عورت " صنف نازک" آخر کب تک

(Romaiza khaliq, Karachi)

یہ کہنے پر ہمیں ہمارا معاشرہ یا ہمارا خاندان یہ ہماری خود کی سوچ مجبور کرتی ہے۔ کہ آج کی عورت غیر محفوظ ہے۔

آج کے دورے جدید میں جہاں ہر فرد آزاد اور خود مختار ہیں جہاں مرد اور عورت دونوں ہی کو یکساں مقام حاصل ہے لیکن یہ صرف ایک کتابی بات ہے حقیقت اس کے برعکس ہے۔

آج کی عورت جب گھر سے نکلتی ہے وہ چاہے مجبوری سے نکلے یا اپنے خواہش کے خاطر اسے بیشتر مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ایسا کیوں ہے؟

ہمارا ملک ایک اسلامی ریاست ہے جہاں عورت کو ایک اعلی مقام حاصل ہونا چاہیے وہاں عورت کی تذلیل کی جاتی ہے اسے بھروسے کے نام پر ہمیشہ دھوکے کا سامنا کرنا پڑتا ہے جس کی وجہ سے وہ اپنی اندر کی صلاحیتوں کو بروئے کار نہیں لا پاتی اور بہت سے مقامات پر ناکامی سے دوچار ہوتی ہے جس کی وجہ سے مرد اس پر حاوی ہوتا ہے حکومت کرتا ہے حالانکہ کے اسلام میں مرد اور عورت کو برابری کا درجہ دیا گیا ہے لیکن ہمارا معاشرہ اس بات کو تسلیم کرنے سے قاصر ہے آئے رنوں عورت پر ظلم و تشدد کے ان گنت واقعات ہماری سمعات سے گزرتے ہے اور ہم صرف سن کر اور اندر ہی اندر غم وغصے کا اظہار کرکے خاموش تماشائی کا کردار ادا کرتے ہیں لیکن اس کے برعکس اگر ہم اس ظلم و ستم کی روک تھام کے لئے کوئی اقدام اٹھائیں اور مل کر متحد ہو کر ان حالات کا سامنا کریں تو یقینا کوئی بہتر راستہ ڈھونڈ سکتے ہیں اور معاشرے میں باوقار طریقے سے زندگی گزار سکتے ہیں -

کسی بھی معاشرے کی بہتری کے لیے ضروری ہے کہ اپنی عورتوں کو اعلی تعلیم دیں تاکہ ان میں شعور بیدار ہو اور وہ خود کو جہالت کے دلدل سے نکال کر تعلیم جیسی پر فضا ماحول میں سکون کی سانس لے سکے اور وحشی درندوں سے خود کو محفوظ کرنے کی طاقت پیدا کر سکے۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Romaiza khaliq

Read More Articles by Romaiza khaliq: 3 Articles with 3060 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
10 May, 2019 Views: 307

Comments

آپ کی رائے