ماہِ محرم الحرام کے فضائل و مسائل

(Mufti Muhammad Waqas Rafi, )

ماہِ محرم الحرام اسلامی تقویم کے اعتبار سے پہلا اور اُن چار مہینوں میں سے تیسرا مہینہ ہے جو اﷲ تعالیٰ کے یہاں انتہائی عظمت و بزرگی والے شمار کیے جاتے ہیں۔ چنانچہ حضرت ابو بکرہ رضی اﷲ عنہا سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی اﷲ علیہ وسلم نے (حجۃ الوداع کے موقع پر اپنے آخری خطبہ میں یہ) ارشاد فرمایاکہ: ’’ جس دن اﷲ تعالیٰ نے زمین و آسمان کو پیدا کیا تھا اُس دن زمانہ کی جو رفتار تھی اب بھی وہی رفتار ہے (یعنی اب اس کے دنوں اور مہینوں میں کمی زیادتی نہیں ہے جو جاہلیت کے زمانے میں مشرک لوگ کیا کرتے تھے، بلکہ اب وہ ٹھیک ہوکر اس طرز پر آگئی ہے جس پر ابتداء اور اصل میں تھی،لہٰذا) ایک سال بارہ مہینوں کا ہوتا ہے، اِن میں چار مہینے حرمت و عزت والے ہیں جن میں تین مہینے مسلسل ہیں یعنی ذالقعدہ، ذی الحجہ اور محرم اور ایک رجب کا مہینہ ہے جوکہ جمادی الثانی اور ماہِ شعبان کے درمیان آتا ہے۔ (بخاری، مسلم، ابوداؤد، احمد)

اِس حدیث سے معلوم ہوا کہ اسلامی مہینوں کے نام اور اُن کی ترتیب انسانوں کی بنائی ہوئی نہیں بلکہ اﷲ تعالیٰ کی اپنی بنائی ہوئی ہے، جس دن اﷲ تعالیٰ نے زمین و آسمان کو پیدا کیا ، اُسی دن یہ ترتیب، یہ نام، اور ان مہینوں کے احکام و خواص بھی مقرر فرمادیئے، لہٰذاان مہینوں کے شرعی احکامات کو ان کے مطابق ہی رکھنا چاہیے کہ یہی اصل دین ہے ، اور خلافِ شرع ہر قسم کی بدعات و رسومات سے حتیٰ الامکان اپنے آپ کو بچانا واجب ہے۔

ماہِ محرم الحرام میں روزہ رکھنے کے حدیث شریف میں بڑے فضائل وارد ہوئے ہیں۔ چنانچہ ایک حدیث میں آتا ہے، حضرت ابو ہریرہ رضی اﷲ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ و سلم نے ارشاد فرمایا کہ: ’’رمضان کے روزوں کے بعد سب سے بہترین روزے اﷲ کے مہینے محرم کے روزے ہیں۔‘‘ (مسلم، ابو داؤد، ترمذی،نسائی، احمد، دارمی)

علامہ سید محمد یوسف بنوری رحمۃ اﷲ علیہ اس حدیث کی تشریح میں فرماتے ہیں کہ حدیث میں محرم کے روزے سے صرف دسویں تاریخ یعنی یوم عاشوراء کا روزہ مراد نہیں بلکہ ماہِ محرم کے عام روزے مراد ہیں۔ (معارف السنن شرح جامع ترمذی: ۹۹/۶)

ایک مرتبہ رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم نے اپنے ایک صحابی کو خطاب کرتے ہوئے ارشاد فرمایاکہ: ’’صبر یعنی رمضان کے مہینے کے روزے رکھا کرو! اور ہر مہینے میں ایک دن کا روزہ رکھ لیا کرو! اُن صحابی نے عرض کیا کہ مجھے اس سے زیادہ کی طاقت ہے، لہٰذا میرے لئے اور اضافہ کیجئے! آپ صلی اﷲ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ: ’’ہر مہینے میں دو دن روزہ رکھ لیا کرو! اُن صحابی نے عرض کیا کہ میرے لئے اور اضافہ کیجئے! ( کیوں کہ مجھے اس سے زیادہ کی طاقت ہے) آپ صلی اﷲ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ: ’’ہرمہینے میں تین دن روزہ رکھ لیا کرو!‘‘اُن صحابی نے عرض کیا کہ میرے لئے اور اضافہ کیجئے! آپ صلی اﷲ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایاکہ: ’’حرمت والے مہینوں (ذی قعدہ، ذی الحجہ، محرم اور رجب) میں روزے رکھ (بھی) لیا کرو اور چھوڑ (بھی) دیا کرو! ( آپ صلی اﷲ علیہ وسلم نے یہ بات تین مرتبہ ارشاد فرمائی) اور آپ نے اپنی تین انگلیوں سے اشارہ فرمایا، ان کو ساتھ ملا دیا پھر چھوڑ دیا (جس کا مطلب یہ تھاکہ ان مہینوں میں تین دن روزہ رکھ لیا کرو اور تین دن افطار (ناغہ) کرلیا کرو! اور اسی طرح کرتے رہو۔) (ابو داؤد، ابن ماجہ، احمد، نسائی، شعب الایمان، طبرانی)

