اعلان

Poet: M Usman Jamaie
By: M Usman Jamaie, karachi

چاہے اب ہاتھ کٹیں، سر ہو قلم، لکھیں گے
جو نہ دیوار پہ آئے گا، وہ ہم لکھیں گے

کوئی سچائی پسِ پردہ رہے ناممکن
آئینے عکس دکھائیں گے، قلم لکھیں گے

نہ کوئی طعن، نہ دشنام، نہ کوئی الزام
تم ستم گرہو، تمھیں اہل ستم لکھیں گے

اب کوئی راز کہیں راز نہ رہ پائے گا
رہ نما کوئی دغاباز نہ رہ پائے گا

جن کے اظہار سے عاجز رہے سرگوشی بھی
راز وہ چیخ کی صورت میں سنائی دیں گے

ایک مُدت سے جو منظر تھے فقط پرچھائیں
صاف تصویر کی صورت میں دکھائی دیں گے

جو لہو خاک میں گُم ہوتا رہا برسوں سے
روئے قاتل بنا دھرتی پہ اُبھرآئے گا

نقشِ پا ابھریں گے مٹی پہ لٹیروں کے یوں
ہر کمیں گہ کا نشاں صاف نظر آئے گا

انگلیاں اُٹھیں گی مجبوروں کی، بے خوف وخطر
خونیوں، ڈاکوؤں اور راہ زنوں کی جانب

ہر نگہ لے کے سوالات کئی اُٹھے گی
پاسبانوں کی طرف، تاج وروں کی جانب

Rate it:
05 Feb, 2014

More Political Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: M Usman Jamaie
Visit 141 Other Poetries by M Usman Jamaie »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City