زکات کے مستحق

(Mohammed Ahmed Raza Barkati Misbahi, Ghatprabha, Dist: Belgaum, State:Karnataka)

رمضان المبارک کا ماہ مقدس ہمارے مابین جلوہ فگن ہے ۔۔۔۔۔۔ اس کی تمام تر جلوہ سامانیوں سے ہم فیض یاب ہو رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔ یہ وہ مبارک مہینہ ہے کہ اپنی رحمتوں اور برکتوں سے ہر ایک کو مالا مال کرتا یے ۔۔۔۔۔۔ ہر ایک کے دستر خوان وسیع ہوجاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ امیر و غریب، مالک و نوکر، ٹھیکے دار و چپراسی غرض کہ ہر کوئی اپنی استطاعت اور ظرف کے مطابق اس کے دامن فیض سے موتی سمیٹتا ہے ۔۔۔۔۔ سیٹھوں، مال داروں اور اغنیا کے ہاتھ کھل جاتے ہیں اور طاقت بھر غریبوں پر عطا و نوال کر کے دارین کی سعادتوں سے مالا مال ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔

زکات، فطرہ، صدقہ بھی آج کل زیادہ تر لوگ اسی ماہ مقدس میں نکالتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ جس سے جود و سخا کی رفتار تیز ہوجاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ ایک قابل توجہ بات یہ ہے کہ زکات و صدقات ' جس کے حقیقی مصارف تو آٹھ ہیں لیکن ان میں جن کو قرآن نے مقدم رکھا وہ فقرا، مساکین، مقروض (جو حقیقی حاجت مند ہو اور قرض کسی ناجائز کام کے لیے نہ لیا ہو) ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ دیکھا یہ جاتا ہے کہ زکات وغیرہ غیروں پر تو خوب لٹایا جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔ لیکن جو حقیقی مستحق ہیں ان کی جانب توجہ کم یا پھر بالکل نہیں دی جاتی ۔۔۔۔۔۔ دور سے تو سیٹھ صاحب کہلاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ لیکن پڑوسی دانے دانے کے لیے ترس رہا ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔اس کے بچے پانی سے افطار کررہے ہوتے ہیں۔۔۔۔۔اور سیٹھ صاحب افطار پارٹی کرا رہے ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ بھائی ، بہن یا پھر رشتے دار حاجت مند ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ ان کی مالی حالت نہايت خستہ ہوتی ہے اور وہ قسم قسم کی پریشانیوں میں مبتلا ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ لیکن سیٹھ صاحب کی نظر التفات ان حاجت مندوں کی طرف نہیں ہوپاتی ہے ۔۔۔۔۔۔ اب وہ جان بوجھ کر ایسا کرتے ہیں یا پھر انجانے میں ، یہ تحقیق طلب مرحلہ ہے ۔۔۔۔۔۔ لیکن ان حضرات کی ذہن سازی کرنے میں ہمارا کچھ رہ نما طبقہ بھی ذمہ دار ہے ۔۔۔۔۔۔ وہ تقریروں میں زکات دینے پر فضائل اور نہ دینے پر وعیدیں تو خوب سنائیں گے ۔۔۔۔۔۔ لیکن جب بات آئے گی مصارف زکات کی تو اپنے مدرسے کا تعارف پہلے کرایں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔ اس تناظر میں بعض حضرات تو حقیقی مستحقین کا تذکرہ تک نہیں کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ اور کہتے ہیں آپ کے زکات کا حقیقی مصرف آپ کا فلاں فلاں چہیتا ادارہ ہے وہاں اپنی زکات کو دے کر خدا و رسول کی رضا حاصل کریں ۔۔۔۔۔۔۔

ہم یہ نہیں کہتے کہ مدارس اسلامیہ کو زکات نہ دیں ۔۔۔۔۔ ضرور دیں ۔۔۔۔۔۔۔ وہ اسلام کی روح ہیں ۔۔۔۔۔۔ وہ بھی حاجت مند ہیں کیوں کہ قوم مسلم کے علاوہ ان کا کوئی سہارا نہیں ۔۔۔۔۔۔ سرکاری یا غیر سرکاری طور پر ان کو کوئی امداد نہیں ملتی ۔۔۔۔۔۔۔ لیکن ان کی آڑ میں جو حقیقی مستحقین ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ ان کو بھی نظر انداز نہ کیا جائے ۔۔۔۔۔۔۔

کیا یہ ضروری نہیں کہ فقرا و مساکین کو دے کر انھیں سماج اور معاشرے میں سر اٹھا کر جینے کا حوصلہ دیا جائے ۔۔۔۔۔۔ کیا یہ ضروری نہیں ہے کہ دبے کچلے، نادار اور مفلس حال پڑوسی کو دے کر اس کے دکھ اور درد میں شریک ہو کر اس کے غم کو ہلکا کیا جائے ۔۔۔۔۔۔۔کیا یہ ضروری نہیں کہ قرض میں ڈوبے ہوئے شخص کی مالی امداد کرکے اس کی پریشانی کو دفع کیا جائے ۔۔۔۔۔۔۔ کیا یہ ضروری نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔ کیا ایسا ممکن نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔ ضرور ہے ۔۔۔۔۔۔ بس تھوڑی توجہ کی ضرورت ہے ۔۔۔۔۔ مجھے امید نہیں بلکہ یقین ہے اگر زکات صحیح طریقے سے حق دار تک پہنچنے لگے تو ان شاءالله تبارک وتعالیٰ پھر قوم مسلم میں بھیک مانگنے والا کوئی نہیں ہوگا۔

اب آخر میں گذارش ہے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ آپ میں سے جو صاحب استطاعت ہیں وہ فطرہ، زکات، 20 رمضان تک غریب، محتاج، ضرورت مند، لوگوں تک پہنچا دیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ تاکہ وہ وقت سے پہلے پہلے اپنی ضرورت پوری کر سکیں۔

جو لوگ عید کی نماز تک فطرہ، زکات وغیرہ دینے کو مؤخر کیے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ وہ جان لیں کہ غریب ضرورت مند اپنے بچوں کی خوشی کے لیے ہاتھ پھیلاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ عید کے دن جیب میں روپے رکھ کر گھومنے کے لیے نہیں ۔۔۔۔۔۔۔

امید ہے کہ آپ لوگ میری باتوں پر توجہ دیں گے ۔۔۔۔۔۔۔ اگر کچھ باتیں تلخ لگیں تو پیشگی معافی کا خواست گار۔۔۔۔۔ دعاؤوں میں یاد رکھیں ۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mohammed Ahmed Raza Barkati Misbahi

Read More Articles by Mohammed Ahmed Raza Barkati Misbahi: 2 Articles with 963 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
14 Jun, 2017 Views: 556

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