نظام بنانے میں ناکام رہے. یہ سماج کے بہترین مفاد میں ہے کہ حکومت کو قومی سطح پر مسئلے کے خلاف آواز بلند کرنے اور بچوں کے حقوق کی حفاظت کے لئے علیحدہ قومی ادارہ تشکیل دینا ضروری ہے۔ مائیکرو سطح پر، اس مسئلے کے بارے میں بیداری بڑھانے اور اس طرح کے گناہ کے خلاف سب کو یکجا ہو کر مضبوطی کے ساتھ کھڑے ہونے کی ضرورت ہے, اگر اس مسلے کو نہیں روکا گیا تو یہ ہماری نسلوں کو تباہ کرنے کا باعث بنتا چلا جائے گا۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Raana Kanwal

Read More Articles by Raana Kanwal: 50 Articles with 16098 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
25 Apr, 2019 Views: 643

Comments

آپ کی رائے