تم خاص پِلاتے تھے

Poet: ابنِ مُنیب
By: ابنِ مُنیب, سکاکا

تم خاص پِلاتے تھے، جو عام نہیں مِلتا
ہاں جام تو مِلتا ہے، وہ جام نہیں مِلتا

گلیوں میں بھٹکتا ہے، بد راہ ہے دل ایسا
اِس صبح کے بُھولے کو، گھر شام نہیں مِلتا

کچھ عشق کرو صاحب، کچھ نام دھرو صاحب
گھر بیٹھنے والوں کو الزام نہیں مِلتا

پڑھتے ہیں کتابوں میں، سُنتے ہیں خطابوں میں
ہم کو تو حرم میں بھی اسلام نہیں مِلتا

ہم سوچنے والوں کی مشکل ہے مُنیبؔ ایسی
آرام سے بیٹھیں تو آرام نہیں مِلتا
 

Rate it:
18 Jan, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ibnay Muneeb
https://www.facebook.com/Ibnay.Muneeb.. View More
Visit 151 Other Poetries by Ibnay Muneeb »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City