تیری بے رخی کے آنگن میں ٹھہر کے

Poet: Syed Ali Abbas Kazmi
By: Syed Ali Abbas Kazmi , Sahiwal

تیری بے رخی کے آنگن میں ٹھہر کے
تلخ یادوں میں کھویا ہوا تابندہ ہوں

بڑا غرور تھا مجھے تیری چاہت کا
نکلا تیری بے وفائی کا اِک پلندا ہوں

تیری یادوں کے سراب میں دربدر یوں
میں بھٹکا جیسے اِک چرندہ ہوں

سانس تھم سی گئی یوں رکا سب کچھ
جیسے کسی تصویر میں کنندہ ہوں

پیوستہ ریا تیری یاد کی فضاؤں اندر
چھوڑ دیا یوں جیسے اِک پرندہ ہوں

خدا کرے تیرے تکّبر کا تاج چھلکے
تیری چاہ کے لیے ہی تو پائندہ ہوں

نظر آئے میری اٹوٹ چاہت جلدی
تیرے پیار میں ہو چکا اندھا ہوں

پاش پاش کر گئیں نادانیاں ساک
پارہ پارہ ہو گیا میں نہیں زندہ ہوں

Rate it:
22 Jun, 2020

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Ali Abbas Kazmi
Visit 39 Other Poetries by Syed Ali Abbas Kazmi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City