اب کہ یہ قصہ پارینہ نہ دہرایا جائے

Poet: امر علوی By: Amar Alvi, Lahore

اب کہ یہ قصہ پارینہ نہ دہرایا جائے
اب کہ عاشق کو بھی معشوق ملایا جائے

اب کوئی سوہنی نہ دریا میں اترنے پاۓ
دستِ فرہاد میں تیشہ نہ تھمایا جاۓ

اب کسی ہیر کی عزت نہ اچھالی جائے
اب کوئی رانجھا نہ گلیوں میں پھرایا جائے

Rate it:
Views: 1554
12 Jul, 2019
Related Tags on Sufi Poetry
Load More Tags
More Sufi Poetry
Popular Poetries
View More Poetries
Famous Poets
View More Poets