بھائی کا سفر آخرت

(Rizwan Ullah Peshawari, Peshawar)

روڈ حادثات میں ہر آئے روز اضافہ ہوتا رہتا ہے،کبھی موٹر سائیکل حادثہ تو کبھی ایکسٹیڈینٹ میں ایسے شدید زخمی ہوجاتے ہیں کہ جن کی پہچان بھی نہیں کی جاتی،اسی طرح کا ایک واقعہ میرے بھائی’’فہیم اﷲ درویش‘‘کے ساتھ ہوا،چند دن قبل وہ علی الصباح معمول کے مطابق دکان کی طرف نکل گئے،ان کی عادت یہ تھی کہ وہ پیادہ پا دکان آتے جاتے تھے،مگر کسی کو معلوم نہیں کہ آج ہی دنیامیں اس کا آخری دن ہے،وہ اپنے معمول کے مطابق پیادہ پا رواں دواں تھے،وہاں پر موت کا فرشتہ اس کے انتظار میں تھا،انہوں نے شائد بہت انتظار کیا ہوا تھاتو یہاں سے میرا بھائی کسی ساتھی کے ساتھ موٹر سائیکل پر سوار ہوئے،ابھی منٹ دیڑھ کا سفر بائیک پر نہیں کیا تھاکہ اچانک جی ٹی روڈ پر سائیکل سوار سامنے آیا،اب یہ لوگ سائیکل سوار سے اورٹیک ہی کر رہے تھے کہ اتنے میں اُس سائیکل سوار نے پیچھے کی طرف موڑ کر دیکھا تو اس سائیکل سوار کے دانتوں اور چہرہ سے ایک نور نکل گیا اور یوں ہی میرا بھائی موٹر سائیکل سے گر کر ڈنپر کے نیچے آگئے،ڈنپر کے آخری دونوں جوڑوں میں سے ایک جوڑے نے اس کے سر کو کچھل دیا تو دوسرے جوڑے نے اس کے سینہ کو چھیر کر دیااور یوں ہی فہیم اﷲ اپنے خالق حقیقی سے جاملے۔

میں مدرسہ میں تھا،ابھی میرا چوتھا گھنٹہ(زادالطالبین)کا شروع ہونے والا تھا کہ اچانک موبائل فون بجھنے لگا،موبائل کی سکرین دیکھی ،تو کال میرے چچازاد بھائی عمران حسن(پرنسپل کامران پبلک سکول)نے کیا تھا،کال اٹینڈ کیا تو وہ بھی غم کے مارے باتیں نہیں کر سکتے تھے،پھر میں نے بھی کئی دفعہ کال ملائی مگر وہ کچھ نہ بول سکے آخر کار کسی اور کو موبائل دے کر اس نے مجھے کہا کہ فہیم اﷲ نے ایکسٹیڈنٹ کیا ہے اور وفات پا چکا ہے،ادھر میرے پاؤں کے نیچے سے زمین نکل گئی،کچھ احساس نہیں رہا،فوراً جامعہ کے ناظم تعلیمات(مفتی محمد طیب)کے پاس گیا اور انہیں واقعہ سے باخبر کیا،میں جامعہ سے نکل ہی رہا تھا،کہ جامعہ کے ایک طالب علم محمد عباس نے آواز دی اور وہ میرے رفیق سفر بنے،ہم یہاں(جامعہ علوم القرآن،رنگ روڈ،نزد حیات آباد پشاور)سے ٹیکسی میں سوار ہوگئے ،یوں ہم دونوں پبّی ہسپتال پہنچ گئے۔

جیسے ہی میں ہسپتال پہنچا تو فوراً ایمر جنسی کی طرف روانہ ہوا،وہاں پوسٹ مارٹم والے ہال میں بھائی کی پوسٹ مارٹم ہو رہی تھی ،ہم باہر بیٹھے انتظار کر رہے تھے کہ اتنے میں پولیس پہنچی اور میرے سے ہم کلام ہو گئے ،میں نے کہا کہ مجھے تو خود ابھی اطلاع ملی اور میں وہاں سے یہاں آپہنچا،خیر پوسٹ مارٹم کے بعد ہم نے اپنے بھائی کو کندھا دے کر جامعہ نعمانیہ بانڈہ نبی پبی لے آئے،کیونکہ اگر ہم ان کی اس نعش کو گھر لے جاتے تو وقت جنازہ تک شائد کہ اس کے تابوت کو درست پاتے،بالآخر نماز جنازہ کا وقت قریب آتے ہی ہم نے بھائی کے تابوت کو کچھ وقت کے لیے گھرکے اندر کردیا۔

