اہنسا کا پجاری بن سکے تو گال بدلے گا

Poet: ناصر دھامسکر-مجگانوی
By: Nasir Ibrahim Dhamaskar, Ratnagiri

اہنسا کا پجاری بن سکے تو گال بدلے گا
نہیں امکان پھر مجبور ہو کر چال بدلے گا

کبھی سنتے شہر کا نام اب تبدیل ہو جائے
کیوں نہ پھر رنگ چہرے پہ تھوڑا لال بدلے گا

بتنگڑ بھی بڑا اک مسئلہ ہے جو سلجھ جائے
بپا ہو واقعہ سنگین تب ہی حال بدلے گا

عوامی خیر تو بس پیٹ ہی بھرنا فقط ہوتی
ہوس سے دور رہ کر پیر کی وہ چھال بدلے گا

سیاست بھی وہی رہتی مگر انداز سلجھے سے
کھلاڑی ہو نیا یا ہو پرانا کھیل بدلے گا

وطن سے حب بہت ہی خوب ناصر کوٹ کر بھر جائے
ہمیشہ فکر میں ایثار، نہ یہ رول بدلے گا

Rate it:
22 Dec, 2020

More Political Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Nasir Ibrahim Dhamaskar
Visit 66 Other Poetries by Nasir Ibrahim Dhamaskar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City