ابرِ رحمت

Poet: babar faruqi
By: babar faruqi, karachi

ابرہے ِ رحمت کا مزہ بھی خوب
جو نہ نہاتے تھے کبھی برسوں وہ بھی نہا لیتے خوب ہیں
دوشیزایں تھیں جو اہلِ محلہ
نہ دیکھاتی تھیں جو کبھی منہ اپنا
اپنی اپنی چھتوں پے نہا رہیں ہیں اتنا
بڈھوں کے لیے کافی ہے بارش میں مزہ اتنا
اور اُس پر لون کے کپڑوں نے دیا مزہ اتنا
ابرِ رحمت میں دیکھا دیا سب اپنا
نہیں ہے قصور ی ان دوشیزاوں کا اپنا
گلُ و فاروق ہو یا سندس و اسٹار
ہے قصور انکا کیوں بنایا لون کو باریک اتنا
ابرِ رحمت میں کافی ہے بابر مزہ اتنا

Rate it:
27 Nov, 2015

More Funny Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: BABAR FARUQI
computer business
.. View More
Visit 13 Other Poetries by BABAR FARUQI »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City