bbc-new

آزادی کے 75 سال: مشرف خاندان سمیت دلی سے جانے والے خاندانوں نے شہر کو کیسے الوداع کہا ہوگا؟

آزادی کے 75 سال: دہلی کے اس گمنام ریلوے اسٹیشن سے پاکستان جانے والوں کا کیا تعلق ہے؟
ٹرین
Getty Images

لودھی کالونی ریلوے سٹیشن پر ان دنوں خاموشی ہے۔ اداسی اس ریلوے سٹیشن کے مستقل مزاج کا حصہ بن چکی ہے۔ کیا ایسا نہیں ہے کہ اس نے ملک کی تقسیم کے بعد سینکڑوں مسلمانوں کی سسکیاں سنی ہیں اور ہزاروں دوسرے لوگوں کو اپنے وطن اور اپنے پیاروں کو نم آنکھوں سے دور ہوتے دیکھا ہے۔

انڈیا کا دارالحکومت دلی سنہ 1947 سے اب تک بہت بدل چکا ہے، لیکن لودھی کالونی ریلوے سٹیشن کم و بیش پہلے جیسا ہی ہے۔ اندر اور باہر پانچ چھ آدمی نظر آ جائیں تو بہت ہے۔

اس کے آگے سرکاری ملازمین کے دو منزلہ فلیٹس ہیں۔ یہ کالونی سنہ 1946 میں بنی تھی اور اسے 'گوروں کے دارالحکومت' میں تعمیر ہونے والی آخری کالونی تصور کیا جاتا ہے۔

لودھی کالونی ریلوے سٹیشن پر نہ کوئی قُلی ہے اور نہ کوئی مسافر نظر آتا ہے۔ یہاں صرف اُداسی ہے۔

لاہور کے لیے خصوصی ٹرینیں

ملک کی تقسیم کے بعد اس ریلوے سٹیشن سے نہ جانے کتنے مسلمان اپنے ملک کو ہمیشہ کے لیے الوداع کہہ چکے تھے۔ کچھ لوگ ٹرین کے ڈبے کے اندر بیٹھے رو رہے تھے۔ کچھ اپنے پیاروں سے گلے مل کر رو رہے تھے۔ ان کے لیے یہاں سے لاہور تک خصوصی ٹرینیں چلتی تھیں۔

پاکستان کے آل راؤنڈر سنکدر بخت کے والد اور آج کل کرکٹ کمنٹیٹر کے طور پر مشہور جواں بخت اور ان کے خاندان کے دیگر افراد نے بھی اسی سٹیشن سے پاکستان جانے والی ٹرین کا ٹکٹ لیا تھا۔

جوان بخت قرول باغ میں رہتے تھے اور کچھ عرصہ سینٹ سٹیفن کالج میں بھی پڑھتے تھے۔

سکندر بخت کو کرکٹ کی دنیا نے اس وقت خوب پہچانا جب انھوں نے انڈیا کے خلاف فیروز شاہ کوٹلہ ٹیسٹ میچ میں 69 رنز کے عوض آٹھ وکٹیں حاصل کیں۔ یہ سنہ 1979-80 میں کھیلی گئی سیریز کے بارے میں ہے۔ اس کے بعد وہ قرول باغ میں اپنا آبائی گھر بھی دیکھنے گئے۔

انھوں نے اس کی ایک ایک دیوار کو چھوا۔ سکندر بخت کا کہنا ہے کہ ان کے خاندان کا پاکستان شفٹ ہونے کا ارادہ واضح نہیں تھا۔ وہ کہتے ہیں، 'ہمارے خاندان کے افراد کے درمیان اختلافات تھے۔ لیکن آخر میں فیصلہ ہوا کہ پاکستان منتقل ہو جانا چاہیے۔‘

تقسیم کے دور اور قرول باغ کے فسادات

ان دنوں دلی میں فسادات پھوٹ پڑے تھے۔ قرول باغ میں انسانیت روز مر رہی تھی۔ ڈاکٹر این سی جوشی کو قرول باغ میں ان کے ہی ایک آدمی نے قتل کر دیا تھا۔

ڈاکٹر جوشی آزادی سے پہلے ملک کے مشہور سرجن تھے اور انھوں نے سنہ 1930 میں قرول باغ میں ایک ہسپتال بنایا تھا۔

