اعتراف

Poet: مرزا عامر بیگ
By: Mirza Aamir, karachi

جو ہمیں پڑھاتے ہیں خود وہیں رہے جاتے ہیں
کیوں چڑھتے ہی پروان ہم اُنہیں بھول جاتے ہیں
کچھ نہ دے سکے اُن کو اعتراف تو کریں اُن کا
احسان ہے بڑا ہم پر احترام تو کریں اُن کا
وہ رہیں سلامت ضرورت اُن کی صدا رہیگی
بھٹکا اگر کہیں تو اُن کی روشنی راستہ بنے گی
دن اُن کے کچھ یوں پھیرا دے اے مولا
تو رحمت کے دریا بھا دے اے مولا
کر نظرِ کرم ہر مصیبت سے پہلے
عطا ہو جو چاہیں ہاتھ اُٹھنے سے پہلے
ہے اگر علم دریا تو کر دے سمندر
بدل کچھ اس طرح سے تحریم کا مُقدر
 

Rate it:
21 Nov, 2019

More Dua Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Mirza Aamir
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City