سوچنے سے پہلے اور بعد

(Muhammad Naeem Shehzad, Lahore)

از قلم : منہال زاہد سخی

آپ کو پتا ہے سوچنے سے پہلے نیت اور ذہن صاف رہتا ہے ۔ اور چاہے آپ اچھا سوچیں لیکن ساتھ میں آپ کے ذہن میں منفی سوچ ضرور جنم لے گی ۔ اور منفی سوچ آپ کو اچھی سوچ سے زیادہ عمل کے قابل لگے گی ۔

اک دفعہ میں گراؤنڈ میں کرسی پہ بیٹھے منظر سے لطف اندوز ہورہا تھا ۔ دو پٹھان بچوں کے بیچ ایک کھیل کھیلا جارہا تھا ۔ جسے پنجابی زبان میں چک ڈنڈا اور پتاسا بھی کہتے ہیں ۔

کھیل اس طرح ہے کہ دو اینٹوں کو اتنے فاصلے پر رکھا جاتا ہے کے ان میں کوئی ڈنڈا آسانی سے گزر جائے ۔ اینٹوں پر گیند کو رکھا جاتا ہے ۔ ڈنڈے کو اینٹوں کے بیچ سے اٹھا کے گیند کو بلند کر کے ڈنڈے سے گیند کو ہٹ شارٹ مارنی ہوتی اور اسے مقررہ حدود کے پار پھیکنے ہوتا ہے ۔ اور اگر گیند حدود سے پار نہ ہوئی تو جہاں جا کے رکی وہاں سے مخالف کھلاڑی گیند اٹھا کے اینٹوں پہ مارے گا اگر لگ گئی تو کھلاڑی آؤٹ ۔ نہ لگنے کی صورت میں ایک رن کا اضافہ ہو جائے گا۔

دو پٹھان بچے یہ کھیل رہے تھے میں بڑے لگاؤ سے انہیں دیکھ رہا تھا ۔ جو ایک فطرتی بات گزرے ہوئے بچپن کو دیکھنا ہے تو بچوں کو دیکھ لو ۔ ایک پٹھان بچے نے شارٹ ماری تو دوسرے نے اسے حد پار ہونے سے پہلے روک لیا ۔ اصولاً اس نے اس جگہ سے گیند ماری اینٹوں کو ۔ اینٹوں کو گیند چھو کر گزر گئی ۔ مگر مارنے والے کو پتا نہیں لگا اور وہ واپس اپنی جگہ پر جانے لگا ۔ لیکن دوسرا کہتا لگ گیا ہے اور باری اسے دے دیتا ہے ۔

اس واقعہ نے مجھے سوچنے پہ مجبور کر دیا ۔ اگر میں اسکی جگہ ہوتا تو کبھی بھی اسے باری نہ دیتا ۔ پھر ایک اور خیال آیا یہ بڑے ہو جائیں گے تو یہ بھی ایسا ہی کریں گے جیسا ہم کرتے ہیں ۔

مجھے پھر سمجھ آگئی کہ چھوٹا بچہ فوت ہوجائے تو جنت میں کیوں جائے گا ۔ اس لئے کہ وہ سوچتا نہیں نہ اپنے فائدے کا نہ کسی کے نقصان کا ۔ اس کی نیت پر خلوص ہوتی ہے ۔ اس کے دل میں کھوٹ نہیں ہوتا ۔ اگر وہ چھوٹی عمر میں فوت ہو جائے تو جنت میں اس لئے جاتا ہے کہ وہ تو بالکل پاک ہوتا ہے ۔ اس کے تو پیشاب پر چھینٹے مارنے سے پاک ہو جاتا ہے۔

چھوٹا بچہ کچھ سوچتا نہیں ۔ نہ ۔ اسے کوئی مفاد ہوتا ہے اور نہ کسی سے کوئی مطلب ۔ پر جیسے جیسے عمر میں اضافہ ہوتا ہے وہ دنیا کی رنگینیوں سے آنکھیں ملاتا ہے اور آہستہ آہستہ ان ہی ہو کے رہ جاتا ہے ۔ سوچتا تو وہ اچھا ہے مگر اس کے ساتھ اک منفی سوچ بھی ابھرتی ہے ۔ جسے وہ پرکشش اور مزہ سے بھر پور جان کر اسے لائحہ عمل میں لاتا ہے ۔ اور اس کا دل آہستہ آہستہ سفید سے کالا ہو جاتا ہے ۔

جوانی میں بھر پور منفی سوچوں اور غلط رستوں پر چل کر جب وہ بڑھاپے کو پہنچتا ہے ۔ تواسے اپنا بچپن بہت یاد آتا ہے ۔ اور وہ جان جاتا ہے کہ وہ جوانی میں کیا گل کھلا کر بڑھاپے میں پہنچا ہے ۔ بڑھاپے کو بچپن کا دور ثانی کہا جاتا ہے۔ بس فرق اتنا کہ بچپن میں گناہ نہیں ہوتا ۔ اور بڑھاپے میں جوانی میں کئے گئے گناہوں کی معافی طلب ہوتی ۔

بچپن کا دور تھا اک سہانہ زمانہ
کاش کہ لوٹ جائے وہ پرانا زمانہ
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 137 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Naeem Shehzad

Read More Articles by Muhammad Naeem Shehzad: 136 Articles with 32350 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: