خون کا عطیہ

(Waraq Hussain, Karachi)

ہر انسان کے بدن میں تین بوتل اضافی خون کا ذخیرہ ہوتا ہے، ہر تندرست فرد، ہر تیسرے مہینے خون کی ایک بوتل عطیہ میں دے سکتا ہے۔ جس سے اس کی صحت پر مزید بہتر اثرات مرتب ہوتے ہیں اور اس کا کولیسٹرول بھی قابو میں رہتا ہے۔ تین ماہ کے اندر ہی نیا خون ذخیرے میں آ جاتا ہے، اس سلسلے میں ایک نظریہ یہ بھی ہے کہ نیا خون بننے کے ساتھ ساتھ بدن میں قوت مدافعت کے عمل کو بھی تحریک ملتی ہے۔ مشاہدہ ہے کہ جو صحت مند افراد ہر تیسرے ماہ خون کا عطیہ دیتے ہیں وہ نہ تو موٹاپے میں مبتلا ہوتے ہیں اور نہ انہیں جلد کوئی اور بیماری لاحق ہوتی ہے۔

کسی بھی ضرورت مند مریض کو خون عطیہ کرنا صدقہ جاریہ میں شمار ہوتا ہے۔ جبکہ کسی دوسرے مسلمان کی مدد سے الله تعالیٰ آپ کو ہر قسم کی آفات اور محرومیوں سے بچاتا ہے۔ قرآن پاک کی سورت المائدہ کی آیت 32 میں اللہ تعالیٰ نے ایک انسان کی جان بچانے کو پوری انسانیت کی جان بچانے کے مترادف قرار دیاہے۔خون عطیہ کرنے سے کسی ضرورت مند کی مدد اور ڈونرز کو روحانی سکون ملتا ہے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Waraq Hussain

Read More Articles by Waraq Hussain: 5 Articles with 1720 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
24 May, 2019 Views: 332

Comments

آپ کی رائے