اللہ کی رحمت اسکے غضب پر بھاری ہے

(Muhammad Rafique Etesame, Ahmedpureast)

حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے فرمایا نبی پاکﷺ نے کہ جب اللہ تبارک و تعالیٰ نے مخلوقات کو پیدا کرلیا تو ایک کتاب جو اسکے پاس موجودہے اس میں یہ لکھا کہ”میری رحمت میرے غضب پر بھاری رہے گی“(رواہ مسلم، البخاری و ابن ماجہ)۔

حضرت ابو ہریرہؓ سے ہی روایت ہے کہ اللہ تبارک و تعالیٰ نے اپنی رحمت کے سو حصّے کئے نناوے حصّے اپنے پاس رکھّے اور ایک حصہ جنّوں، انسانوں، حیوانات اور حشرات الارض میں تقسیم کر دیا اس ایک حصہ کی وجہ سے ان تمام مخلوقات کے افراد آپس میں محبّت کرتے ہیں اور ایک دوسرے سے نرمی سے پیش آتے ہیں اور بقیّہ نناوے حصّے اپنے پاس رکھے جنکا اظہار روز قیامت ہوگا جب اللہ تبارک و تعالیٰ محض اپنے فضل و کرم اور وسیع رحمت سے بے شمار لوگوں کو جہنّم کی آگ سے بچا کر جنّت میں داخل فرمائیں گے۔

فرمایا نبی پاک ﷺ نے کہ ایمان خوف اور امیّد کے درمیان ہے یعنی اللہ تبارک و تعالیٰ کی رحمت کی امّید بھی ہو اور اسکے عذاب کا ڈر بھی ہو۔مقصد یہ ہے انسان اللہ تعالیٰ کی رحمت کی وجہ سے اتنا نڈر اور بے خوف نہ ہو جائے کہ گناہ کرتا ہی رہے اور نہ ہی اتنا ڈرے کہ نیک اعمال کرنا ہی چھوڑ دے بلکہ درمیانی حالت ہو۔

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 125 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Rafique Etesame

Read More Articles by Muhammad Rafique Etesame: 142 Articles with 105063 views »

بندہ دینی اور اصلاحی موضوعات پر لکھتا ہے مقصد یہ ہے کہ امر بالمعروف اورنہی عن المنکر کے فریضہ کی ادایئگی کیلئے ایسے اسلامی مضامین کو عام کیا جائے جو
.. View More

Comments

آپ کی رائے
Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