رونق بزم ہے بس رقص شرر ہونے تک

Poet: Haya Ghazal
By: Haya Ghazal, Karachi

رونق بزم ہےبس رقص شرر ہونے تک
عمر لگ جاتی ہے قطرے کو گہرہونےتک

جانےکس کو ہے طلب تیرے رخ روشن کی
آج سورج بھی نہیں ڈوبا گذر ہونے تک

آ خری شب میں بجھی جارہی لو کے ہمراہ
کون رکتا ہے ترا حسن نظر ہونے تک

انکو بتلائیں کیا ہم رات کا عالم اپنی
کیسے انگاروں پہ کٹتی ہے سحر ہونے تک

اس تعلق پہ مری جان بگڑتے کیوں ہو
ہم ترے ساتھ ہیں بس ختم سفر ہونےتک

مرے اشکوں کا یہ پیمانہ چھلک جائے نہ
وقت لگتا ہے کہاں ندیاں بحر ہونے تک

ہنس کے ہر ایک ستم ہم نے سہا ہے تیرا
خواب ہو جائیں گے ہم تم پہ اثر ہونے تک

ہم نے سوچا تھا پھولون مین غزل رہنا ہے
زندگی سیج ہے کانٹوں کی بسر ہونے تک\

Rate it:
10 Aug, 2015

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Haya Ghazal
I am freelancer poetess & witer on hamareweb. I work in Monthaliy International Magzin as a buti tips incharch.otherwise i write poetry on fb poerty p.. View More
Visit 133 Other Poetries by Haya Ghazal »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City