ایک مرتبہ حضرت علی المرتضیٰ کرم اﷲ وجہہ سے ایک شخص نے دریافت کیا کہ ماہِ رمضان کے بعد آپ کس مہینے میں مجھے روزے رکھنے کا حکم دیتے ہیں؟ تو آپ نے ارشاد فرمایا کہ میں نے کسی کو بھی اس بارے میں سوال کرتے ہوئے نہیں دیکھا سوائے ایک شخص کے جس نے رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم سے اُس وقت یہ سوال کیا تھا جب کہ میں آپ کے پاس حاضر تھا۔ اُس آدمی نے پوچھا تھا کہ اے اﷲ کے رسول ! (صلی اﷲ علیہ وسلم) ماہِ رمضان کے روزوں کے بعد میرے لئے کس مہینے میں روزے رکھنے کا حکم ہے؟ آپ نے ارشاد فرمایا تھا کہ ماہِ رمضان کے روزوں کے بعد اگر تم روزے رکھنا چاہتے ہو تو ماہِ محرم کے روزے رکھا کرو! کیوں کہ یہ اﷲ تعالیٰ کا وہ مہینہ ہے کہ جس کے ایک دن اﷲ تعالیٰ نے ایک قوم (بنی اسرائیل) کی توبہ قبول کی تھی اور اسی دن دوسرے لوگوں کی بھی توبہ قبول فرمائے گا۔(ترمذی، احمد، بزار، دارمی)

یہ تو اس پورے مہینے میں روزے رکھنے کی عام فضیلت تھی جو اُوپر بیان ہوئی، لیکن اس مہینے میں عاشوراء یعنی دس محرم کے دن کی جو خاص فضیلت احادیث مبارکہ میں وارد ہوئی ہے وہ اس مہینے کے دیگر تمام دنوں سے کہیں زیادہ ہے۔

چنانچہ حضرت عبد اﷲ بن عباس رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ : ’’میں نے رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم کو سوائے عاشوراء ( دس محرم) کے دن اور رمضان کے مہینے کے علاوہ کسی خاص دن روزہ رکھنے کا اہتمام اور اس دن کو کسی دوسرے دن پر فضیلت دیتے ہوئے نہیں دیکھا۔‘‘(بخاری، مسلم، نسائی، احمد)

حضرت ابو قتادہ انصاری رضی اﷲ عنہ کی ایک لمبی حدیث میں حضورِ اقدس صلی اﷲ علیہ وسلم نے عاشوراء (دس محرم ) کے دن کے روزے کی فضیلت بیان کرتے ہوئے ارشاد فرمایاکہ: ’’میں اﷲ تعالیٰ سے اُمید رکھتا ہوں کہ عرفہ (نو ذی الحجہ) کا روزہ رکھنا گزشتہ اور آنے والے سالوں کے (صغیرہ) گناہوں کا کفارہ ہوجاتا ہے، اور میں اﷲ تعالیٰ سے (اس بات کی بھی) اُمید رکھتا ہوں کہ عاشوراء (دس محرم) کا روزہ گزشتہ ایک سال کے (صغیرہ) گناہوں کا کفارہ ہوجاتا ہے۔(مسلم، ابوداؤد، ترمذی، ابن ماجہ، احمد)

حضرت معاویہ رضی اﷲ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے نبی کریم صلی اﷲ علیہ وسلم کو یہ ارشاد فرماتے ہوئے سنا کہ: ’’یہ (آج) عاشوراء (دس محرم) کا دن ہے، اور تمہارے اُوپر اس دن کا روزہ فرض نہیں کیا گیا، لیکن میں روزہ سے ہوں، سو (تم میں سے) جو شخص (اس دن ) روزہ رکھنے کو پسند کرے تو اُسے چاہیے کہ وہ روزہ رکھ لے!۔‘‘( صحیح ابن حبان)

