مہذب معاشرہ

(Saba Hassan, Lahore)
موازنہ کرنے بیٹھی تو خود ھی ٹھٹھک گئی۔۔ آج جس طبقے کو مہذب سمجھا جاتا ھے اُس میں وہ لوگ شامل ھیں جو خود کو خود ھی ثبوت کے ساتھ غیر مہذب ہونے کی عکاسی کرتے ھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جن کے کپڑے دوسرے لوگ نہیں اُتارتے وہ خود زیادہ سے زیادہ کم لباس ہونےمیں خود کو مہذب گردانتے ھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو لوگوں کو اُنکے ظاھر سے پہچانتے ھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کون کس قدر اعلیٰ ظرف ھے اُسکی گندی زبان دکھا دیتی ھے لیکن دورءجدید میں لغو اور کاذب زیادہ عزت کے حقدار ھیں۔ کبھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہا جائے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو کچھ سالوں پہلے جب دور ء جہالت ذرا ذرا ختم ھی ھونے والا تھا انسان اپنی صحبت سے پہچانا جاتا تھا لیکن آج صرف روپے پیسے سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ !!!!! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دوسروں کی بلا سے جس طرح مرضی کمائی کریں اپنے بچوں کا پیٹ پالیں آپ کے پاس پیسہ ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔گاڑی ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ خوبصورت گھر ھے ۔۔۔۔ محض رشوت ستانی میں آپ کو ماھر ھونا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور تو اور خوشامد پسند ھونا آپ کے کردار کو چارچاند لگا دے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس اک لکیر کھینچ لیں اور اُس پر یہ سیدھا چلیں۔۔۔ خبردار !!!!!! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ارد گرد ایسے لوگوں کو پھٹکنے بھی نہ دیں جو ذرا برابر بھی ضرورت مند ھوں ۔۔۔۔ اویں !!! کسی کو نظر بھر کر دیکھ لیا اور یہ <3 خبیث دل <3 موم ھوگیا تو۔۔۔۔۔ نہ نہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ درءمقفل کو قفل ھی اچھا۔۔۔۔ یہ جاننے کی قطعاً ضرورت نہیں کہ ھمسایہ کون ھے؟ کس حال میں ھے؟ ۔۔۔ خود اچھا کھا کر سو جاؤ رات رات بھر عیاشی کرو دوسروں کا جینا حرام کر دو ۔۔۔۔۔ آتے جاتے اگر کسی پر نظر پڑ ھی جائے تو نظر جھکا کر خود کو غیر مہذب نہ ظاھر کریں بلکہ زیادہ سے زیادہ ھوس کی نظر ڈالیں۔۔۔ اتنی اتنی کو اگر ھمسائےدار صنفءنازک ھیں تو باپردہ ھونے کہ باوجود دھیرے دھیرے اپنے کپڑے اُترتے محسوس کریں. ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کہنے کو تو بہت کچھ ھے لیکن مختصراً یہ کہ بس میں نے کہہ دیا تو کہہ دیا کوئی لاکھ تصدیق کرے لاکھ احساس دلائے ھم مہذب ھیں مہذب ھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایسے مہذب ھی رھیں گے
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: saba hassan

Read More Articles by saba hassan: 12 Articles with 3232 views »
“Good friends, good books, and a sleepy conscience: this is the ideal life.” .. View More
06 Oct, 2016 Views: 373

Comments

آپ کی رائے