دل نہیں باقی تمنائے رخ جاناں تو ہے

Poet: حنظلہ احمد By: Hanzla Ahmad, Pattoki

دل نہیں باقی تمانائے رخ جاناں تو ہے
باعث ہر خواہش و ارماں نہیں ارماں تو ہے

میرے کاشانے میں پروانو کوئی ساماں تو ہے
داغ دل شمع نہیں ہرچند شمع ساں تو ہے

گرچہ اب زنداں نہیں دشت و بیاباں مٹ گئے
میری تسکیں کے لئے اک گوشۂ ویراں تو ہے

کاش دل سے ٹوٹتا نہ ظلمت شب کا فسوں
دل ہے کیا اک پارۂ آئینۂ حیراں تو ہے

گردش پیمانۂ ایام در بزم افق
گویا ساری کائنات اک شوخئ رنداں تو ہے

طور پر جانا نہیں لگتا قرین مصلحت
دل ہی دل میں دیکھ لیں دل میں کہیں پنہاں تو ہے

تو نہ خوابیدہ ہو چشم منتظر کچھ دیر اور
سب ہیں محو خواب اب آنے کا کچھ امکاں تو ہے

حرف درد و سوز یونہی بار بار آتا نہیں
میرے پاس اک خامۂ منت کش ہجراں تو ہے

موت سے مجھ کو ڈرانا چاہتے ہو واعظو
جان جس کی ہے اسے دینا بہت آساں تو ہے

جان جاں اس دور میں میخانہ و مے تو نہیں
غم کدہ میرا ہے تیری جنبش مژگاں تو ہے

نہ مسلماں ہے نہ کافر نہ کسی مسلک سے ہے
حنظلہ کچھ بھی نہیں تیرے لیے انساں تو ہے

Rate it:
Views: 1628
16 Mar, 2019
Related Tags on Sufi Poetry
Load More Tags
More Sufi Poetry
Popular Poetries
View More Poetries
Famous Poets
View More Poets