اذان سحر۔۔۔۔۔۔!!!!

(Naila Rani, Lahore)

رہ گئ رسم اذاں روح بلا لی نہ رہی
فلسفہ رہ گیا تلقین غزالی نہ رہی

اے امت محمد یہ ﷺ تم میں سے ہے کو ئ بلال حبشی کا پیروکار ؟؟؟ جو یوں اذان سحر دے کہ آفتاب کی مجال نہ ہو ۔۔۔۔۔کہ اس آواز سحر سےپہلے طلوع ہو جائے۔۔۔۔۔اور چاند تاروں کی مجال نہ ہو ۔۔۔۔۔کہ اس صدائے عشق سے پہلے ڈوب جائیں۔۔۔۔۔جو اذان سحریوں دے کہ جیسے کوئ اپنے اللہ کے سامنے کھڑا اسکا ذکربلند کر رہا ہو۔۔۔۔۔جیسے کوئ اپنے رب سے ہمکلام ہو رہا ہو۔۔۔۔۔جو اذان سحر یوں دے کہ بیا با ن و صحرا تک سنائ دے۔۔۔۔۔جس صدائے عشق کا عرش والا بھی منتظر رہتا ہو ۔۔۔۔۔تم میں ہے کوئ محمد عربی ﷺ کا غلام؟؟؟؟۔۔۔۔انکو دیوانگی کی حد تک چاہنے والا ۔۔۔۔۔ہے کوئ بلال حبشی سا عاشق۔۔۔۔؟؟؟ جس کے عشق کا اثر اتنا شدید ہو کہ چودہ سو سال بعد بھی ایک شاعر اس کے عشق کو یوں بیان کرے

اقبال ! کس کے عشق کا یہ فیض عام ہے
رومی فنا ہوا حبشی کو دوام ہے

جس نے اذان سحر یوں دی کہ گردوں سے بھی بلند اسکا مقام ہوا۔۔۔۔۔۔۔بتاؤ تو۔۔۔۔۔۔۔کہاں ہے وہ عشق؟؟؟۔۔۔کہاں ہے وہ محبت؟؟؟۔۔۔کہاں گیا وہ شوق؟؟؟۔۔۔کہاں گئ وہ عقیدت؟؟؟۔۔۔اے اس دور کے مؤ ذن ۔۔۔۔!!!اے علماء اکرام۔۔۔۔!!!اے امام مسجد۔۔۔۔۔!!!اے اس دور کی امت۔۔۔۔۔!!!! اے مسلم امہ ۔۔۔۔۔۔!!!اے مسلمانو۔۔۔!!!!تم کو تو اللہ نے تمام مخلوقات پر حاکم بنایا ہے۔۔۔۔۔پھرتم آج محکوم کیوں ہو۔۔۔۔؟ ۔۔۔۔۔۔کیونکہ۔۔۔۔۔

قلب میں سوز نہیں روح میں احساس نہیں کچھ بھی پیغام محمدﷺ کا تمہیں پاس نہیں

اے بھٹکے ہوئے راہی۔۔۔۔۔۔سن۔۔۔۔۔تیری بقا بیداری میں ہے۔۔۔۔اور یہ وقت بیداری ہے۔۔۔۔اب غفلت کی چادر اتار کر پھینک دو۔۔۔۔اور ۔۔۔۔اب تم بیداری کا لبادہ اوڑھ لو۔۔۔۔کہ۔۔۔۔شب میں بیداری ہو یا صبح کی بیداری اب صرف اور صرف بیدارئ حیات سے ہی اس امت کی تقدیر بدلی جا سکتی ہے ۔۔۔۔مگر۔۔۔۔تم نے تو بھلا دیا ہے۔۔۔۔۔اپنے ہیروز کو۔۔۔۔اسلام کے ان چمکتے ستاروں کو۔۔۔۔جو اب کہیں تاریخ اسلام کی کتابوں میں دب کر رہ گئے ہیں ۔۔۔۔ہائے افسوس کہ تم اپنی تاریخ بھول چکے ہو۔۔۔۔۔تم اپنا ماضی بھلا چکے ہو۔۔۔۔اور ہمارے علماء کیوں غفلت کی نیند سوئے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔۔؟میرا سوال ہے انتہائ ادب کے ساتھ ان علمائے اکرام سے۔۔۔۔۔جو تمام دنیا سے کٹ کر چھپ کر ایک کو نے میں بیٹھے ہیں۔۔۔۔۔ اور سمجھ رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔اسطرح دشمن کی یلغار سے وہ محفوظ رہ سکتے ہیں ۔۔۔۔۔تو سنو۔۔۔۔۔اگر جنگل میں آگ لگ جائے۔۔۔۔۔۔اور اسے کنٹرول کرنے کی کوئ تد بیر اختیار نہ کی جائے۔۔۔۔۔۔تو وہ امن کی بستیوں کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیتی ہے۔۔۔۔۔۔اس لیے اس بھٹکی ہوئ قوم کوسیدھی راہ پر لے کر آنا۔۔۔۔۔۔حق اور سچ کے بارے میں آگاہ کرنا۔۔۔۔علمائے اکرام کا عین فرض ہے۔۔۔۔۔۔اے علمائے اکرام تم تو علم کے بڑے عہدوں پر فائز ہو۔۔۔۔۔پھر تمھارے اخلاق کہاں گئے۔۔۔۔؟؟؟خدارا اپنے اخلاق اور محبت سے اس کائینات کے ہر بھٹکے ہوئے راہی کے اندر اللہ کے سچے علم کی روح پھونک دو۔۔۔۔۔انہیں حقیقت پر یقین عطا کر دو۔۔۔۔کیونکہ۔۔۔۔

جب اس انگار خاکی میں ہوتا ہے یقین پیدا
تو کر لیتا ہے یہ بال و پر روح الا مین پیدا

اگر تم ایسا نہیں کرتے۔۔۔۔تو پھر حقیقت میں ایسے عالم علم سے بے بہرہ ہیں ۔۔۔۔۔ان کی مثال بلکل ایسی ہے ۔۔۔۔جیسے اندھوں نےچراغ اٹھائے ہوئے ہوں ۔۔۔۔۔اورجس کے کلام میں اثر نہ ہو۔۔۔۔جس کے علم سے دوسروں کو فائدہ نہ ہو۔۔۔۔وہ بے عمل عالم ہوتا ہے۔۔۔۔۔اور عمل کے بغیر تم نہ اس دنیا میں کوئ مقام حاصل کر سکتے ہو۔۔۔۔۔۔اور نہ ہی آخرت میں۔۔۔۔۔۔۔۔عمل ہی سے زندگی بنتی ہے۔۔۔۔۔۔جنت ہو یا جہنم۔۔۔۔۔اور یہ تمہاری ان ہی بے عملیوں کا نتیجہ ہے کہ آج۔۔۔۔۔

تیری نماز میں باقی جلال ہے نہ جمال
تیری اذاں میں نہیں ہے میری سحر کاپیام
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 104 Articles with 110732 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
31 Oct, 2019 Views: 284

Comments

آپ کی رائے