’انڈیا پڑوسیوں کا حق جان لے، کرکٹ سیریز ہونی چاہیے‘

image

پاکستان کے لیجنڈ کرکٹر جاوید میانداد نے کہا ہے کہ ’ملک کو توڑنے کی بات کرنے والے خود مصیبت میں گرفتار ہوں گے کیونکہ پاکستان کلمہ طیبہ کے نام بنا ہے اور اس ملک کے بننے کا ایک مقصد ہے۔‘

کراچی میں اردو نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان نے کہا کہ حکمرانوں کو چاہیے کہ ملک کو بہتر بنانے کے لیے کام کریں۔

ان کے مطابق ’سیاست میں اختلاف کیا جائے لیکن تنقید برائے تنقید نہ کی جائے۔ جو بھی حکومت مینڈیٹ لے کر آئے اسے مدت پوری کرنی چاہیے۔‘

جاوید میانداد نے کہا کہ ’ملک کو اس وقت اتحاد کی ضرورت ہے۔ ایک مثبت سوچ کے ساتھ چلنا ہوگا تاکہ ملک کو ترقی کی راہ پر گامزن کیا جا سکے۔‘

سابق وزیراعظم عمران خان کے ملک کے ٹوٹنے کے حوالے سے متنازع بیان پر جاوید میانداد کا کہنا تھا کہ ’میرا ایمان ہے کہ انشا اللہ یہ ملک کبھی نہیں ٹوٹے گا۔‘

انہوں نے کہا کہ ’اپنے گھر کو صاف کرنا ہمارے اپنے ہاتھ میں ہے۔ اگر ہم خود اپنے گھر صاف نہیں رکھیں گے تو کوئی دوسرا کیوں صاف رکھے گا۔‘

سابق کرکٹر کے مطابق ’ملک کا اچھا برا ہمارے ہاتھ میں ہے۔ اگر ہم اپنے نفع کو دیکھیں گے تو یہ کبھی بھی اچھا نہیں ہو سکے گا۔ جیسے اپنے گھر کو سنبھالتے ہیں اسی طرح ملک کو بھی سنبھالنا ہوگا۔‘

پاکستان اور انڈیا کے درمیان کرکٹ سیریز کے حوالے سے جاوید میانداد کا کہنا تھا کہ ’پاک انڈیا سیریز ہونی چاہیے۔ پاکستان نے کبھی کھیلنے سے انکار نہیں کیا۔ پاکستان اور انڈیا پڑوسی ہیں۔ دونوں ملکوں کو پڑوسیوں کی طرح رہنا چاہیے۔ دونوں طرف لوگوں کے آپس میں گہرے تعلقات ہیں۔‘

انہوں نے کہا کہ ’انڈیا کو پیغام دیتا ہوں کہ پڑوسیوں کا حق سمجھ لے۔ جو ایک کرتا ہے وہی دوسرا کرتا ہے۔ اگر آج دونوں ملکوں میں چیزیں ایک جیسی ہو جائیں تو دونوں ملکوں کو فائدہ ہے۔‘

جاوید میانداد کا کہنا تھا کہ ’پاکستان کو انڈیا کی ضرورت نہیں لیکن  پڑوسی ہونے کے ناطے تعلق بہتر ہونا چاہیے۔ دونوں طرف رہنے والوں کی زندگی ایک ہی ہے، مل کر رہنا چاہیے۔‘

پاکستان کرکٹ ٹیم کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ کھلاڑیوں کو ایونٹ کا انتظار نہیں کرنا چاہیے۔ لڑکے ٹیم میں ہیں یا نہیں، وہ اپنی فٹنس اور پریکٹس پر توجہ دیں۔

’پاکستان کے پاس بہترین ٹیلنٹ موجود ہے۔ پاکستانی ٹیم دنیا کی کسی بھی ٹیم کو شکست دینے کی صلاحیت رکھتی ہے۔‘


News Source   News Source Text

مزید خبریں
کھیلوں کی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.