اگر زمانے کا یہ نظام ہو جائے

Poet:
By: murad ahmad, Azamgarh

اگر زمانے کا یہ نظام ہو جائے
عروجِ لب پہ شیریں کلام ہو جائے

کہیں نظر کو جو آئے سلام ہو جائے
میرے حریف کا یوں احترام ہو جائے

بڑی تھکن ہے کہ آج بھی سفر پر ہوں
تیرے شہر میں کیوں نہ قیام ہو جائے

مٹا رہا ہے جو آپ ہی غیرت
نگاہ مرشد تیری حرام ہو جائے

لہو لہو ہے دیارِ عشق میرا
چلو نیازِ محبت سے انتقام ہو جائے

یہ بغاوتیں خدا سے بتاتی ہیں
مراد خود نفس کا غلام ہو جائے

Rate it:
01 Sep, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: murad ahmad
Visit 10 Other Poetries by murad ahmad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City