اے جذ بہ محبت۔۔۔۔۔۔۔(پارٹ دوم)

(Naila Rani, Lahore)

محبت خدا کا خیال ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔محبت عقیدت میں الہام ہوتی ہے۔۔۔۔۔محبت بامروت ہے۔۔۔۔اور بے مروت لوگوں پر اک ایسی رقت بن کر چھاتی ہے۔۔۔۔۔وہ بھی مان جاتے ہیں۔ کہ محبت دل کی دعا ہے۔۔۔۔۔محبت ہر وباومرض کی دوا ہے۔۔۔۔محبت علاج بھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔اور معالج بھی۔۔۔۔۔۔محبت یقین ہوتی ہے۔۔۔۔۔جسکی تخلیق پر بہاریں خوشیاں مناتی ہیں۔۔۔۔۔محبت اک آمد ہوتی ہے۔۔۔۔۔جسمیں محبوب کی حمد ہوتی ہے۔۔۔۔۔محبت الحمد بھی ہوتی ہے۔۔۔۔محبت بے تاب کرتی ہے۔۔۔۔محبت انسان کو مقدر تک ہاتھ پکڑ کر لے کر جاتی ہے۔۔۔۔۔پھر مقدر ہا تھ اٹھاتے ہیں۔۔۔۔۔محبت جذبوں کی زبان ہوتی ہے۔۔۔۔۔پھر زبان سے دعائیں مانگی جاتی ہیں۔۔۔۔۔جنکا اثر دل تک جاتا ہے۔۔۔۔۔اور روح میں گھل مل جاتا ہے۔۔۔۔۔جسکی خوشی میں وجود سارا کھل سا جاتا ہے۔۔۔۔۔محبت ہر ذی روح سے ہوجاتی ہے۔۔۔۔۔اور ہر ذی روح کو ہوتی ہے۔۔۔۔محبت امن کے موتی۔۔۔۔محبت آنسووں کی لڑیاں ۔۔۔۔۔محبت بہت ظالم ہوتی ہے۔۔۔۔۔دل میں اتر تو جاتی ہے۔۔۔۔مگر پھر ہونٹوں پر قفل کیوں لگاتی ہے۔۔۔۔۔؟؟؟؟محبت افلاک سے آتی ہے۔۔۔۔۔زمین کے باشنوں کو۔۔۔۔۔اخلاق سکھاتی ہے۔۔۔۔محبت درد بھی دیتی ہے۔۔۔۔جس سے آہیں نکلتی ہیں ۔۔۔۔اور پھر اک دن یہ آہیں ایک آہ اثر میں ڈھل جاتی ہیں ۔۔۔۔اور پھر اک یہ آہ اثر احساس دلا جاتی ہے۔۔۔۔۔محبت خمار ہوتی ہے۔۔۔محبت بے غرض ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔

محبت بے ربط ہوتی ہے۔۔۔۔۔محبت چاند کی مانند۔۔۔۔محبت آفتاب کی صورت۔۔۔۔۔محبت تاروں کا اک جھرمٹ۔۔۔۔۔۔محبت تصور ہوتی ہے۔۔۔۔محبت تصویر کی مانند ۔۔۔۔۔کیوں آنکھوں میں رہتی ہے۔۔۔۔۔؟؟؟محبت سسکیاں بن کر سب کچھ سہہ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔محبت خواب کی صورت۔۔۔۔محبت خیال کی مانند۔۔۔۔۔محبت قلب سمندر کا۔۔۔۔۔محبت دل ہے دھرتی کا۔۔۔۔۔محبت نام غلامی کا محبت کا کام عیاشی ہے۔۔۔۔محبت دلدار سے ہوتی ہے۔۔۔۔۔بس یہ تو اصل میں یار سے ہوتی ہے۔۔۔۔۔محبت بے حد ہوتی ہے۔۔۔۔۔محبت حد میں بھی ہوتی ہے۔۔۔۔۔جسے عقیدت کہتے ہیں ۔۔۔۔عقیدت پھر جب احترام میں ڈھلتی ہے۔۔۔۔۔تو پھر شائد محبت سے بھی جیت جاتی ہے۔۔۔۔۔محبت کا آغاز ازل۔۔۔۔اور محبت کا انجام ہے ابد۔۔۔۔۔۔محبت مصور کی صورت۔۔۔۔۔محبت اک بیابان صحرا۔۔۔۔جسمیں ریت کے ٹیلے ہیں ۔۔۔۔سارا ساون برس کر بھی اسکی پیاس نہیں بجھتی۔۔۔۔۔محبت اک ایسا زہر کا ساغر ہے۔۔۔۔۔جسکو پی کر بھی محب کا کچھ نہیں بگڑتا۔۔۔۔۔۔محبت آنسو بھی ہوتی ہے۔۔۔۔جو قطروں میں بہتی ہے۔۔۔۔۔یہ قطرے بہت نایاب ہوتے ہیں ۔۔۔۔انمول ہوتے ہیں۔۔۔۔ہاں انمول ہوتے ہیں۔۔۔۔۔بس محبت کا اک یہ بھی پیغام ہے۔۔۔۔۔

میں اک آنسو ہی سہی ہوں بہت انمول مگر
یوں نہ پلکوں سے گرا کر مجھے مٹی میں ملا

ختم شد
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 104 Articles with 108699 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
12 Nov, 2019 Views: 259

Comments

آپ کی رائے