انسداد غربت سے ترقی و خوشحالی کا سفر

(Shahid Afraz Khan, Beijing, China)
چینی صدر شی جن پھنگ کی متحرک قیادت میں چینی حکومت کی کوشش ہے کہ غربت کے مکمل خاتمے سےایک اعتدال پسند خوشحال معاشرے کی تکمیل کی جائے۔انسداد غربت میں چین کی اعلیٰ قیادت کی سنجیدگی اور دلچسپی کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جا سکتا ہے کہ صدر شی جن پھنگ نے حالیہ عرصے کے دوران غربت سے دوچار علاقوں کے تواتر سے دورے کیے ہیں اور تخفیف غربت کے امور کا خود جائزہ لیا ہے۔انہوں نے دیہی باشندوں سے اُن کے حالات زندگی سے متعلق دریافت کرنے سمیت انہیں درپیش مسائل کے حل کے لیے موقع پر احکامات جاری کیےہیں۔اس کا فائدہ یہ ہوا کہ ان علاقوں میں غربت کے خاتمے کے لیے متعین سرکاری اہلکار ہمیشہ چوکس رہتے ہیں کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ اعلیٰ قیادت کی نگاہیں اُن پر مرکوز ہیں اور فرائض سے غفلت برتنے کی صورت میں انہیں سنگین نتائج کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

انسداد غربت سے ترقی و خوشحالی کا سفر

اقوام متحدہ کے2030کے 17 پائیدار ترقیاتی اہداف کی بات کی جائے تو اس میں غربت کا خاتمہ ایک اہم ہدف ہے لیکن کووڈ۔19کی موجودہ وبائی صورتحال کے تناظر میں دیکھا جائے تو انسداد غربت ،خوراک کے تحفظ اور صحت عامہ سے متعلق مسائل میں مزید اضافہ ہوا ہے۔ عالمی سطح پر غربت کی بنیادی وجوہات میں غیر متوازن اقتصادی ترقی ، تنازعات میں اضافہ ،تعلیم و صحت جیسی بنیادی سہولیات تک عدم رسائی اور بے روزگاری و بد عنوانی جیسے سماجی مسائل کلیدی عوامل ہیں۔ایسے دیرینہ مسائل کو حل کیے بغیر دس برس سے کم عرصے میں دنیا بھر سے غربت کا خاتمہ یقیناً کسی بڑے چیلنج سے کم نہیں ہے۔

دوسری جانب رواں سال 2020 چین سے غربت کے مکمل خاتمے کا سال ہے۔چینی صدر شی جن پھنگ کی متحرک قیادت میں چینی حکومت کی کوشش ہے کہ غربت کے مکمل خاتمے سےایک اعتدال پسند خوشحال معاشرے کی تکمیل کی جائے۔انسداد غربت میں چین کی اعلیٰ قیادت کی سنجیدگی اور دلچسپی کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جا سکتا ہے کہ صدر شی جن پھنگ نے حالیہ عرصے کے دوران غربت سے دوچار علاقوں کے تواتر سے دورے کیے ہیں اور تخفیف غربت کے امور کا خود جائزہ لیا ہے۔انہوں نے دیہی باشندوں سے اُن کے حالات زندگی سے متعلق دریافت کرنے سمیت انہیں درپیش مسائل کے حل کے لیے موقع پر احکامات جاری کیےہیں۔اس کا فائدہ یہ ہوا کہ ان علاقوں میں غربت کے خاتمے کے لیے متعین سرکاری اہلکار ہمیشہ چوکس رہتے ہیں کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ اعلیٰ قیادت کی نگاہیں اُن پر مرکوز ہیں اور فرائض سے غفلت برتنے کی صورت میں انہیں سنگین نتائج کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

چین کی کوشش ہے کہ غربت کے مکمل خاتمے سے ترقی کے ثمرات تمام عوام تک یکساں بنیادوں پر فراہم کیے جائیں۔اس ضمن میں انسداد غربت کی کوششوں میں مزید تیزی لائی گئی ہے۔ اگرچہ چند حلقوں کا یہ خیال تھا کہ کووڈ۔19کی وبائی صورتحال میں شائد چین غربت کے خاتمے سے متعلق اپنے اہداف میں تبدیلی لائےگا مگر چین کی اعلیٰ قیادت نے دوٹوک موقف اپناتے ہوئے یہ عزم ظاہر کیا کہ موجودہ معیارات کے تحت ہی سال 2020ملک سے مکمل غربت کے خاتمے کا سال ہو گا۔

