عید مبارک

(Dr shaikh wali khan almuzaffar, Karachi)
عید پر چیدہ چیدہ پیغامات

روزنامہ جہان پاکستان میں شائع شدہ

عید مبارک
عید کے مبارک موقعے پر دوستوں کے ہزاروں میسجز میں سے ان ہی کے احساسات کے ساتھ کچھ منتخبات اپنے قارئین ِ کرام کے لئے:
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ!
دعا ہے کہ عید کا مبارک دن آپ کے لئے ایسے مبارک فیصلے لے کر آیا ہو کہ آپ کا نہاں خانہ دل بهی سکون و مسرت سے جگمگا اٹھے آپ کو ایسی خوشیاں نصیب ہوں جو ہمیشہ قائم و دائم رہیں اور اللہ رب العزت نے عید کے دن اپنے نیک بندوں کے لئے جن انعامات کا وعدہ کر رکھا ہے ان سب سے آپ پوری طرح بہرہ مند ہوں . ایسی مبارک عیدیں آپ کی زندگی میں بار بار آئیں اور ہر بار ایسی تابانی و شادمانی کے ساتھ کہ آپ بے ساختہ سجدہ شکر بجا لائیں اور دل کی گہرائیوں سے کہ سکیں : عید مبارک !آمین۔۔۔۔محمد شعیب
!!!!!!!!!!!!!!!
رحمت کا تھا رمضان میں دن رات نزول
ہر دل کی تمنا تھی ہو نیکی قبول
بے روح شب و روز ہیں آنے والے
رمضان کے جانے سے طبیعت ہے ملول
دل خوش ہوا شوال کا دیکھا جو ہلال
اک ماہ کے روزوں کا مسرت ہے مآل
ہے عید کے آنے کی بھی صائم کو خوشی
رمضان کے جانے کا بھی لیکن ہے ملال
ہیں مصر میں اخوان مظالم کا شکار
بنگلہ میں جماعت پہ لٹکی ہےتلوار
ہر ملک میں ہے خون مسلماں ارزاں
کیا عید منائیں کہ کلیجہ ہے فگار
ہر سال رلاتے تھے فلسطینی الم
شامل ہے میانمار کا اب کے ماتم
شامی، یمنی، چینی مسلمانوں کے غم
اب کے بھی ہوئی عید بچشمِ پُر نم
!!!!!!!!!
اسطرح اٹھ گیا دنیا سے محبت کا چلن
غیر تو غیر ہیں اپنوں کے ہیں اپنے دشمن
ہے ڈریس خوب اگر اس سےنمایاں ہوبدن
بےحیائ بنی اب اہل جہاں کا فیشن
اب مریدوں کی بھلا کون دبائے گردن
جبکہ خود پیر طریقت ہیں یہاں تر دامن
بےادب آج بنےبیٹھے ہیں ارباب ادب
جو گویا ہو اسے کہتے ہیں سرتاج سخن
شاعروں نے بھی زباں اپنی بدل ڈالی ہے
اب نہ گلفام ہے کوئ نہ کوئ غنچہ دہن
لاش تہذیب وتمدن کی پڑی سڑتی ہے
بیچ کھایا ہے نجیبوں نےشرافت کا کفن
اب تو آثار قدیمہ ہیں پرانے رشتے
نہ کوئ بھائ کسی کا نہ کسی کی ہے بہن
آج ابلیس کیا کرتا ہے تلقین عمل
مفتی شہر نے مذہب پہ لگادی قدغن
آج کے اہل نفاست بھی یہ فرماتے ہیں
عطر چرکین سے بڑھ کر تو نہیں مشک ختن
آشیانوں میں عنادل کے ہیں الو بیٹھے
اور کہتے ہیں کہ بدلا ہے نظام گلشن
اور تو اور یہ دلی سےخبر آئ ہے
ایک نیتا کے کلیجے میں اٹھا دردوطن
میں نے اپنے دلِ حساس سے یہ عرض کیا
"تو اگر کشتہ شدی آہ !چہ کردم من"
شاعر:سعیدالدین
!!!!!!
رُودادِ محبّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کچھ بھول گئے
دو دِن کی مُسرّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے
جب جام دیا تھا ساقی نے جب دور چلا تھا محفل میں
اِک ہوش کی ساعت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گیے
اب وقت کے نازک ہونٹوں پر مجروح ترنّم رقصاں ہے
بیدادِ مشیّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بُھول گئے
احساس کے میخانے میں کہاں اَب فکر و نظر کی قندیلیں
آلام کی شِدّت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے
کُچھ حال کے اندھے ساتھی تھے کُچھ ماضی کے عیّار ِسخن
احباب کی چاہت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے
کانٹوں سے بھرا ہے دامنِ دِل شبنم سے سُلگتی ہیں پلکیں
پُھولوں کی سخاوت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے
اب اپنی حقیقت بھی ساغر بے ربط کہانی لگتی ہے
دُنیا کی حقیقت کیا کہئیے کُچھ یاد رہی کُچھ بھول گئے۔
رضوان انجم ۔کلام:ساغر صدیقی
!!!!!!!
