نوشتۂ دیوار

(Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi)
ایک جملہ۔ ضرب المثل نوشتۂ دیوار
جس کا مطلب۔وہ گمبھیر صورتِ حال جو ٹل نہ سکتی ہو اور ایک عبرت ناک انجام سر پہ آن پہنچا.
اسکا پس منظر جاننے کے لیے ہمیں انجیلِ مقدس کی ایک کہانی پہ غور کرنا ہوگا جوکہ اللہ کے نبی حضرت دانیال علیہ السلام کے معجزے سے تعلق رکھتی ہے۔
قارئین کے علم میں اضافہ کی خاطر یہاں پیش کی جا رہی ہے۔

بادشاہ بیلشضّر کے بارے میں لکھا گیا ہے کہ وہ درباریوں کے ساتھ اپنے محل میں رنگ رلیاں منا رہا تھا اور یروشلم کے معبد سے لُوٹے ہوئے طلائی برتنوں میں شراب نوشی کے دور چل رہے تھے کہ اچانک غیب سے ایک ہاتھ نمودار ہوا اور اس نے دیوار پر کچھ لکھنا شروع کر دیا۔ بادشاہ خوف سے تھر تھر کانپنے لگا۔ بعد کے واقعات کے مطابق بادشاہ نے بابل کے بڑے بڑے عالموں، پیروں، فقیروں اور نجومیوں کو محل میں بلایا اور کہا کہ اس عبارت کو پڑھ کر ذرا اسکا مطلب سمجھا دو، میں تمھیں سونے میں تول دوں گا۔ سارے عامل، پیر، فقیر اور نجومی کوشش کرتے رہے لیکن وہ عجیب و غریب زبان کسی کے سمجھ میں نہ آئی۔ ادھر بادشاہ کی حالت غیر ہوتی جا رہی تھی۔ آخر ملکہ نے آکر مشورہ دیا کہ دانیال نامی اُس شخص کو بلایا جائے جس کا جسم تو انسان کا ہے لیکن روح کسی دیوتا کی ہے۔ بادشاہ نے فوراً حضرت دانیال علیہ السلام کو محل میں بلایا اور اس سے یوں گویا ہوا:

میں نے سنا ہے کہ تم ہر طرح کی گھتیاں سُلجھانے کے ماہر ہو اور ہر مسئلے کو حل کر سکتے ہو۔ اگر تم دیوار پہ لکھی ہوئی یہ عبارت پڑھ کر اسکا مطلب مجھے سمجھا دو تو تمھارے گلے میں سونے کی مالا ڈالی جائے گی اور تمھیں خلعتِ فاخرہ سے نوازا جائے گا اور تمھیں سلطنت کا تیسرا سب سے بڑا عہدہ بھی سونپ دیا جائے گا۔
حضرت دانیال علیہ السلام نے دیوار کی طرف دیکھا۔ وہاں یہ چار الفاظ لکھے تھے۔
Mene – mene – takel – peres
یہ کسی اجنبی زبان کے غیر مانوس الفاظ تھے جنہیں ملک کا کوئی بھی عالم سمجھنے سے قاصر تھا۔ لیکن حضرت دانیال علیہ السلام نے اپنی روحانی قوت کے زور پر اس زبان کو سمجھ لیا اور بادشاہ سے کہا کہ تمھارا باپ بھی اس سلطنت کا فرماں روا تھا لیکن اس نے عیش و عشرت میں پڑ کر خود کو تباہ کر لیا اور اب تم بھی اسی کے نقشِ قدم پر چل رہے ہو چنانچہ تمھارا مقّدر بھی تباہی اور بربادی ہے۔ دیوار پہ لکھے ہوئے الفاظ کی تشریح کرتے ہوئے حضرت دانیال علیہ السلام نے کہا
mene کا مطلب ہے کہ تمھاری بادشاہی کے دِن پورے ہو گئے ہیں۔
takel کا مفہوم ہے کہ تمہیں کسوٹی پہ پرکھا گیا، لیکن تم کم عِیار ( ناقص) نکلے۔
peres سے مُراد ہے کے تمھاری سلطنت عنقریب دشمنوں میں تقسیم ہو جائے گی۔

بائبل میں لکھی کہانی کے مطابق اسی رات بادشاہ قتل کر دیا گیا اور جلد ہی اسکی سلطنت دو دشمن ریاستوں کے قبضے میں چلی گئی۔ بائبل کی کہانی تو یہیں تک تھی لیکن ایک ضرب المثل کے طور پر یہ واقعہ کئی زبانوں کا جزو بن چُکا ہے۔ جس میں اردو اور انگریزی کے علاوہ دنیا کی دوسری زبانیں بھی شامل ہیں۔

مثالیں۔
’حکومت میں شامل سیاست دانوں کو نوشتۂ دیوار پڑھ لینا چاہیے‘
’سردار اپنے قبیلے پر ظلم ڈھاتا رہا لیکن اسے نوشتۂ دیوار نظر نہ آیا۔‘
’باپ کو آخر بیٹی کا مطالبہ تسلیم کرنا ہی پڑا، شاید اس نے نوشتۂ دیوار پڑھ لیا تھا۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Zulfiqar Ali Bukhari

Read More Articles by Zulfiqar Ali Bukhari: 308 Articles with 263996 views »
I'm an original, creative Thinker, Teacher, Writer, Motivator and Human Rights Activist.

I’m only a student of knowledge, NOT a scholar. And I do N
.. View More
17 Dec, 2017 Views: 607

Comments

آپ کی رائے
معلوماتی تحریر ہے۔
By: Maria Sharif, Sahiwal on Sep, 14 2018
Reply Reply
0 Like
رائے کے لئے مشکور ہوں،پسندیدگی کے لئے شکریہ قبول کیجئے۔
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Sep, 15 2018
0 Like