جوابدہی ذمہ داری کو پروان دیتی ہے

(Raana Kanwal, Rawalpindi)

احتساب کے تناظر میں ، قریب سے دیکھنے کے لئے مختلف نکات ہیں۔ بیوروکریٹس کے ساتھ ساتھ عوامی اداروں میں بھی ذمہ داری کا احساس پیدا کرنے کا واحد اور بہترین طریقہ احتساب ہے۔ اس سے یہ طریقہ کار لایا جاتا ہے کہ اداروں میں لاقانونیت اور بڑے پیمانے پر رشوت کو کیسے روکا جاٰے۔ احتساب معاشرے میں ذمہ دار ، عقیدت مند اور قابل اعتماد لوگوں کو جنم دیتا ہے۔

جہاں تک بدعنوانی کی لعنت کا تعلق ہے تو ہمارے اداروں نے احتساب نہ ہونے کی وجہ سے اپنی عظمت کھو دی ہے اور اس نے ہر سرکاری / نجی ادارے میں دھچکے / بحران کی بہتات کو جنم دیا ہے۔قوم بہت گہری گندگی میں ہے کیوں کہ ہم کبھی بھی اپنے غلط کاموں کے لئے سراسر ذمہ دار اور محتاط نہیں رہے ہیں۔ اگر ہمارے اداروں میں موثر احتساب ہوتا تو سرکاری شعبوں میں بہت سی بے ضابطگیاں نہ ہوتی۔
یہ ان لوگوں کے لئے ناگوار / شرمندگی کی بات ہے جو اس قسم کی بدعنوانیوں میں ملوث ہیں اور انھیں آہنی ہاتھوں سے نمٹا جانا چاہئے۔ احتساب کے علاوہ سخت انکوائری اور تفتیش بدمعاش سیاستدانوں اور بیوروکریٹس کے خلاف بھی شروع کی جانی چاہئے جنہوں نے کبھی بھی احتساب کے قواعد کا اطلاق / پیروی نہیں کیا۔ کچھ ناپسندیدہ عناصر ہیں جن کی وجہ سے ہم پسماندگی کی کھڑی طرف جارہے ہیں اور اسی وجہ سے ، ہمیں خود تک رسائ حاصل کرنا چاہئے اور احتساب کا سامنا کرنے کے لئے سب سے آگے رہنا چاہئے۔

ہمارے مذہب نے بھی روز مرہ کے کاموں / سرگرمیوں میں احتساب کی مضبوط ضرورت پر زور دیا ہے۔ یہ شائستگی ، عاجزی پیدا کرتا ہے اور کسی بھی مہذب معاشرے میں دیانت دار افراد پیدا کرتا ہے۔ ہمارے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم زندگی کے ہر شعبے میں احتساب کے دائرہ کار کو ترقی دینے کے طریقوں کے بارے میں اپنے لوگوں کو ہدایت دیتے تھے۔

احتساب کی عدم رسائی کے سبب جمہوریت اور انسانی حقوق کی بہت تباہی ہوئی ہے۔لوٹ مار کرنے والوں اور لٹیروں کو جن کو ہم اپنے حکمران کہتے ہیں عوام کی محنت سے کمائی جانے والی رقم کو چھڑا لیا ہے۔ اس غیر قانونی حرکت کے پیچھے سب سے بڑا دھچکا یہ ہے کہ ہمارے منتخب نمائندوں نے جان بوجھ کر اپنی بدترین تدبیروں کے ذریعے اداروں کا امیج خراب کیا ہے۔

اقربا پروری کا بڑھتا ہوا رجحان متعدد نامور تنظیموں ، سرکاری شعبوں کے علاوہ اداروں میں بھی ناگزیر رہا ہے جہاں ملازمت کی سفارش کی جاتی ہے / ناجائز اسباب کے ذریعہ بیچ دی جاتی ہے اور اس کی وجہ احتساب کی الجھن ہے۔اداروں میں اقربا پروری کی ثقافت کی وجہ سے اہلیت اور عام اہلیت کو شدید خطرہ لاحق ہے۔

نظام عدم استحکام کی وجہ سے ہمارا تعلیمی نظام بھی کئی دہائیوں سے جزوی طور پر زبردست اعضاء کی حیثیت رکھتا ہے اور بدعنوان مافیا نے سب کچھ حاصل کر لیا ہے۔اس سب کے پیچھے بنیادی وجہ یہ ہے کہ مختلف محکموں کے ہمارے موجودہ نمائندے غیر ذمہ دار ہیں اور وہ واقعی پورے نظام کو خطرے میں ڈالنے کے لئے بڑے پیمانے پر جوابدہی کے مستحق ہیں۔

ہر جگہ اور ہر دن کے معاملات میں احتساب ہماری اولین ترجیح ہونی چاہئے۔یہ بات بالکل واضح ہے کہ ہم شاید ایسے اداروں کی محفوظ اور محفوظ ترقی یا بلندی کی طرف گامزن ہوسکتے ہیں جو لاپرواہی سے ختم کردیئے گئے ہیں۔

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 97 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Raana Kanwal

Read More Articles by Raana Kanwal: 34 Articles with 8402 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: