اک صبح ہے جو ہوئی نہیں ہے

Poet: Ali Sardar Jafri
By: imtiaz, khi

اک صبح ہے جو ہوئی نہیں ہے
اک رات ہے جو کٹی نہیں ہے

مقتولوں کا قحط پڑ نہ جائے
قاتل کی کہیں کمی نہیں ہے

ویرانوں سے آ رہی ہے آواز
تخلیق جنوں رکی نہیں ہے

ہے اور ہی کاروبار مستی
جی لینا تو زندگی نہیں ہے

ساقی سے جو جام لے نہ بڑھ کر
وہ تشنگی تشنگی نہیں ہے

عاشق کشی و فریب کاری
یہ شیوۂ دلبری نہیں ہے

بھوکوں کی نگاہ میں ہے بجلی
یہ برق ابھی گری نہیں ہے

دل میں جو جلائی تھی کسی نے
وہ شمع طرب بجھی نہیں ہے

اک دھوپ سی ہے جو زیر مژگاں
وہ آنکھ ابھی اٹھی نہیں ہے

ہیں کام بہت ابھی کہ دنیا
شائستۂ آدمی نہیں ہے

ہر رنگ کے آ چکے ہیں فرعون
لیکن یہ جبیں جھکی نہیں ہے

Rate it:
24 Jan, 2020

More Ali Sardar Jafri Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City