الوداع کہنے کو دل نہیں مانتا

Poet: Roshni
By: Roshni, Islamabad

پہلے دن ملے تھے انجان تھے جو
آج ایک دوسرے کی جان ہو گئے
کبھی سوچتے تھے چار لیکچر گزریں گے کیسے
نہ جانے کب یہاں دو سال پورے ہوگئے
سکھ، دکھ ،اچھا ،برا سب منا رہے تھےساتھ
کلاس میں سبھی کے ساتھ کرتے تھے ہنسیو مذاق
لڑتے تھے جھگڑتے تھے دن یوں کٹتے تھے
لیکچر سے بھاگ بھاگ کر کیفے میں ملتے تھے
آج سوچتے ہیں کیوں اتنے دن گزر گئے
کچھ سیکھنے کی دوڑ میں اتنا آگے نکل گئے
جب آئے تھے کچھ بھی نہیں تھا ہمارے ہاتھ
جاتے جاتے یادوں کی بارات لے کے جائیں گے
یہ ہے وہ گھڑی جسے جدائی کہتے ہیں سبھی
پر الوداع کہنے کو دل نہیں مانتا ،پر الوداع کہنے کو دل نہیں مانتا

Rate it:
18 Oct, 2019

More Friendship Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Roshni
Visit Other Poetries by Roshni »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City