وہ فسادات کو روکنے کی کوشش کر رہے تھے۔ انھیں ان کے نوکر نے قتل کیا تھا۔ ان کا بنایا ہوا ہسپتال آج ڈاکٹر این سی جوشی میموریل ہسپتال کے نام سے جانا جاتا ہے۔

دلی اور لاہور کے درمیان ٹرینیں اگست کے دوسرے ہفتے سنہ 1947 میں شروع ہوئیں اور 22 نومبر 1947 تک چلیں۔ لودھی کالونی سٹیشن سے لاہور کے لیے روزانہ دو تین ٹرینیں چلتی تھیں۔

ایک صبح سات بجے اور دوسری دن نو بجے چلتی تھی۔

اگر کوئی تیسری ٹرین ہوتی تو وہ بھی دن کے 12 بجے یہاں سے چلی جاتی۔ ان ٹرینوں کی روانگی کا وقت اس طرح رکھا گیا کہ یہ تمام ٹرینیں دن کی روشنی میں لاہور پہنچ جائیں۔

اس خوفناک دور میں، ٹرینوں کو خاص طور پر فسادیوں نے نشانہ بنایا۔

تاریخ داں پروفیسر گیانیندر پانڈے کا کہنا ہے کہ اس وقت پاکستان جانے والوں کو کناٹ پلیس کے 'ایل' بلاک میں حکومت پاکستان کے عارضی دفتر سے ٹکٹ وغیرہ لینا پڑتا تھا۔ اس دفتر سے ہی مسافروں کو تحقیقات کے بعد پاکستان بھیجا جا رہا تھا۔

لودھی کالونی سے پاکستان جانے والی ٹرینوں میں مسافروں کو بھیڑ بکریوں کی طرح بھر دیا گیا۔ بوڑھے، بچے اور حاملہ عورتیں سب ان میں رہتے تھے۔ کچھ مسافر چھتوں پر سوار ہوتے تھے۔

یہاں سے ان لُٹے پٹے مسلمانوں کو جو پُرانا قلعے اور ہمایوں کے مقبرے کے کیمپوں میں مقیم تھے پاکستان لے جایا جا رہا تھا۔

ریلوے کی سب سے بڑی کالونی سے مسلمانوں کا اخراج

ریلوے بورڈ کے سابق ممبر ڈاکٹر رویندر کمار کا کہنا ہے کہ 'لودھی کالونی سٹیشن سے نکلنے کے بعد ٹرین چند منٹوں میں نئی ​​دہلی ریلوے سٹیشن پہنچ جاتی تھی۔ یہاں ٹرین میں کچھ بوگیاں ان سرکاری ملازمین کے لیے شامل کی گئی تھیں جو پاکستان جا رہے تھے۔ ان میں ریلوے ملازمین کی تعداد سب سے زیادہ تھی۔

یہ غالباً سرکاری اہلکاروں کو عام لوگوں کی بھیڑ سے بچانے کے لیے کیا گیا تھا۔

ان کا کہنا ہے کہ 'راجدھانی میں ریلوے کی سب سے بڑی رہائشی کالونی کشن گنج میں تقریباً 25 فیصد مکانات خالی تھے۔ کشن گنج کو دنیا کی سب سے بڑی ریلوے کالونی تصور کیا جاتا ہے۔ یہ سنہ 1920 میں قائم ہوئی تھی۔ یہاں سینکڑوں مسلمان ریلوے کارکن رہتے ہیں۔‘

پاکستان میں خالصی، لائن مین، گارڈ وغیرہ تھے، ان میں سے ریلوے ملازمین کے خاندانوں کی بڑی تعداد سبزی منڈی ریلوے کالونی سے پاکستان گئی تھی۔

پاکستان جانے والی ٹرین آج کے ہریانہ کے کچھ شہروں جیسے سونی پت، کرنال، امبالا وغیرہ کے سٹیشنوں پر چند لمحوں کے لیے رُک کر اپنی منزل کی طرف بڑھ جاتی تھی۔

ٹرین
Getty Images

مشرف کے خاندان نے سرحد کیسے پار کی؟

پاکستان کے سابق صدر جنرل (ریٹائرڈ) پرویز مشرف کے خاندان نے بھی اسی طرح سرحد پار کی ہوگی۔ ان کے والد سید مشرف الدین بھی سرکاری ملازمت کرتے تھے اور خاندان منٹو روڈ کی سرکاری رہائش گاہ میں رہتاتھا۔

چونکہ سرکاری ملازمین ریل میں سفر کر رہے تھے، اس لیے اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ سید مشرف الدین اپنے خاندان کے ساتھ وہی ٹرین لے کر گئے ہوں گے جس میں ان جیسے ریلوے عملے کے لیے نئی دہلی سٹیشن پر علیحدہ بوگیاں لگی ہوئی تھیں۔

منٹو روڈ اور نئی دہلی ریلوے سٹیشن کے درمیان فاصلہ آدھے کلومیٹر سے زیادہ نہیں ہے۔ اس وقت تک نئی دہلی ریلوے سٹیشن نے اجمیری گیٹ کی طرف اپنا راستہ نہیں بنایا تھا، اس لیے سید مشرف الدین نے نئی دہلی سٹیشن کے مین گیٹ پر جا کر ہی پہاڑ گنج کے نزدیکی علاقے کی ٹرین کے مسافر بنے ہوں گے۔

مشرف
Getty Images

جب مشرف کے والد نے کہا کہ ہم پاکستان جا رہے ہیں

کناٹ پلیس کی مشہور بُک شاپ سنٹرل نیوز ایجنسی کے مالک آر پی پوری سید مشرف الدین کے سرکاری گھر میں ہاکر کے طور پر اخبارات پہنچاتے تھے۔ 14 اگست 1947 کو پاکستان معرض وجود میں آیا۔ ملک تقسیم ہو چکا تھا۔ پورے ملک میں آزادی کی خوشی کے ساتھ ساتھ ملک کی تقسیم کا غم اور غصہ بھی پایا جاتا تھا۔

آر پی پوری نے مجھے یہ واقعہ اس طرح سنایا کہ 'اسی دوران ایک دن سید مشرف الدین صبح میرے انتظار میں تھے کہ میں اخبار لے آؤں۔ آج اسے ایک بڑے فیصلے سے آگاہ کرنا تھا۔ میں قریبی سرکاری گھروں میں اخبار دیتا تھا۔ میں سید مشرف الدین کے گھر اخبار رکھ کر چلنے لگا تو وہ چلا کر رک گئے۔ کہا ’سنو! مجھے تم سے بات کرنی ہے۔‘ آر پی پوری رک گئے۔ سیدمشرف نے کہا، 'پوری بھائی، آپ کے ساتھ ہمارا بہت اچھا تعلق تھا، اب ہمیں اخبار دینا بند کر دیں، ہم یہاں سے پاکستان جا رہے ہیں۔‘

آر پی پوری نے بعد میں کناٹ پلیس میں سینٹرل نیوز ایجنسی کھولی۔ وہ کہتے تھے کہ مشرف کا خاندان بہت پڑھا لکھا تھا۔ ان کے تمام بچوں کی پیدائش منٹو روڈ کے قریب کملا مارکیٹ میں واقع گردھاری لال میٹرنٹی ہسپتال میں ہوئی تھی۔

سینٹ سٹیفن کالج سے تعلیم حاصل کرنے والے ایس ایم عبداللہ بھی تب ہی اپنے کچھ رشتہ داروں کے ساتھ پاکستان گئے تھے۔ سینٹ سٹیفن کالج میں جنرل ضیا الحق کے ہم جماعت تھے۔ سنہ 1947 میں ان کی عمر 23 برس تھی۔ پھر نیو دہلی کی پنجابی تاجر برادری کے بہت سے خاندان لاہور کے رستے کراچی چلے گئے تھے۔

مشہور ادیبہ سعدیہ دہلوی کے ماموں عبداللہ صاحب بتاتے تھے کہ پاکستان جاتے ہوئے وہ سوچ رہے تھے کہ نیا ملک جنت بن جائے گا۔ نئی دلی میں مسلم لیگ کے رہنماؤں نے پاکستان کو جنت سے کم نہیں بتایا، لیکن کراچی جانے کے بعد جنت کی حقیقت کچھ اور ہی نظر آئی۔

کچھ دن قیام کے بعد وہ اپنی نئی دلی واپس آگئے۔ انھیں کراچی میں ایسی کوئی خاصیت نہیں نظر آئی جو انھیں وہاں روکے رکھتی۔ ننئی دلی واپس آکر عبداللہ صاحب پھر کناٹ پلیس کے وولگا ریستوران میں دوستوں کے ساتھ بیٹھنے لگے۔

کراچی میں دہلی کس نے بنایا؟

85 برس کے پروفیسر ریاض عمر نیو دہلی کے پنجابی تاجر برادری کے سرپرست ہیں۔ وہ ذاکر حسین کالج نیو دہلی کے پرنسپل بھی رہے۔ انھیں یاد ہے جب ان کے کچھ قریبی رشتہ دار سرحد پار چلے گئے تھے، ان میں ایس ایم عبداللہ بھی شامل تھے۔

تاہم ہندوستان اور پاکستان کا پنجابی سوداگراں معاشرہ اب بھی ایک دوسرے سے گہرا تعلق رکھتا ہے۔

پاکستان ہجرت کرنے والوں نے اپنی منفرد شناخت برقرار رکھی۔ یہ صحیح معنوں میں تاجر تھے۔ ملازمت کے دلدادہ نہیں تھے اس لیے انھوں نے سرحد پار بھی اپنا کاروبار کرنا شروع کر دیا۔

انھوں نے کراچی میں اپنے قیام کے لیے نیو دہلی کالونی بنائی۔ کلفٹن کے پوش علاقے میں نیو دہلی پنجابی سوداگراں سوسائٹی اور دہلی مرکنٹائل سوسائٹی قائم کی۔

ان میں پنجابی تاجر خاندانوں کی اگلی نسلیں بھی شامل تھیں۔ اس میں صرف نیو دہلی سے آنے والے پنجابی مسلمانوں کو ہی رکنیت دی گئی۔

نیو دہلی سے 1100 کلومیٹر دور کراچی میں 70 سال بعد بھی وہ نیو دہلی والے ہیں۔ انھوں نے کراچی میں برنز روڈ پر دہلی پنجابی سوداگرن ہسپتال بھی بنایا۔

نیو دہلی کالج بھی صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی میں ہے۔ اسے وہاں آباد تمام نیو دہلی والوں نے مل کر قائم کیا تھا۔

کینیڈا کے شہر ٹورنٹو میں رہنے والے پاکستان کے بین الاقوامی سکواش کھلاڑی سجاد منیر کا کہنا ہے کہ اگست 1947 کے تیسرے ہفتے میں ان کے نانا خان محمد طفیل محمد اور دادا اللہ دتہ کے اہل خانہ ڈاکٹرز لین اور پہاڑ گنج میں اپنے گھروں کو منتقل ہو گئے تھے۔

پاکستان جانے والوں سے گزارش

یہ لوگ کچھ عرصہ پرانے قلعے کے ڈیرے میں رہے۔ پاکستان جانے والے مسلمان پرانے قلعے میں قیام پذیر تھے۔ تب مسلسل بارش ہو رہی تھی۔

یہ بدقسمت لوگ اپنے سیل خالی کر کے پرانے قلعے میں کھلے آسمان تلے زندگی گزار رہے تھے۔ ان کا نمبر آیا تو وہ لودھی کالونی سٹیشن سے لاہور کے لیے روانہ ہو گئے۔ سجاد منیر کے نانا اور نانی دہلی میں سول انجینئر تھے۔

لودھی کالونی ریلوے سٹیشن پر لالہ دیش بندھو گپتا، میر مشتاق احمد، لالہ روپ نارائن، چودھری برہم پرکاش، سرلا شرما جیسے کانگریسی رہنما ہاتھ جوڑ کر پاکستان جانے والوں سے درخواست کر رہے تھے کہ وہ پاکستان جانے کا ارادہ ترک کر دیں۔

انھیں ہندوستان میں رہنا چاہیے۔ انھیں سمجھانے کے بعد چند لوگ ہی ریلوے سٹیشن سے واپس لوٹتے تھے۔

لیکن اکثر لوگ اپنے سفر پر جاتے تھے۔ میر مشتاق احمد جو کہ بہت پائے کے مقرر تھے، نیو دہلی کے چیف ایگزیکٹو کونسلر (وزیر اعلیٰ کے برابر) کے عہدے پر فائز تھے۔ انھوں نے قرول باغ اور دریا گنج کے کئی جلسوں میں محمد علی جناح کے خلاف نعرے لگائے۔

برہم پرکاش نیو دہلی کے پہلے وزیر اعلیٰ تھے۔ وہ چودھری چرن سنگھ کی حکومت میں وزیر بھی رہے۔ سرلا شرما کا رواں برس کے آغاز میں 101 سال کی عمر میں فوت ہوئے۔ ان کے خاندان نے راجدھانی چاندنی چوک میں 'اندرا پراستھا کنیا ودیالیہ' میں لڑکیوں کا پہلا سکول کھولا اور خواتین کے لیے 'اندرا پراستھا کالج' قائم کیا۔

جناح جہاز کے ذریعے پاکستان گئے

7 اگست 1947 کو نیو دہلی کا آسمان صاف طور پر نیلا دکھائی دے رہا تھا۔ محمد علی جناح نے سنہ 1929 میں بنائے گئے صفدر جنگ ہوائی اڈے پر جہاز کے اندر جانے سے پہلے چند لمحے نیو دہلی کے آسمان کی طرف دیکھا۔ شاید وہ سوچ رہے ہوں گے کہ اب وہ دوبارہ اس شہر میں کبھی نہیں آئیں گے۔

وہ اپنی چھوٹی بہن فاطمہ جناح، اے ڈی سی سید احسان اور دیگر قریبی عملے کے ساتھ کراچی جا رہے تھے۔

دراصل جناح کا پاکستان چند دنوں کے بعد دنیا کے نقشے پر آ رہا تھا۔ وہ پچھلے آٹھ برسوں سے ممبئی سے زیادہ نیو دہلی میں مقیم تھے۔ اس لیے وہ کسی حد تک نیو دہلی والے بن گئے تھے۔

اس دن شدید گرمی اور نمی کے باوجود انھوں نے سوٹ پہن رکھا تھا۔ وہ عام طور پر سُوٹ بُوٹ میں رہنے کو ترجیح دیتے تھے۔ وہ 10، اورنگزیب روڈ (اب اے پی جی عبدالکلام روڈ) پر واقع اپنا شاندار بنگلہ بھی ہمیشہ کے لیے چھوڑ رہے تھے۔

انھوں نے اپنا پرتعیش بنگلہ سیٹھ رام کرشن ڈالمیا کو فروخت کر دیا۔ سیٹھ رام ڈالمیا کی بیوی دنیش نندنی ڈالمیا راجدھانی کے پوش سکندرا روڈ میں رہتی تھیں۔ انھوں نے ایک بار اس مصنف کو بتایا تھا کہ جناح نے اپنا بنگلہ بیچنے سے پہلے خاص بہاؤ تاؤ کیا تھا۔

نیو دہلی میں فساد برپا تھا اور اس وقت آٹھ برس کی ممنون فاطمہ بنگالی مارکیٹ کے قریب بابر روڈ پر ایک سرکاری فلیٹ میں رہتی تھیں۔ بابر روڈ کا فلیٹ ممنون فاطمہ کے والد غلام صابر کاظمی کو دیا گیا تھا۔ وہ سرکاری ملازمت کرتے تھے۔

فاطمہ بنگالی کے بیٹے حمزہ فاروق حبیب پاکستان کے اے آر وائی نیوز چینل سے وابستہ معروف صحافی ہیں۔

انھوں نے مجھے بتایا کہ تقسیم سے پہلے ان کے نانا کراچی منتقل ہو گئے تھے اور ان کا خاندان نیو دہلی میں رہتا تھا۔ ان کے نانا کے خاندان میں پانچ افراد تھے۔ ان کی ماں اور دادی بھی ساتھ تھیں۔ جب نیو دہلی میں فسادات پھوٹ پڑے تو ان کی دادی نے اپنے بھائی کو جلد از جلد نیو دہلی سے نکلنے کو کہا۔ حمزہ فاروق حبیب کی والدہ، دادی اور خاندان کے باقی افراد طیارے کے ذریعے کراچی چلے گئے۔

