دنیا عالمی وباء کی زد میں ۔۔۔۔۔۔

(Mariyam Khan, )

کرونا ایک ایسی بیماری ہے جسکا ہونے نا ہونے کا کچھ واضح طور پر نہیں پتا مگر اسکا خوف اور ذکر ہر جگہ موجود ہے۔ اخبارات کی سرخیوں سے لے کر ٹی وی چینلز تک اور ریڈیو کے اشتہارات موباٸل کالر ٹون اور نمبر پر بھی پیغامات بھیجے جا رہے ہیں احتیاط بتاٸ جا رہی ہے اور تو اور سوشل میڈیا کو توبس کوٸ ٹاپک چاہیے ہوتا ہے جو کہ آجکل واٹس ایپ اور کتابی چہرہ (Facebook) پر تو رونق لگی ہوٸ ہے کوٸ احتیاطی تدابیر کیساتھ دعاٸیں پڑھنے کیلیے بتارہا ہے تو کوٸ اس بیماری کا مزاق بنا کر اپنا غیر سنجیدہ رویہ کا اظہار کر رہا ہے۔

ایک محترم لکھتے ہیں کہ :

خدا کی قدرت کو مان کر پھر
رکوع میں انساں جھکا ہوا ہے
نظام فطرت تو چل رہا ہے
نظام دنیا رکا ہوا ہے
(شاہدمسرور)

اس خوفناک واٸرس نے ایک نہیں دو نہیں بلکہ کٸ ممالک کے چلتے ہوۓ ترقی کے پہیّے کو روک رکھا ہے۔ اس مرض نے تو سپر پاور کیساتھ ساتھ دنیا کے دیگر ممالک کو بھی اپنے شکنجے میں سمویا ہوا ہے۔ کہاں گٸ وہ سپر پاور ؟ کہاں گیا وہ غرور ؟ ایک چھوٹے سے جراثیم نے انسان کے سارے ہتھیاروں کو شکست دےدی اور سارے ذہینوں کو مات کردیا، ساری معیشت کی اڑان کو پلٹ کر رکھ دیا آج کا انسان اپنے ترقی یافتہ ہتھیاروں کے ساتھ کہاں کھڑا ہے؟ سب کے سب نڈھال ہیں اور اس موذی بیماری کی لپیٹ میں آکر اپنے اللّٰہ (GOD) کے آگے گھٹنے ٹیکے بیٹھے ہوۓ ہیں۔ حقیقت عیاں ہے مگر پھر بھی لوگ باز نہیں آرہے اس مرض کو سنجیدہ لینے کو تیار ہی نہیں جبکہ سب جانتے بوجھتے ہوۓ بھی کہ لاکھوں کی تعداد میں لوگ اس بیماری میں مبتلہ ہوچکے ہیں کتنے لوگ اس مرض سے اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں اور کٸ لوگ اس کا شکار ہوکر زندگی موت کی جنگ لڑ رہے ہیں۔ مگر مجال ہے کہ عوام اس حقیقت کو قبول کرلے اور بتاٸ گٸ احتیاطی تدابیر پر عمل کرتے ہوۓ قرنطینہ کو اپناۓ۔۔مگر یہاں روڈ دیکھو تو اس پر اتنا ٹریفک، مارٹ کی طرف رُخ کرو تو وہاں اتنی بھیڑ، اسکے علاوہ عام دکانوں پر ہے تو وہاں لوگوں کا ہجوم۔۔۔ کیا بند ہے کیا نہیں، کیا چل رہا ہے کچھ سمجھ نہیں آرہا ہے۔ کوٸ غریبوں کو راشن دیتے ہوۓ تصاویر کیساتھ انکی عزت نفس کو مجروح کر رہا ہے تو کوٸ لاک ڈاٶن کا فاٸدہ اٹھاتے ہوۓ ناجاٸزمنافع کماکر اپنی حوس مٹا رہا ہے کوٸ آذانیں دیکر اس وبا سے چھٹکارہ پانے کی امید سے ہے تو کوٸ آیت کریمہ اور دیگر وضاٸف کا ورد کر کے خدا تعالیٰ سے مدد طلب کر رہا ہے تو کوٸ شاعری سے لوگوں کو سنجھا رہا ہے تو کوٸ اپنی ویڈیوز بنا کر اس جنگ میں لڑنے والوں کے حوصلے بلند کر رہا ہے۔

ایک عزیز لکھتے ہیں کہ :

ہم زندہ قوم ہیں، اِک بار دنیا کو پھر دکھانا ہے
سب کو ایک بنکر اس موذی کرونا کوہرانا ہے
سیلابوں زلزلوں میں ہم نے یکجان ہوکر دکھایا تھا
آج پھر اسی جذبے کو ہم نے اِک بار پھر جگانا ہے
عزم کریں نا امیدی کو ختم کر کے ہی دم لیں گے
اپنے پریشان حال لوگوں کا ہمیں حوصلہ بڑھانا ہے
کچھ زیادہ مشکل تو نہیں ان دو باتوں پر عمل کرنا
نہ بھیڑ بھاڑ میں گُھسنا ہے، نہ ہاتھوں کوملانا ہے
گر اپنے پیاروں سے واقعی ہم پیار کرتے ہیں
تو نہ کسی کو بلانا ہے، نہ گھر سے باہر جانا ہے
فرصت کے ان لمحوں کا گر صحیح استعمال کرنا ہے
خدا سے اپنے تعلق کو اور مضبوط بنانا ہے
خود پر بھروسہ رکھنا ہے، یہ جنگ خود ہی لڑنی ہے
وصفی گھر میں دشمن آن گھسا ہے اس کو مار بھگانا ہے
(سلمان احمد صدیقی)

 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 92 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mariyam Khan

Read More Articles by Mariyam Khan: 5 Articles with 2789 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: