اين آئی سی وی ڈی کرپشن کيس:سيکريٹری صحت نےہيلتھ سسٹم تباہ کرديا،ہائیکورٹ

image

سندھ ہائی کورٹ میں اين آئی سی وی ڈی کرپشن کيس میں سيکريٹری صحت پرعدالت نے برہمی کا اظہار کرتےہوئے کہا ہے کہ اِنہوں نے صوبے کا ہيلتھ سسٹم تباہ کرديا ہے۔

جمعرات کوسندھ ہائی کورٹ میں این آئی سی وی ڈی میں کرپشن سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔جسٹس صلاح الدین پنہور نے استفسار کیا کہ اس ادارے کے معاملات کب ٹھیک کریں گے،اس کو آدھا قبر میں نہ رکھیں، نکالیں یا دفن کردیں۔

این آئی سی وی ڈی گورننگ بورڈ  کے رکن نے عدالت  کو بتایا کہ پالیسی فیصلے کے لیے 3 ماہ کا وقت دیا جائے۔عدالت نے ریمارکس دئیے کہ پالیسی فیصلہ کس بات کا ہوگا جب این آئی سی وی ڈی ایکٹ موجود ہے۔آپ قانون کی با لادستی کی بات کرتے ہیں توہرچیزمیں قانون کی عمل داری قائم کریں۔

سیکریٹری صحت سندھ نے عدالت کو یہ بھی بتایا کہ این آئی سی وی ڈی اورایس آئی وی ڈی الگ الگ ہیں۔این آئی سی وی ڈی کا بورڈ کراچی کے معاملات دیکھتا ہے اور اندرون سندھ کے یونٹس کیلئے ایس آئی وی سی ڈی بنایا گیا ہے۔اس پر عدالت نے استفسار کیا کہ جب سربراہ اور ممبرز ایک ہیں تو بورڈ الگ کیوں ہے۔ ڈاکٹرندیم قمر دونوں بورڈز میں کیسے ہوسکتے ہیں؟۔

سیکریٹری صحت کاظم جتوئی نےعدالت سے کہا کہ 3 ماہ کی مہلت دی جائے تو پالیسی فیصلہ کریں گے۔عدالت نے سیکریٹری صحت کاظم جتوئی کو مخاطب کرکے کہا کہ آپ نے تو صوبے کا ہیلتھ سسٹم ہی تباہ کردیا ہے،یہ بتائیں کہ 3 ماہ میں کیسے ٹھیک کریں گے؟

این آئی سی وی ڈی کرپشن کیس کے درخواست گزار ڈاکٹر طارق شیخ نے کہا ہے کہ اگر ندیم قمرمیں تھوڑی سی بھی شرم ہوتی تو خود عہدہ چھوڑ دیتے۔سندھ ہائی کورٹ نے سماعت ملتوی کرتے ہوئے کہا کہ اس معاملے میں آج ہی تحریری حکم جاری کیا جائے گا۔


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
تازہ ترین خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.