ﺍﻓﺴﺮﺩﮦ ﮨﯿﮟ ﺍﻓﻼﮎ ﻭ ﺯﻣﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﺁﺯﺭﺩہ ہیں مکاﻥ و ﻣﮑﯿﮟ ‘ ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﻧﻤﻨﺎﮎ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﺳﮯ ﺟﺒﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﯾﮧ ﻋﯿﺪ ﮐﻮﺋﯽ ﻋﯿﺪ ﻧﮩﯿﮟ ‘ ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﯾﮧ ﺻﺒﺢِ ﻣﺴﺮﺕ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺷﺎﻡِ ﻏﺮﯾﺒﺎﮞ
ﺭﻧﺠﯿﺪﮦ ﻭ ﺩﻟﮕﯿﺮ ﻭ ﺣﺰﯾﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﻣِﻠّﺖ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﮞ ﻗﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺑﻨﺪِ ﺳﻼﺳﻞ
ﭘﺮﺩﯾﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻤﭙﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﮑﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﭼﮭﻠﻨﯽ ﮐﯿﺎ ﮐﻔّﺎﺭ ﻧﮯ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﺎ ﺳﯿﻨﮧ
ﺩﻝ ﮐﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﺴﺘﯽ ﮐﺎ ﯾﻘﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﺗﻮﺣﯿﺪ ﭘﺮﺳﺘﯽ ﮨﯽ ﻓﻘﻂ ﺟُﺮﻡ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﺮﺍ
ﮔﮩﻨﺎﺋﯽ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﻋﻈﻤﺖِ ﺩﯾﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﮐﭽﮫ ﺑﮭﻮﻝ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﻢ ﺳﮯ ﯾﮧ ﮐﮩﻨﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ
ﺑﮯ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﺍُﻓﺘﺎﺩ ﻧﮩﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﺍﻓﺴﻮﺱ ﺗﻮ ﯾﮧ ‘ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﮨﻢ ﺍﯾﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﯿﮟ
ﺍِﮎ ﻧﻈﺮِﮐﺮﻡ ﺑﺎﻧﯽ ٔ ﺩِﯾﮟؐ ‘ ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﮐﮩﻨﺎ ﮨﮯ ﺑﺼﺪ ﻋﺠﺰ ﯾﮧ ﺍﺭﺑﺎﺏِ ﻭﻃﻦ ﺳﮯ
ﮐﺐ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ اکﺩﻭﺭِِ ﺣﺴﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﺑﮭﭩﮑﯽ ﺗﻮ ﮨﮯ ﯾﮧ ﻗﻮﻡ ﺭﮦِ ﺭﺍﺳﺖ ﺳﮯ ﻟﯿﮑﻦ
ﺍِﺱ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ہےﺛﺎﻧﯽ ﮐﮩﯿﮟ؟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﭘﮩﻨﭽﺎﺋﮯ ﺍﺳﯿﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺻﺒﺎ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﮔﻮ ﺩﯾﺮ ﮨﮯ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﻣﺤﺒﻮﺱ ﺟﻮﺍﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﺰﯾﺰﻭﮞ ﺳﮯ ﯾﮧ ﮐﮩﻨﺎ
ﻣﻮﻻ ﮨﮯ ﻧﮕﮩﺒﺎﻥ ﻭ ﺍﻣﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﻗﻠﻨﺪﺭ ﮐﯽ ﻗﻠﻨﺪﺭ ﮨﯽ ﮐﮩﮯ ﮔﺎ
ﮔﻮﺑﺎﺕ ﯾﮧ ﮐﮩﻨﮯ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
’’ﮨﮯ ﺟُﺮﻡِ ﺿﻌﯿﻔﯽ ﮐﯽ ﺳﺰﺍﻣﺮﮒِ ﻣﻔﺎﺟﺎﺕ ‘‘
ﺭﮐﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﭘﺎﺋﮯ ﯾﻘﯿﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﭘﮭﺮ ﻧﻌﺮۂ ﺗﮑﺒﯿﺮ ﺳﮯ ﮔﻮﻧﺠﯿﮟ ﮔﯽ ٖﻓﻀﺎﺋﯿﮟ
ﺁﭘﮩﻨﭽﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻭﻗﺖِ ﻗﺮﯾﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
ﻣﻮﻣﻦ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﺎﯾﻮﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﺣﻤﺖِ ﺣﻖ ﺳﮯ
ﻣﻮﻣﻦ ﮐﺎ ﮨﮯ ﺩﻝ ﻋﺮﺵِ ﺑﺮﯾﮟ ‘ﻋﯿﺪ ﻣﺒﺎﺭﮎ
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Dr shaikh wali khan almuzaffar

Read More Articles by Dr shaikh wali khan almuzaffar: 450 Articles with 490033 views »
نُحب :_ الشعب العربي لأن رسول الله(ص)منهم،واللسان العربي لأن كلام الله نزل به، والعالم العربي لأن بيت الله فيه
.. View More
21 Jul, 2016 Views: 924

Comments

آپ کی رائے