تم دوریوں کی بات کرتے ہو

Poet: Syed Ali Abbas Kazmi
By: Syed Ali Abbas Kazmi , Sahiwal

تم دوریوں کی بات کرتے ہو
کیوں دل جلانے کی بات کرتے ہو

مجھے پاس ہی رہنے دو
اپنے ہو کر بیگانے سی بات کرتے ہو

تم کو معلوم میرا حال دل
آباد کر کے ویرانے کی بات کرتے ہو

بھلانا تجھے ہے ناممکن
کیوں روٹھ جانے کی بات کرتے ہو

خدارا میں ہوں ناتواں
کیوں ڈگمگانے کی بات کرتے ہو

شراب سا ہے نشہ تیرا
کیوں میخانے کی بات کرتے ہو

زر خرید غلام ہی سمجھ لو
کیوں چھوڑ جانے کی بات کرتے ہو

انا ہی رکھنی ہے تو پھر
کیوں شمع پروانے کی بات کرتے ہو

Rate it:
12 Jul, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Ali Abbas Kazmi
Visit 40 Other Poetries by Syed Ali Abbas Kazmi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City