اگر جو زندگانی میں

Poet: Ayesha Kasuri
By: Ayesha kasuri, Wah Cantt

اگر جو زندگانی میں
کوئ ایسا موڑ آجائے
بھروسہ ٹوٹ جائے اور
وفا سے مان اُٹھ جائے
سمندر ساتھ بہتا ہو
مگر تشنہ پیاس رہ جائے
تھکن سے چُور آنکھوں میں
قصہء غم ٹہر جائے
محبت کی حقیقت پر سے
کوئ پردہ سا اُٹھ جائے
مگر اُداس مت ہونا
اگر ایمان اُٹھ جائے
سنو! اے فرش کے باسی
عرش کو آزما لینا
وہاں ایک ذات رہتی ہے
اُسے آواز دے دینا
دلوں کو جوڑنے کا فن
اُسے کیا خُوب آتا ہے
اُٹھا کر ہاتھ اُسکے در پہ
حالِ غم سُنا دینا
اگر جو رد کر دے وہ
صبر کو آزما لینا
اگر جو زندگانی میں
کوئ مشکل موڑ آجائے
نگاہ تم عرش پر رکھنا
اُسے بس یاد کر لینا

Rate it:
25 Mar, 2020

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ayesha kasuri
Visit Other Poetries by Ayesha kasuri »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City