ٹائم سکیل

(Waqar Ahmad Awan, )

آخر کار صوبائی حکومت نے صوبہ بھر کے اساتذہ کا دیرینہ مطالبہ ٹائم سکیل دے کر پورا کردیا تاہم جدید ٹائم سکیل پر صوبہ بھر کی بائیس اساتذہ تنظیموں نے شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے،اور جس پر عملدرآمد آئندہ چند روز میں دیکھنے کومل جائے گا۔اس سے قبل عوامی نیشنل پارٹی نے اپنے سابقہ دور حکومت میں اساتذہ کو اپ گریڈ کرکے پرائمری اساتذہ کو سات سے 12،14اور 15،سی ٹی ، ٹی ٹی اور اے ٹی اساتذہ کو بنیادی سکیل 15دے کر ان کا دیرینہ مطالبہ پورا کردیا تو ساتھ صوبہ بھر کے اساتذہ میں پائی جانے والی ایک عرصہ سے بے چینی کا یکسر خاتمہ کردیاتھا،لیکن موجودہ صوبائی حکومت نے جاتے جاتے اگر اساتذہ کوٹائم سکیل دیا بھی تو کس کام کا۔کیونکہ موجودہ ٹائم سکیل سے محکمہ تعلیم کے مطابق صرف ایس ایس ٹیز اساتذہ جن کی کل تعداد اٹھارہ سو سے انیس سو بتائی جاتی ہیں مستفید ہوسکیں گے ،جوکہ دو ہزار د س سے پروموشن سے محروم رہ چکے ہیں۔یوں ایک بار پھر صوبائی حکومت اساتذہ برادری کے ساتھ سیدھا سیدھا ہاتھ کرگئی،کیونکہ موجودہ صوبائی حکومت نے اپنے پانچ سالہ دور میں اساتذہ برادری کو دیا کچھ بھی نہیں البتہ ان سے لیا بہت کچھ ہے۔جیسے صوبہ بھر میں محکمہ تعلیم کے اعلیٰ افسران کے ہوتے ہوئے قریباً دو لاکھ کے قریب اساتذہ کو آئی ایم او (IMU)کے ذریعے بے جا تنگ کیا گیا، ان کی غیر حاضری کے بدلے ہزاروں روپے کی کٹوتی کی گئی مگر صوبہ بھر میں اعلیٰ کارکردگی دکھانے والے اساتذہ کو دیا کچھ بھی نہیں۔البتہ میٹرک میں اعلیٰ نتائج دینے والے اساتذہ کو لاکھوں کے انعامات سے نواز اگیا ۔تاہم پرائمری اور مڈل سکول کے اساتذہ سے صرف تنخواہ کی کٹوتی ہی کی گئی۔بوجوہ ان سب کے اساتذہ برادری کا دیرینہ مطالبہ ٹائم سکیل بھی ’’کھودا پہاڑ نکلا چوہا‘‘ثابت ہوا۔اس بارے صوبہ بھر میں اساتذہ کی بائیس تنظیموں نے گزشتہ برس 20اپریل کو صوبائی حکومت کے سامنے اپنا احتجاج بھی ریکارڈ کروایا تھا جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ مذکورہ تنظیموں کے سربراہان کو مقدمات کاسامنا کرناپڑا،یوں مذکورہ اساتذہ کی آواز اور جائز مطالبات کو دبانے کی ناکام کوشش کی گئی۔یہاں ایک بات قابل ذکر کہ اساتذہ کے احتجاج کے موقع پر سپیکر صوبائی اسمبلی اسد قیصر نے اساتذہ سے غیر مشروط ٹائم سکیل کا وعدہ بھی کیا تھا اس کے علاوہ اسی سال جنوری میں محکمہ تعلیم کے اعلیٰ افسران کے ساتھ ایک اجلاس میں غیر مشرو ط ٹائم سکیل پر بھی تحریری طور اتفاق کیا گیا تھا ،تاہم بوجوہ ان سب کے مذکورہ ٹائم سکیل سمجھ سے بالاتر ہے۔یادرہے کہ صوبائی حکومت کا موجودہ ٹائم سکیل موجودہ گریڈ میں8سال خدمات انجام دینے والے اساتذہ کے لئے ہے جس کا سیدھا سیدھا مطلب یہ نکلتا ہے کہ صوبائی حکومت ’’سانپ کو مارنا چاہتی ہے اور ڈنڈا بھی نہیں توڑنا چاہتی‘‘۔بہرکیف جدید ٹائم سکیل میں پرائمری اساتذہ جس کیڈر میں بھرتی ہونگے اسی کیڈر میں ریٹائرڈ بھی ہوجائیں گے یعنی ان کے لئے آگے جانے کے مواقع یکسر ختم کردیے گئے ، اس سے قبل پرائمری اساتذہ ،سی ٹی اور ایس ایس ٹیز میں پروفیشنل قابلیت کی بنا پر پروموٹ ہوجایاکرتے تھے تاہم جدید ٹائم سکیل کی بدولت انہیں سکیل 12سے 14،پھر14سے 15اور15سے 16ہی میں ریٹائرڈ ہونا پڑے گا ۔اورجس سے انہیں دوسرا کیڈر دیکھنا نصیب نہیں ہوسکے گا۔ اس لئے صوبہ بھر کی اساتذہ تنظیموں نے بالعموم جبکہ پرائمری اساتذہ کی نمائندہ تنظیم ’’اپٹا‘‘نے بلخصوص جدید ٹائم سکیل پر شدید تحفظا ت کا اظہار کیا ہے ،اس حوالے روزانہ کی بنیاد پر مختلف اساتذہ تنظیموں کے احتجاجی بیانات بھی دیکھنے سننے کومل رہے ہیں تاہم اب تک کھل کر کسی بھی تنظیم نے اپنا آئندہ کا لائحہ عمل نہیں دکھایاہے۔بہرکیف صوبائی حکومت اگر شرح خواندگی میں واقعی بہتری چاہتی ہے تو اسے جاتے جاتے ’’اپنی حصے کی کوئی شمع جلانا پڑے گی ‘‘وگرنہ عام انتخابات قریب ہیں اور اسے مذکورہ اساتذہ اور ان سے جڑے افرا د کی جانب سے ووٹ نہ ملنے کا خدشہ لاحق رہے گا۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Waqar Ahmad Awan

Read More Articles by Waqar Ahmad Awan: 65 Articles with 25754 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
30 Mar, 2018 Views: 704

Comments

آپ کی رائے