بے پھل ، بے سایہ ، پیڑوں کی طرح ہو

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

بے پھل ، بے سایہ ، پیڑوں کی طرح ہو
تاریک در تاریک ، اندھیروں کی طرح ہو

اُمید کا جہاں جسے پا کر بےکل ہوا
اُن بُجھے ہوۓ بےرنگ ، سویروں کی طرح ہو

جو اپنی صَفوں میں صفِ ماتم بچھا گۓ
ریوڑ میں اُن کالی ، بَھیڑوں کی طرح ہو

پہنادی گٸ ہوں جنہیں مصلحت کی بیڑیاں
اُن ناتواں و لاغر ، پَیروں کی طرح ہو

ُزُباں کا اعتبار نہ وعدوں کی پاسداری
گویا کہ تم بھی چور ، لٹیروں کی طرح ہو

بےحس و بےدرد کہا کرتے تھے تم جنہیں
تم بھی تو اُنہیں گونگے ، بہروں کی طرح ہو

اخلاق عالمِ ظلم میں کچھ بھی تو نہ بدلہ
کردار میں یعنی تم بھی ، اوروں کی طرح ہو

Rate it:
03 Sep, 2019

More Political Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 92 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City