مرحوم کی نماز جنازہ استاذی وشیخی،استاد العلماء صاحب المعقول ولمنقول حضرت مولانا محمد شعیب حفظہ اﷲ ورعاہ نے بانڈہ نبی کی جنازہ گاہ میں پڑھائی ، نماز جنازہ کے بعد مرحوم کو اپنے آبائی علاقے کے قبرستان میں والدہ محترمہ کی آخری آرام گاہ کے قریب سپردِ خاک کردیا گیا، تدفین کے وقت میرے سسر محترم حضرت مولانا زبیراحمدحفظہ اﷲ ورعاہ نے لوگوں کو موت کی خوب تلقین فرمائی، آخر میں محبوب العلماء والصلحاء،درویش صفت انسان اور مولانا احمد لاہوریؒ کے حقیقی وارث قاری محمد اسلم اور میرے لڑکپن کے دوست مولانا قاری مدثر حفظہ اﷲ نے تلاوت کیں،آخر میں استاد العلماء حضرت مولانا محمد زاہد عابد پشاوری حفظہ اﷲ (مسؤل وفاق المدارس العربیہ پاکستان،ضلع کرم ایجنسی)نے دعا فرمائی۔

مرحوم خود بھی جمعیت کے بے لوث خادم و مخلص کارکن تھے، چند ماہ پہلے اضا خیل میں منعقد ہونے والے عظیم الشان صد صالہ اجتماع کے موقع پر بطور رضا کار 3 دن تک خدمات سر انجام دیئے تھے ،اپنے لیے رضاکاروں کی وردی بنائی تھی،علماء وصلحاء کے ساتھ بے لوث محبت رکھتے تھے،یہی وجہ تھی کہ مرحوم کے نمازجنازہ میں سینکڑوں علماء،شیوخ الحدیث اور طلبہ کرام نے شرکت کیں اور چند دن بعد جمعیت علمائے اسلام کے ایک درویش صفت انسان اور سابق وزیرمفتی کفایت اﷲ صاحب نے تشریف لایا ،مجھے مفتی صاحب نے کال کیاان دنوں میں چونکہ پشاور میں تھا ،میرے دوسرے بھائی سبحان اﷲ پشاوری نے ان کی خوب خاطر مدارت کی انہوں نے دعا کی اور مرحوم کی تعریفات میں کافی وقت لگا لیا بعد ازاں مفتی صاحب رخصت ہوگئے۔

نوجوان مرحوم کی موت ہم سب کے لئے لمحہ فکریہ ہے اور خاص کر نوجوان طبقہ کے لئے ، عام طور پرلوگوں کا یہ ذہن ہوتا ہے کہ کہ بڑھاپا آئے گا ، بیماری آئیگی، پھر کھبی جا کر موت آئے گا۔ یہ سوچ سراسر غلط ہے کیونکہ موت تو ہر وقت ہمارے سر پر ہوتا ہے ، موت جوانی میں بھی آسکتی ہے ، کھانا کھاتے وقت، کھیلتے وقت،سوتے وقت ، عرض یہ کہ ہر وقت آسکتی ہے ۔ ہمارے پاس تو اگلے ایک سیکنڈ کی بھی مہلت نہیں ، خدا جانے کب موت آجائے اور اس عارضی زندگی کا خاتمہ ہو جائے ، اس لئے ضروری ہے کہ ہر وقت موت کو یاد رکھے ، نیک اعمال کرے ، نماز وقت پر ادا کرے ، کس پر ظلم نہ کرے ، بے جا حق کسی کا حق نہ مارے ، ہر وقت موت کو سامنے رکھے ۔

عربی زبان کا بہت مشہور شعر ہے ،جس کا ترجمہ ہے کہ جب تم مردوں کو کندھوں پر اٹھا کر قبرستان لے جاتے ہو تو خیال کرو کہ اس کے بعد تم کو بھی اٹھایا جائے گا۔

اگر ہر کوئی یہ خیال کرے کہ ایک دن ہمیں بھی مرنا ہے تو کیا کوئی گناہ کے قریب بھی جائیگا ؟ ہر گز نہیں۔اﷲ تعالیٰ ہم سب کو قبل از موت ، موت کی صحیح تیاری نصیب فرمائے اوراﷲ تعالیٰ مرحوم کی مغفرت فرما کر جنت میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے اور رشتہ داروں و دوست احباب کو صبرِ جمیل عطا فرمائے ۔(آمین)
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Rizwan Ullah Peshawari

Read More Articles by Rizwan Ullah Peshawari: 162 Articles with 106787 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
20 Oct, 2017 Views: 370

Comments

آپ کی رائے