حمزہ فاروق حبیب کو ان کی والدہ نے بتایا کہ انھیں بابر روڈ پر ہندو پڑوسیوں نے اپنے گھر کے عبادت گاہ میں چھپا رکھا تھا تاکہ وہ محفوظ رہیں۔

بھاسکر راما مورتی نے اپنے والد کیپٹن وی رام مورتی سے اس دور سے متعلق بہت کچھ سنا ہے، جب لودھی کالونی ریلوے سٹیشن سے ٹرینیں پاکستان جاتی تھیں۔ سنہ 1946 کے اواخر میں یہ خاندان لودھی روڈ کے بلاک 12 میں مقیم تھا۔

کیپٹن راما مورتی نے وہ دل دہلا دینے والے نظارے دیکھے تھے، جب مسلمان پاکستان جا رہے تھے۔

بھاسکر راما مورتی نے بتایا کہ چونکہ تقسیم کا اثر جنوبی ہندوستان میں نہیں تھا، اس لیے میرے والد کو یہ بات بہت عجیب لگ رہی تھی کہ یہاں سے اتنے لوگ نئے ملک میں کیوں جا رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

آزادی کے 75 سال: کیا انڈیا کی آزادی کی تاریخ کا اچانک فیصلہ کیا گیا؟

100 برس کا پاکستان اور قومی دھارے سے خود کو الگ سمجھنے والوں کے خواب

انڈیا پاکستان کے نوجوان: ’بجٹ جنگ کے بجائے تعلیم پر لگے تو دونوں ممالک ترقی کر سکتے ہیں‘

لودھی کالونی ریلوے سٹیشن کا انتخاب کیوں کیا گیا؟

لودھی کالونی ریلوے سٹیشن کے باہر اس کی تاریخ کے بارے میں کچھ نہیں لکھا گیا ہے۔ کبھی سمجھ نہیں آئی کہ اتنے بڑے کام کے لیے اس چھوٹے سے سٹیشن کا انتخاب کیوں اور کس نے کیا۔

تاہم کہا جاتا ہے کہ لودھی کالونی سٹیشن کو اتنے اہم کام کے لیے چنا گیا کیونکہ یہ دونوں جگہوں کے قریب تھا جہاں پاکستان جانے والے مسلمانوں کو ٹھہرایا جاتا تھا۔

ایک وجہ یہ تھی کہ محکمہ ریلوے سرحد پار سے آنے والوں کو پاکستان جانے والوں سے دور رکھنا چاہتا تھا۔ پاکستان کی طرف سے آنے والے پرانی دہلی کے ریلوے سٹیشن پر اتر رہے تھے۔

لودھی کالونی سٹیشن پر خاتون ورکر ملیں۔ انھوں نے بتایا کہ وہاں روزانہ 10-15 ٹکٹ فروخت ہوتے ہیں۔ صرف رنگ ریلوے ٹرینیں رکتی ہیں۔ یقین جانیں سٹیشن پر بیٹھے صرف دو لوگ ہی بیٹھے سگریٹ پی رہے تھے۔

کھنہ مارکیٹ لودھی روڈ سٹیشن کے قریب ہے۔ یہاں زیادہ تر دکانیں پاکستان سے تعلق رکھنے والے خاندانوں کی ہیں۔ بہت سوں نے سنا تھا کہ یہاں پاکستان کے لیے خصوصی ٹرینیں چلتی تھیں۔ اس سے زیادہ معلومات کسی کے پاس نہیں۔

ایک مقامی فرد نے بتایا کہ رام نام کا آدمی سنہ 1940 کی دہائی سے سٹیشن کے باہر بیٹھا کرتا تھا۔ وہ وہاں پھل بیچتا تھا۔ پھر ان کا بیٹا بنسی وہاں بیٹھنے لگا۔ وہ یہاں تقسیم کا منظر بیان کرتے تھے۔ لیکن کورونا وائرس کی وبا کے بعد اب بنسی بھی کسی کو دردناک کہانیاں سنانے سٹیشن پر نہیں آتے ہیں۔


News Source   News Source Text

BBC
مزید خبریں
تازہ ترین خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.