چین نے گزشتہ چالیس برسوں میں 70کروڑ سے زائد لوگوں کو غربت کی دلدل سے باہر نکالا ہے۔سال 2012سے سال 2019کے درمیان 9کروڑ سے زائد لوگوں کو غربت سے نجات دلائی گئی ۔سال 2019کے اواخر تک غربت کے شکار افراد کی تعداد صرف 55لاکھ تک رہ چکی ہے جبکہ غربت کی مجموعی شرح 10.2فیصد سے کم ہو کر صرف0.6فیصد کی سطح تک آ چکی ہے ۔انسداد غربت میں چین کی ان بے مثال کامیابیوں سے دنیا بھی سیکھنے کی خواہش مند ہے۔ابھی حال ہی میں اقوام متحدہ کی 75ویں سالگرہ کی مناسبت سے ایک تقریب کا انعقاد کیا گیا جس میں انسداد غربت میں چین کے کامیاب تجربات سے سیکھتے ہوئے اقوام متحدہ کے سال 2030 کے پائیدار ترقیاتی اہداف کے حصول سے متعلق تبادلہ خیال کیا گیا۔دنیا کے لیے تعجب انگیز ہے کہ چین دس برس قبل ہی انسداد غربت کا ہدف حاصل کرنے کے انتہائی قریب پہنچ چکا ہے۔

انسداد غربت کی کوششوں میں ایک جانب جہاں چینی کمیونسٹ پارٹی کی مضبوط قیادت کی بدولت پالیسیوں کا تسلسل دیکھنے میں آیا وہاں دوسری جانب وقت کے بدلتے تقاضوں کے مطابق خود کو ڈھالتے ہوئے پیش قدمی کی گئی۔شہروں کی طرز پر دیہی علاقوں میں بھی لوگوں کو تعلیم ،صحت ،رہائش سمیت تمام بنیادی ضروریات زندگی فراہم کی گئیں۔زراعت کو جدید خطوط پر استوار کیا گیا جس کا فائدہ یہ ہوا کہ لوگوں نے شہروں کا رخ کرنے کی بجائے اپنے اپنے علاقوں میں روزگار کو ترجیح دی۔دشوار گزار پہاڑی علاقوں سے لوگوں کو جدید سہولیات سے آراستہ نئے رہائشی مقامات پر منتقل کیا گیا جہاں اُن کی بہتر دیکھ بھال اور روزگار کے انتظام کو یقینی بنایا گیا۔غربت سے دوچار علاقوں کو جدید ٹیکنالوجی بالخصوص انٹرنیٹ تک رسائی دی گئی جس کے ثمرات آج سامنے آ رہے ہیں جب ایک عام کسان بھی اپنی زرعی مصنوعات باآسانی آن لائن فروخت کر سکتا ہے۔ چین کی جانب سے دیہی سیاحت کے فروغ کا ایک نیا ماڈل سامنے آیا ، اس کا فائدہ یہ ہوا کہ لوگوں نے تعطیلات کے دوران بیرونی ممالک یا بڑے شہروں کا رخ کرنے کی بجائے پرسکون دیہی علاقوں کا رخ کیا جس سے مقامی لوگوں کی آمدن میں زبردست اضافہ ہوا اور روزگار کے نت نئے مواقع سامنے آئے۔مختلف علاقوں میں روایتی صنعتوں مثلاً دستکاری ،کشیدہ کاری ،ظروف سازی وغیرہ کو فروغ دیا گیا اور ان میں جدت لاتے ہوئے مقامی شہریوں کو روزگار فراہم کیا گیا۔
انسداد غربت میں اگر چین کی کامیابیوں کا احاطہ کیا جائے تو ایک چیز واضح ہے کہ تمام تر مسائل کے باوجود چین نے غربت کے خاتمے کی کوششوں کو سست روی کا شکار نہیں ہونے دیا ہے۔سیاسی قیادت میں تبدیلی ضرور آتی رہی مگر غربت کے خاتمے کی پالیسیوں کا تسلسل جاری رہا بلکہ ہر گزرتے لمحے اس میں مزید بہتری لائی گئی۔انسداد غربت کی کوششوں میں رکاوٹ بننے والے عناصر کی سختی سے حوصلہ شکنی کی گئی اور کڑےاحتساب سے شفافیت کو یقینی بنایا گیا۔یہی وجہ ہے کہ آج چین پوری دنیا بالخصوص ترقی پزیر ممالک اور غربت سے دوچار ممالک کے لیے امید کی ایک کرن اور ترقی کا بہترین قابل تقلید نمونہ ہے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shahid Afraz Khan

Read More Articles by Shahid Afraz Khan: 73 Articles with 14362 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
23 Sep, 2020 Views: 128

Comments

آپ کی رائے