سندھ پولیس دعا منگی کیس میں بھی بے بس

 کراچی کے علاقے ڈیفنس سے تاوان کے لیے اغوا ہونے والی لڑکی دعا منگی کی بازیابی میں سندھ پولیس کی مکمل ناکامی سامنے آ گئی ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق تاوان کی ادائیگی کے بعد ہی دعا منگی ایک ہفتے بعد گھر پہنچی، انکشاف ہوا ہے کہ تاوان کی ادائیگی اور دعا کی رہائی کا طریقہ کار سوشل میڈیا پر طے ہوا۔

ذرائع کے مطابق  دعا منگی کے اغوا میں ہائی ٹیک گروہ ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ہے، اغوا کاروں نے دعا کے اہل خانہ سے بات کے دوران ویڈیو کال پر گھر کا جائزہ بھی لیا تھا، دعا کے اغوا میں ملوث گروہ پر پہلے بھی شہر میں واردات کا شبہ ہے، مئی میں ڈیفنس ہی سے اغوا ہونے والی بسمہ کے کیس میں بھی یہی گروہ ملوث تھا۔

 

بسمہ اور دعا کے اغوا کے کیسز میں مماثلت بتائی جا رہی ہے، بسمہ کو بھی بھاری تاوان کی ادائیگی کے بعد چھوڑا گیا تھا ، سات مہینے گزرنے کے بعد بھی بسمہ کیس کے ملزمان گرفتار نہیں ہوئے۔

دعامنگی خیروعافیت سے گھر پہنچ گئی

صورت حال بتا رہی ہے کہ بسمہ کے بعد دعا منگی کے کیس میں بھی پولیس خاموشی اختیار کر کے اس کیس کو رفتہ رفتہ بھول جائے گی۔

ذرائع کے مطابق دعا منگی کو بازیابی تاوان کے عوض عمل میں آئی ہے اور اس سلسلے میں بھاری رقم تاوان کی مد میں ادا کی گئی ہے تاہم پولیس نے اس حوالے سے کسی بھی قسم کاموقف دینے سے گریز کیا ہے۔

دعا منگی کے ماموں وسیم منگی نے تصدیق کرتے ہوئے کہا الحمدللہ دعا گھرپر خیریت سے ہے، کمیونٹی سے مشاورت کے بعد دعا منگی سے متعلق فیصلہ کرینگے، معاملے پر بہت سے پہلو ایک ساتھ اکٹھے ہوگئے ہیں، دعا منگی کی واپسی میں بہت سی چیزیں شامل ہیں،بات نہیں کرسکتے۔

 

واضح رہے کہ 30 نومبر کو بخاری کمرشل میں ایک ریسٹورنٹ کے قریب سے کار سوار ملزمان نے دعا منگی کو زبردستی اغوا کیا تھا جبکہ لڑکی کے ساتھ موجود نوجوان حارث فتح سومرو فائرنگ سے زخمی ہوگیا تھا۔

آٹھ دن گزرنے کے بعد دعا منگی کی بازیابی میں ناکامی اور کوئی سراغ نہ ملنے پر اہل خانہ اور سول سوسائٹی کے افراد نے احتجاجی مظاہرہ بھی کیا تھا جس میں دعا کی جلد بازیابی کا مطالبہ کیا گیا تھا۔


 

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.