حضرت ابن عباس رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم جب مکہ مکرمہ سے ہجرت فرماکر مدینہ منورہ تشریف لائے تو آپ نے یہودیوں کو دس محرم کے دن روزہ رکھتے ہوئے دیکھا ( اسلام سے پہلے زمانہ جاہلیت میں لوگ اس دن روزہ رکھا کرتے تھے۔ رفیعؔ) تو آپ نے اُن سے پوچھا کہ اس دن کی کیا خصوصیت ہے کہ تم روزہ رکھتے ہو؟ انہوں نے کہا کہ یہ بڑا عظیم (اور نیک) دن ہے، اسی دن اﷲ تعالیٰ نے حضرت موسیٰ علیہ السلام اور اُن کی قوم کو نجات دی تھی (اور فرعون پر غلبہ عطاء فرمایا تھا) اور فرعون اور اُس کی قوم کو غرق (اور تباہ) فرمایا تھا ، تو چوں کہ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے بطورِ شکر (اور بطورِ تعظیم) کے اس دن روزہ رکھا تھا اس لئے ہم بھی اس دن روزہ رکھتے ہیں، تو رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ: ’’تمہارے مقابلے میں ہم حضرت موسیٰ علیہ السلام سے زیادہ قریب ہیں (اور بطورِ شکر روزہ رکھنے کے ) زیادہ حق دار ہیں۔ چنانچہ آپ نے عاشوراء (دس محرم) کے دن خود بھی روزہ رکھا اور دوسروں کو بھی روزہ رکھنے کی تلقین ارشاد فرمائی۔‘‘ (بخاری ومسلم)

حضرت ابو موسیٰ اشعری رضی اﷲ عنہ فرماتے ہیں کہ یہودی عاشوراء (دس محرم) کے دن کی بہت زیادہ تعظیم کیا کرتے تھے اور اس دن عید منایا کرتے تھے، پس رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ: ’’تم اس دن روزہ رکھا کرو!۔‘‘ (بخاری ، مسلم، احمد، ابن ابی شیبہ، طحاوی)

حضرت ابن عباس رضی اﷲ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ: ’’تم عاشوراء (دس محرم) کے دن کا روزہ رکھا کرو! اور اس میں یہودیوں کی مخالفت کیا کرو! (کہ وہ صرف ایک دن (دس محرم) کا روزہ رکھتے ہیں اور تم اس کے ساتھ ) اس سے ایک دن پہلے (یعنی نو محرم) کا یا اس سے ایک دن بعد (یعنی گیارہ محرم) کا روزہ بھی رکھ لیا کرو!۔‘‘(مسند احمد، شرح معانی الآثار)

حضورِ اقدس صلی اﷲ علیہ وسلم کے ان مذکورہ بالا ارشادات کے پیش نظر عاشوراء (دس محرم) کے دن کا روزہ رکھنا چوں کہ یہودیوں کی مشابہت سے خالی نہ تھا، نیز اس کو چھوڑ دینا بھی اس کے فضائل و برکات سے محرومی کا باعث تھا، اس لئے فقہائے کرام نے آپ کے ان ارشادات کی رُوشنی میں فرمایا ہے کہ تنہاء عاشوراء (دس محرم) کے دن کا روزہ رکھنا اگرچہ فی نفسہٖ صحیح اور جائز ہے لیکن چوں کہ اس میں یہودیوں سے مشابہت ہے اس لئے مکروہِ تنزیہی یعنی خلافِ اولیٰ ہے، افضل یہ ہے کہ اس کے ساتھ ایک دن اس سے پہلے کا یا ایک دن اس کے بعد کا بھی روزہ رکھے۔(فتح الملہم: ۴۶/۳، مرقات: ۲۹۳/۸، مواہب لدنیہ: ص ۴۸)

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mufti Muhammad Waqas Rafi

Read More Articles by Mufti Muhammad Waqas Rafi: 186 Articles with 136190 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
19 Sep, 2017 Views: 1057

Comments

آپ کی رائے
bhot khob jzkamulah mufti sb
By: M imran khan, lahore on Sep, 29 2017
Reply Reply
0 Like

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